فریال تالپور کو چھٹی کے روز جیل بھیجنا کھلی انتقامی کارروائی،یوسف رضا گیلانی

  فریال تالپور کو چھٹی کے روز جیل بھیجنا کھلی انتقامی کارروائی،یوسف رضا ...

ملتان (سٹی رپورٹر)سابق وزیر اعظم سید یوسف رضا گیلانی نے کہا ہے کہ انسانی حقوق کی تنظیموں کی جانب سے مقبوضہ کشمیر کے مظالم کا نوٹس نہ لینا انتہائی افسوسناک عمل ہے انڈیا کے لوگ بھی مودی سرکارکی مذمت کر رہے ہیں حکومت پاکستان کو سفارتی سطح پر اپنے پرانے دوستوں سے پہلے رابطہ کرنا چاہیئے تھا چھٹی کے روز رات 12بجے فریال تالپور کو جیل بھیجنا مناسب نہیں ہے ان خیالات کا اظہار انہوں نے دربار حضرت موسی پاک شہیدؒ پر میڈیا سے بات چیت میں کیا اس موقع پر سجادہ نشین مخدوم سید ابوالحسن گیلانی اور ایم پی اے سید علی حیدر گیلانی، سابق ایم پی اے سید احمد مجتبی گیلانی بھی ہمراہ تھے سید یوسف رضا گیلانی نے مزید کہا کہ کشمیری بہن بھائیوں کے ساتھ جو مظالم ڈھائے جا رہے ہیں اس کی شدید مذمت کرتے ہیں کشمیر ی مسلمانوں کو نماز عید کی ادائیگی کی اجازت نہ دینا اور راشن بند کرنا انسانی حقوق کی کھلی خلاف ورزی ہے ایسے میں انسانی حقوق کی تنظیمیں نہ جانے کیوں خاموش ہیں انہوں نے کہا کہ آصف علی زرداری نے کہاکہ میں ہوتا توایسے حالات میں خود چین جاتا جن ممالک نے ہمیں موجودہ صورتحال میں سپورٹ کیا اور بھارت کی مخالفت کی ان کا شکریہ ادا کرتے ہیں مودی سرکار کی جانب سے مقبوضہ کشمیرکی خودمختاری ختم کرنے کے حوالے سے جاری کردہ آرڈٰنینس غیر آئینی، غیر قانونی اور غیر جمہوری ہے یہی وجہ ہے کہ بھارت کے اندر بھی مودی کے خلاف شدید ردعمل پایا جاتا ہے اور یہاں تک کہ بھارت میں علیحدگی کی تحریکیں جنم لے رہی ہیں جو خود بھارت کے لئے نقصان دہ ہے یوسف رضا گیلانی نے کہا کہ جب میں وزیراعظم تھا تو میں نے بھارت کے وزیراعظم سے کشمیر سمیت دیگر ایشوز پر کھل کر مذاکرات کئے تھے یہی وجہ ہے کہ جب میں کشمیر گیا تو مجھے وہاں کے لوگوں نے پیس آف مین کا خطاب دیا انہوں نے کہا کہ حکومت پاکستان کو چاہیئے تھا کہ وہ بہت پہلے چین سے رابطہ کرتے ایک سوال کے جواب میں انہوں نے کہا کہ احتساب غیر جانبدارانہ ہونا چاہیئے اور احتساب،انتقام میں فرق نظر آناچاہیئے مگر چھٹی کے روز فریال تالپور کو رات بارہ بجے جیل بھیجنا کھلی انتقامی کاروائی ہے جس کی ہم شدید مذمت کرتے ہیں اس مسئلے پر عید کے بعد پارٹی اجلاس طلب کرکے لائحہ عمل طے کیاجائے گا انہوں نے کہا کہ اگر دوبارہ اے پی سی ہوئی تو رہبر کمیٹی اپنی رپورٹ اے پی سی میں پیش کرے گی جب ان سے سوال کیا گیاکہ کچھ حلقوں کی جانب سے کہا جارہا ہے کہ ہماری خارجہ پالیسی ناکام ہو رہی ہے تو انہوں نے جواب دیا کہ اس وقت خارجہ پالیسی ملتان میں ہے جب ان سے سوال کیا گیاکہ موجودہ حکومت نے جنوبی پنجاب صوبہ بنانے کا وعدہ پورا نہیں کیا تو یوسف رضا گیلانی نے کہا کہ جنوبی پنجاب صوبہ بنانے کا وعدہ جنہوں نے کیا تھا ان سے پوچھیں۔

مزید : ملتان صفحہ اول