طاہرالقادری کوانقلاب مارچ کی اجازت، اندرونی کہانی سامنے آگئی

طاہرالقادری کوانقلاب مارچ کی اجازت، اندرونی کہانی سامنے آگئی
طاہرالقادری کوانقلاب مارچ کی اجازت، اندرونی کہانی سامنے آگئی

  

لاہور(مانیٹرنگ ڈیسک) حکومت پنجاب اور پاکستان عوامی تحریک کے درمیان انقلاب مارچ کا معاملہ خوش اسلوبی سے طے پاجانے کی اندرونی کہانی سامنے آگئی ہے اور انکشاف ہواہے کہ طاہرالقادری کو حکومت پنجاب سے اجازت دلانے میں گورنر پنجاب چوہدری سروراور گورنر سندھ ڈاکٹر عشرت العباد نے اہم کردار اداکیا۔

تفصیلات کے مطابق ڈاکٹر طاہرالقادری نے اسلام آباد کیلئے روانگی سے قبل گورنر پنجاب چوہدری سرور کو ٹیلی فون کرکے اُن کا شکریہ اداکیا اور یقین دہانی کرائی کہ وہ کوئی خلا ف قانون کام نہیں کریں گے ۔

ذرائع نے انکشاف کیاکہ حکومت نے چوہدری محمد سرور کو  ثالث کا کردار ادا کرنے ، انقلاب مارچ رکوانےکی  ذمہ داری سونپی تھی کیونکہ وہی طاہرالقادری کو طیارے سے باہرنکالنے میں بھی کامیاب ہوئے تھے ، حکومتی خواہشات تو پوری نہ ہوسکیں لیکن گورنر پنجاب ڈاکٹر طاہرالقادری کو محفوظ راستہ دلانے میں کامیاب ہوگئے ۔

گورنر پنجاب نے بتایاکہ حکومت پنجاب نے سیاسی تدبر اور اعلیٰ ظرفی کا ثبوت دیا، الطاف حسین اور گورنر سندھ بھی مسلسل رابطے میں رہے اورتمام سیاسی جماعتیں یہی چاہتی تھیں کہ ہر کسی کو پرامن احتجاج کا حق ملے۔ اُنہوں نے کہاکہ طاہرالقادری ریڈزون میں داخل نہیں ہوں گے  اور  کنٹینرز جلد ہی ہٹادیئے جائیں گے ۔

دوسری طر ف غیرتصدیق شدہ اطلاعات یہ بھی ہیں کہ   اہم شخصیت کی جانب سے  خون خرابہ برداشت نہ کرنے کا  پیغام ملنے کے بعد   حکومت حکمت عملی تبدیل کرنے پر مجبورہوگئی ۔

ایسے میں وزیراعلیٰ پنجاب کاکہناتھاکہ پرامن احتجاج ہر کسی کا حق ہے ، امن وامان کے لیے اپنی ذمہ داریاں پوری کرناہوں گی ، سیکیورٹی اقدامات دہشتگردی خدشات کے پیش نظر کیے گئے۔

سی سی پی او لاہور نے بتایاکہ کنٹینرز ہٹانے کے لیے کرینیں روانہ کردی گئی ہیں ۔

مزید : قومی /Headlines