قائداعظمؒ کی 11اگست 1947ء کی تقریر اور تاریخی حقائق

قائداعظمؒ کی 11اگست 1947ء کی تقریر اور تاریخی حقائق

مسلمانان برصغیر نے قائداعظمؒ کی ولولہ انگیز قیادت اور لازوال قربانیوں کے بعد14اگست 1947ء کو دوقومی نظریہ کی بنیاد پرپاکستان حاصل کر لیا۔”پاکستان کا مطلب کیا…… لا الٰہ الا اللہ“ تحریک پاکستان کا مقبول ترین نعرہ تھا۔ اسلامیان ہند ایک ایسے خطہ ئ زمین کے لئے جدوجہد کررہے تھے،جہاں وہ اسلام کے سنہری اصولوں کے مطابق آزادانہ زندگی بسر کر سکیں۔ قائداعظم محمد علی جناحؒ کے قیامِ پاکستان سے پہلے اور بعد کے ایسے متعدد بیانات موجود ہیں جن میں بڑی صراحت سے بیان کر دیا گیا ہے کہ پاکستان میں نظامِ حکومت صرف اور صرف دین ِ اسلام کی روشنی میں وضع کیا جائے گا۔ قائداعظمؒ نے 13جنوری 1948ء کو اسلامیہ کالج پشاور میں خطاب کرتے ہوئے ارشاد فرمایا تھا ”ہم نے پاکستان کا مطالبہ ایک زمین کا ٹکڑا حاصل کرنے کے لئے نہیں کیا تھا،بلکہ ہم ایک ایسی تجربہ گاہ حاصل کرنا چاہتے تھے جہاں ہم اسلام کے اصولوں کو آزما سکیں۔“ بدقسمتی سے آج بعض عناصر قائداعظمؒ کی 11اگست 1947ء والی تقریر کو بنیاد بنا کر یہ منفی پراپیگنڈہ کررہے ہیں کہ قائداعظمؒ ایک سیکولر ریاست کے خواہاں تھے۔ ذیل کی سطور میں ہم اس تاریخی حقیقت کا جائزہ لیتے ہیں کہ قائداعظمؒ کیسا پاکستان چاہتے تھے۔

11اگست1947ء کے تاریخی خطاب کے دوران بابائے قوم حضرت قائداعظم محمد علی جناحؒ نے اس مملکت ِ خداداد میں اقلیتوں کے تحفظ اور جمہوریت کے حوالے سے انتہائی وقیع گفتگو فرمائی تھی۔ آپ نے اپنے خطاب میں فرمایا:”پاکستان میں آپ کو اپنے مندروں‘ مسجدوں اور پرستش گاہوں میں جانے کی آزادی ہے۔ آپ کسی بھی مذہب کے مقلد ہوں یا آپ کی ذات اور عقیدہ کچھ بھی ہو، اس سے پاکستان کی حکومت کا کوئی تعلق نہیں ہے۔ ہماری ریاست کسی تمیز کے بغیر قائم ہو رہی ہے۔ ایک فرقے یا دوسرے فرقے میں کوئی تمیز نہیں ہوگی۔ نہ ذات اور عقیدوں کی تمیز ہی ہو گی۔ ہم اس بنیادی اصول کے تحت کام شروع کر رہے ہیں کہ ہم ایک ریاست کے باشندے اور مساوی باشندے ہیں۔ اب ہمیں اس بات کو ایک نصب العین کے طور پر اپنے پیش نظر رکھنا چاہئے اور پھر کچھ عرصہ بعد آپ دیکھیں گے کہ ہندو‘ ہندو نہیں رہے گا اور مسلمان‘مسلمان نہیں رہے گا لیکن اس کا مطلب یہ نہیں کہ ان کے مذہب مٹ جائیں گے، کیونکہ مذہب کو ماننا ہر شخص کا ذاتی عقیدہ ہے۔ میرا مطلب سیاسی تمیز سے ہے۔ وہ سب ایک قوم ہو جائیں گے“۔ اس خطاب میں آپ نے ایک اسلامی ریاست کے بنیادی فریضے یعنی مذہبی آزادی کا اعلان فرمایا تھا جو قرآنی احکامات کے عین مطابق ہے۔قائداعظمؒ کا یہ خطاب ان کی جمہوریت پسندی اور اقلیتوں کے حقوق کے تحفظ کے حوالے سے ان کے زرّیں خیالات کا عکاس ہے۔اگر بعض عناصر اس خطاب سے یہ نتیجہ اخذ کرنے پر مصر ہوں کہ قائداعظمؒ پاکستان کو ایک سیکولر ریاست بنانا چاہتے تھے تو ایسے عناصر کی عقل پر صرف ماتم ہی کیا جا سکتا ہے۔

قائداعظمؒ کی 11اگست کی تقریر کا صحیح مفہوم سمجھنے کے لئے یہ بھی دیکھنا چاہئے کہ انہوں نے جب مجلس آئین ساز سے خطاب کیا تھا تو ملک کے حالات کیا تھے۔ تقسیم ہند کے ساتھ ہی ہندوستان میں ہندوؤں اور سکھوں کے ہاتھوں مسلمانوں کا قتل عام شروع ہو گیا تھا۔اس سے وہاں کے مسلمانوں کے دِل میں خوف و دہشت ایسے جذبات اُبھرے کہ انہوں نے اسی میں عافیت سمجھی کہ سب کچھ چھوڑ چھاڑ پاکستان میں آکر پناہ لیں، لیکن ان وحشی درندوں نے ان نہتے قافلوں کو بھی نہیں چھوڑا۔ راستہ بھر قتل و غارت گری کی وارداتیں ہوتی رہیں۔مسلمانوں کی نوجوان لڑکیوں کو ہزاروں کی تعداد میں چھین جھپٹ کر لے گئے، جبکہ معصوم بچوں کو نیزوں کی انیوں پر اچھالا گیا۔ مہاجرین کو لیکر جو گاڑیاں یہاں پہنچتیں ان میں سے زندہ انسانوں کی بجائے لاشوں کے ٹکڑے برآمد ہوتے۔ ہندوؤں اور سکھوں کے ان انسانیت سوز مظالم کا ردّعمل کہیں کہیں پاکستان میں بھی دیکھنے میں آیا۔ اس پر مستزاد یہ کہ یہاں موجود پاکستان کے کچھ بدخواہ عناصر نے بھی موقع غنیمت جان کر غیر مسلم اقلیتوں میں عدم تحفظ کا احساس پیدا کرنے کی کوششیں کیں۔ آپ سوچئے کہ ایک ایسی مملکت جس کی عمر ابھی ایک دن بھی نہ ہوئی ہو اس قسم کے لرزہ خیزحالات سے دوچار ہو۔ پھر اس کی کیفیت یہ ہو کہ اس کے پاس نہ اپنی فوج ہو، نہ اسلحہ،نہ سامان اور نہ پیسہ۔تو اس کے سربراہ کے دل پر اس سے کیا نہ گزرتی ہو گی؟ بھارت کے اخبارات یہاں کی غیر مسلم اقلیتوں کے خلاف مظالم کی فرضی داستانیں بیان کر کے وہاں کے مسلمانوں کیخلاف انتقام کی آگ کو تیز سے تیز تر کرتے چلے جا رہے تھے۔ اِس لئے نہایت ضروری تھا کہ یہاں غیر مسلم اقلیتوں کو پورا یقین دلایا جائے کہ وہ یہاں ہر طرح سے محفوظ رہیں گی اور مذہب کی بنا پر ان سے کوئی ناروا سلوک نہیں کیا جائے گا۔ یہ تھے وہ حالات جن میں قائداعظمؒ کو یہ تقریر کرنا پڑی۔ قائداعظمؒ نے بذاتِ خود اس تقریر میں انہیں تسلی دی کہ مملکت کی نظر میں سیاسی لحاظ سے وہ پاکستان میں برابر کے شہری ہوں گے۔ 11اگست 1947ء کی تقریر سے قبل بھی متعدد مواقع پر قائداعظمؒ کئی بار اقلیتوں کو یہ یقین دہانی کروا چکے تھے کہ نئی قائم ہونے والی مملکت میں ان کے حقوق کا پورا پورا خیال رکھا جائے گا۔ 13جولائی 1947ء کو بھی قائداعظمؒ نے اقلیتوں کو یقین دلایا کہ ”اس نئی مملکت میں انہیں اپنے مذہب‘ عقیدے‘ زندگی اور تمدن کا تحفظ حاصل ہوگا۔ وہ پاکستان کے مکمل شہری ہوں گے اور سلسلے میں کسی سے کوئی امتیازی سلوک نہیں کیا جائے گا“۔

اگر قائداعظمؒ کی یہ تقریر زندگی کی آخری تقریر ہوتی تو ہم پراپیگنڈہ کرنیوالوں کو شاید درست سمجھ لیتے، لیکن انہوں نے اس کے بعد متعدد تقاریر کیں جن میں واضح پیغام دیا۔25جنوری1948ء کو کراچی بار ایسوسی ایشن سے اپنے خطاب میں فرمایا:”میں ان لوگوں کی بات نہیں سمجھ سکتا جودیدہ ودانستہ اور شرارت سے یہ پراپیگنڈہ کرتے رہتے ہیں کہ پاکستان کا دستور شریعت کی بنیاد پر نہیں بنایا جائے گا۔ اسلام کے اصول آج بھی اسی طرح قابل ِ اطلاق ہیں جس طرح تیرہ سو سال پہلے تھے۔ میں ایسے لوگوں کو جو بدقسمتی سے گمراہ ہو چکے ہیں‘ یہ صاف صاف بتا دینا چاہتا ہوں کہ نہ صرف مسلمانوں کو بلکہ یہاں غیر مسلموں کو بھی کوئی خوف‘ ڈر نہیں ہونا چاہئے۔ اسلام اور اس کے نظریات نے ہمیں جمہوریت کا سبق دے رکھا ہے۔ ہر شخص سے انصاف،رواداری اور مساوی برتاؤ اسلام کا بنیادی اصول ہے، پھر کسی کو ایسی جمہوریت، مساوات اور آزادی سے خوف کیوں لاحق ہو جو انصاف‘ رواداری اور مساوی برتاؤ کے بلند ترین معیار پر قائم کی گئی ہو“۔ بابائے قوم حضرت قائداعظمؒ کی تقاریر و بیانات سے یہ امر روزِ روشن کی مانند واضح ہو جاتا ہے کہ وہ پاکستان میں اسلامی نظریہئ حیات کے اصولوں پر مبنی ریاستی اور سماجی ڈھانچے کی تشکیل کے خواہش مند تھے اور مسلمانانِ برصغیر کے لئے محض ایک آزاد مملکت کا قیام ہی ان کا مقصود نہ تھا، بلکہ اصل مقصد یہ تھا کہ مسلمان وہاں آزادی کے ساتھ اپنے ضابطہ ئ حیات،اپنی تمدّنی روایات اور اسلامی قوانین کے مطابق زندگی بسر کر سکیں۔ بابائے قوم نے اغیار کی پھیلائی ہوئی بدگمانیوں کو دور کرنے کے لئے بارہا اپنی تقاریر میں واضح کیا کہ پاکستان میں اسلام پر نظامِ حکومت کے سوا کسی دوسرے نظریے یا اِزم کی کوئی گنجائش نہ ہو گی۔

مزید : ایڈیشن 1