بھارتی اقدام دنیا کا امتحان، ٹرمپ زبان بند کشمیریوں کیلئے ثالثی کا کردار ادا کریں: اسد مجید

    بھارتی اقدام دنیا کا امتحان، ٹرمپ زبان بند کشمیریوں کیلئے ثالثی کا کردار ...

  

واشنگٹن(مانیٹرنگ ڈیسک) امریکہ میں پاکستانی سفیر ڈاکٹر اسد مجید خان کا کہنا ہے مقبوضہ کشمیر کو عالمی برادری متنازع علاقہ تسلیم کرتی ہے لیکن بھارت نے مقبوضہ کشمیر کی شناخت تبدیل کرنے کی کوشش کی ہے۔امریکی ٹی وی کو انٹرویو میں اسد مجید خان کا کہنا تھا مقبوضہ کشمیر میں بھارت کے یکطرفہ اقدامات نے کشیدگی میں اضافہ کیااور بھارتی اقدامات سے خطہ سنگین تنازع کے دہانے پر آگیا ہے۔ بھارت کشمیر کے بحران کو ہوا دے رہا ہے، ٹرمپ کی ثالثی پیشکش کو کشمیریوں نے سراہا تھا لیکن آرٹیکل 370 منسوخ کرکے بھارت نے امریکی پیشکش کو ٹھکرایا ہے، غرور میں مبتلا بھارت کو خطے کے امن اور استحکام کی پرواہ نہیں۔ بھارت نے مقبوضہ کشمیر کی شناخت تبدیل کرنے کی کوشش کی، اقوام متحدہ، امریکہ اور دوست ممالک کو چاہئے کہ وہ اس معاملے پر مداخلت کریں۔امریکہ میں پاکستان کے سفیر کے مطابق 5 اگست بھارت کے نام نہاد سیکولر جمہوریت ہونے کے دعوے میں آخری کیل تھی، بی جے پی پسے ہوئے مسلمانوں، مسیحیوں اور دلتوں کو بے حیثیت بنانا چاہتی ہے۔ بھارت اس بار سرحدپار دہشت گردی کے جھوٹے الزامات سے جان نہیں چھڑاسکے گا، بھارت کشمیر میں جبر اور ناجائز قبضے کی بھیانک حقیقت سے توجہ نہیں ہٹاسکے گا۔ بھارت کو تنازع کھڑا کرنے سے روکنے کیلئے امریکہ جو ممکن ہو کرے، امریکی کوششوں اور پاکستا ن کے تعاون سے افغانستان میں امن تک رسائی ہوئی۔ یہ وقت ہے امریکی صدرٹرمپ اپنی پیشکش کو عملی جامہ پہنائیں اور پاکستان یا بھارت کیلئے نہیں بلکہ زبان بند کشمیریوں کیلئے ثالثی کا کردار ادا کریں۔یاد رہے وزیراعظم عمران خان کے دورہ امریکہ میں صدر ڈونلڈ ٹرمپ نے کشمیر کے معاملے پر ثالثی کی پیشکش کی تھی جس کا پاکستان نے خیرمقدم کیا تھا لیکن مودی حکومت نے اس پیشکش کو ٹھکرادیا تھا۔

اسد مجید

مزید :

صفحہ اول -