کیامیسجنگ اپلیکشن صارفین کے لیے غیرمحفوظ ہیں؟

کیامیسجنگ اپلیکشن صارفین کے لیے غیرمحفوظ ہیں؟

سیلیکون ویلی(مانیٹرنگ ڈیسک)اینڈ ٹو اینڈ انکرپشن جیسے فیچر کو فراہم کرنے والی مقبول میسجنگ اپلیکشنز جیسے فیس بک میسنجر، واٹس ایپ اور وائبر، صارفین کی حساس معلومات کی ہیکنگ کے حوالے سے نہایت کمزور ہے۔یہ دعویٰ امریکا میں ہونے والی ایک تحقیق میں سامنے آیا۔برگھم ینگ یونیورسٹی کی تحقیق میں یہ دریافت کیا گیا کہ فیس بک میسنجر، واٹس ایپ اور وائبر جیسی مقبول ترین میسجنگ اپلیکشنز کے صارفین فراڈ یا ہیکنگ کے خطرے سے دوچار ہوتے ہیں کیونکہ وہ اہم سیکیورٹی آپشنز جیسے authentication ceremony وغیرہ سے لاعلم ہوتے ہیں۔یہ فیچر authentication ceremony ایک سیکیورٹی پرایکٹس کے طور پر ہے جو اس بات کو یقینی بناتا ہے کہ کمیونیکشن میں شامل افراد مستند ہیں یا نہیں۔اس مقصد کے لیے وہ بھیجنے والے کے پیغامات میں حساس یا اہم معلومات کی شناخت بھی کرتا ہے۔تاہم چونکہ بیشتر افراد اس کی اہمیت بلکہ فیچر سے ہی لاعلم ہوتے ہیں، اسی لیے تھرڈ پارٹی کے لیے کے لیے حملہ کرنا آسان ہوجاتا ہے۔اس مقصد کے لیے محققین نے مختلف تجربات کیے اور نتائج سے معلوم ہوا کہ بیشتر افراد سیکیورٹی فیچرز کو سمجھنے اور استعمال کرنے سے قاصر ہوتے ہیں کیونکہ انہیں سیکیورٹی مسائل کا تجربہ جو نہیں ہوتا۔مگر آن لائن بات چیت کے دوران ہمیشہ خطرہ موجود ہوتا ہے جو کسی بھی وقت انہیں نشانہ بناسکتا ہے۔اس سے پہلے گزشتہ ماہ یہ بات سامنے آئی تھی کہ واٹس ایپ اپنے صارفین کے ڈیٹا کو حکومتوں سے بچانے کے لیے خاطر خواہ اقدامات نہیں کررہی۔

مزید : راولپنڈی صفحہ آخر


loading...