وہ 7 مسائل جن کی قائد اعظم نے اسمبلی سے پہلی تقریر میں پیشگوئی کی تھی،آج ان کی بات حرف بحرف درست ثابت ہوگئی

وہ 7 مسائل جن کی قائد اعظم نے اسمبلی سے پہلی تقریر میں پیشگوئی کی تھی،آج ان کی ...
وہ 7 مسائل جن کی قائد اعظم نے اسمبلی سے پہلی تقریر میں پیشگوئی کی تھی،آج ان کی بات حرف بحرف درست ثابت ہوگئی

  

کراچی(مانیٹرنگ ڈیسک) قائداعظم محمد علی جناح نے 11اگست 1947ءکو نوزائیدہ مملکت خداد اد کی اسمبلی سے پہلا خطاب کیا۔ اپنی اس تقریر میں قائداعظم نے ان 7مسائل کا ذکر کیا جو اس نئے ملک کو درپیش آ سکتے تھے اور آج ہم دیکھتے ہیں کہ عظیم قائد کے وہ الفاظ کس طرح سچ ثابت ہوئے ہیں اور پاکستان آج انہی مسائل میں گھرا ہوا ہے۔ ویب سائٹ پڑھ لو کے مطابق قائداعظم محمد علی جناح نے پہلا مسئلہ لاءاینڈ آرڈر کی صورتحال خراب ہونے کا بیان کیا تھا اور کہا تھا کہ کسی بھی حکومت کا پہلا فرض لاءاینڈ آرڈر کو برقرار رکھنا ہوتا ہے۔

قائد اعظم نے دوسرا مسئلہ رشوت اور کرپشن بتایا تھا اور کہا تھا کہ کرپشن ایک زہر ہے، اس سے ہمیں آہنی ہاتھوں سے نمٹنا ہو گا۔ تیسرا مسئلہ بلیک مارکیٹنگ اور غیرقانونی کاروبار تھا جس کے متعلق قائد نے کہا تھا کہ ”ہمیں اس دیو کو بھی قابو کرنا ہو گا۔“ انہوں نے کہا تھا کہ چوتھا مسئلہ اقلیتوں کے ساتھ امتیازی سلوک ہو گا جو اس ملک کو درپیش ہو گا۔ اس کے متعلق انہوں نے کہا تھا کہ ”تم آزاد ہو،اپنے مندروں میں جانے کے لیے۔ تم آزاد ہو، اپنی مسجدوں میں جانے کے لیے، پاکستان میں تم آزاد ہو اپنی اپنی عبادت گاہ میں جانے کے لیے۔“پانچواں مسئلہ غربت تھا جو ہمارے قائد نے بیان کیا۔ انہوں نے کہا تھا کہ ”اگر ہم پاکستان کو خوشحال بنانا چاہتے ہیں تو ہمیں عوام کی فلاح کو یقینی بنانا ہو گا۔“ قائد نے چھٹا مسئلہ یہ بیان کیا تھا کہ دشمنیاں پالی جائیں گی اور تاریک ماضی کے ہاتھوں ہم ڈکٹیٹ ہوں گے۔ قائد نے کہا تھا کہ ”اگر ہم تاریک ماضی کو بھولنے کے لیے باہمی تعاون سے کام کریں گے تو ہم کامیابی سے ہمکنار ہو سکتے ہیں۔“ ہمارے قائد نے ساتواں مسئلہ نسلی اور مذہبی تفریق بیان کیا تھا اور کہا تھا کہ ” کسی کا رنگ، ذات اور نسل کوئی معنی نہیں رکھتے۔ ریاست پاکستان میں ہر شہری کو برابر کے حقوق حاصل ہوں گے۔“

مزید :

ڈیلی بائیٹس -