قومی اسمبلی ،فاٹا اصلاآت بل پیش نہ کرنے پر اپوزیشن کا تیسرے روز بھی واک آؤٹ

قومی اسمبلی ،فاٹا اصلاآت بل پیش نہ کرنے پر اپوزیشن کا تیسرے روز بھی واک آؤٹ

اسلام آباد (مانیٹرنگ ڈیسک،آئی این پی،آن لائن) قومی اسمبلی میں فاٹا اصلاحات بل کو ایجنڈے پر نہ لانے پر متحدہ اپوزیشن کا مسلسل تیسرے روز بھی ایوان سے واک آؤٹ، فاٹا رکن اسمبلی الحاج شاہ جی گل آفریدی کی کورم کی نشاندہی ، کورم پورا نہ ہونے پر ایوان کی کارروائی معطل ۔قومی اسمبلی کا اجلاس گزشتہ روز سپیکر قومی اسمبلی سردار ایاز صادق کی صدارت میں ہوا۔ اجلاس میں وقفہ سوالات پرپیپلز پارٹی کے پارلیمانی لیڈر نوید قمر نے نکتہ اعتراض پرکہا کہ ہمارا اصولی موقف ہے کہ جب تک فاٹا کا بل ایجنڈے پر نہیں آئے گا ہم ایوان کی کارروائی کا بائیکاٹ کرتے رہیں گے۔ عوامی مسلم لیگ کے سربراہ شیخ رشید نے کہا کہ افغانستان میں داعش موجود ہے مگر ایک ایسا مسئلہ جس پر اپوزیشن اور حکومت متفق ہے صرف اچکزئی اور مولانا فضل الرحمن کے ایماء پر بل ایجنڈے سے نکال دیا ہے تاہم یہ نہ ہو کہ ہمیں فاٹا کے اراکین کے ساتھ مل کر استعفیٰ نہ دینا پڑے۔انہوں نے کہا کہ گندم کی قیمت مل مالکان کم کردیتے ہیں جبکہ گنے کی گاڑیوں کو فیکٹریوں کے باہر کھڑا کردیا جاتا ہے۔ سپیکر قومی اسمبلی سردار ایاز صادق نے کہا کہقوانین کے تحت حکومت بل لاکر واپس لے سکتی ہے تاہم اس پر پہلے کام کرنا چاہیے تھا اور پھر اس کو لایا جانا چاہیے تھا۔ شیخ رشید احمد نے کہا کہ آپ سب جانتے ہیں مگر فیصلہ نہیں لیتے۔ رانا محمد اسحق نے کہا کہ گنے کا کاشتکاروں کے ساتھ مل مالکان زیادتی کررہے ہیں۔ جس پر الحاج شاہ جی گل آفریدی نے کورم کی نشاندہی کردی سپیکر نے40منٹ بعد گنتی کی ہدایت کی جس پر ایوان میں مطلوبہ اراکین موجود نہ ہونے پر اجلاس آج تک کیلئے ملتوی کردیا گیا۔

مزید : کراچی صفحہ اول