شہراولیا ء کو نظرانداز کرانے میں ملتان  کی قیادت کااہم کردار، احمد حسین دیہڑ

  شہراولیا ء کو نظرانداز کرانے میں ملتان  کی قیادت کااہم کردار، احمد حسین ...

  

 ملتان (نیوز رپورٹر) تحریک انصاف کے ایم این اے ملک احمد حسین دیہڑ نے کہا ہے کہ سقوط ملتان کی تاریخ ایک مرتبہ پھر دہرائی جا رہی ہے۔رنجیت سنگھ کے بعد اب بہاولپور میں سیکرٹریٹ کیلئے دفاتر شفٹ کر کے ملتان کی شناخت کو ختم کرکے ایک بار پھر سقوط ملتان(بقیہ نمبر14صفحہ12پر)

 کیا جارہا ہے۔ملتان کو چوک سرور شہید اور مظفرگڑھ جیسی حیثیت دی جارہی ہے جو بہت بڑا ظلم ہے۔اس ظلم پر ملتان کی قیادت پر افسوس ہے۔ ملک احمد حسین دیہڑ نے کہا کہ وزیراعظم اور وزیر اعلی سے اپیل کرتا ہوں کہ ملتان کی تاریخی حیثیت  کو مدنظر رکھتے ہوئے اس فیصلے پر نظر ثانی کریں اور ملتان کو ہی سیکرٹریٹ بنایا جائے اور یہاں سے دفاتر شفٹ نہ کیئے جائیں۔ نجی ٹی وی سے بات چیت کرتے ہوئے انہوں نے کہا کہ پی ڈبلیو ڈی کے دفتر کو بہاولپور شفٹ کیا جا رہا ہے۔اس کے بعد ایف آئی اے، ریجنل ٹیکس آفس اور ایڈیشنل چیف سیکرٹری کے ماتحت 16 محکموں کے دفاتر بھی بہاولپور شفٹ ہوں گے اور جب اگلی اسمبلی صوبہ کا فیصلہ کرے گی تو دفاتر بہاولپور ہونے کی وجہ سے دارلحکومت کا فیصلہ بھی بہاولپور کے حق میں ہوگا۔ ملک احمد حسین دیہڑ نے کہا کہ وزیر اعظم سے ملاقات میں انہیں اصل صورتحال سے آگاہ کیا جس پر انہوں نے ہدایت کی کہ جنوبی پنجاب کے ایم این ایز اور ایم پی ایز وزیراعلی سے ملیں اور مسئلے کو مل کرحل کریں۔ تاہم وزیراعلی سے ملاقات میں ہمیں نہیں بلایا گیا اور بائی پاس کرکے ملاقات کی گئی مگر ملتان کو حق نہ ملا۔اب ملتان کی جس قیادت  نے وزیر اعلی سے ملاقات کی ہے اس قیادت کو چاہیئے کہ وہ ملتان کو اس کا حق دلائے۔ انہوں نے کہا کہ ملتان سیکرٹریٹ اور دارلحکومت کے ہر میرٹ پر پورا اترتا ہے۔ بین الاقوامی ائیرپورٹ،تعلیمی ادارے اور عالمی معیار کا انفراسٹرکچر سب کچھ یہاں ملتان میں موجود ہے جبکہ بہاولپور میں تو دفاتر کیلئے بھی جگہ نہ ہے۔ایڈیشنل چیف سیکرٹری جنوبی پنجاب اور ایڈیشنل آئی جی ملتان کے حق میں ہیں۔  انہوں کہا کہ میں اپنی مٹی کا سپوت ہوں۔ ہمیں بنیادی حقوق سے محروم کیا جا رہا ہے۔اس پر آواز اٹھاتا رہوں گا۔

قیادت

مزید :

ملتان صفحہ آخر -