سیاسی جماعتیں جمہوری طریقہ اپنائیں،فاٹا کامسئلہ سنجیدگی سے حل کرنا چاہتے ہیں:فضل الرحمٰن

سیاسی جماعتیں جمہوری طریقہ اپنائیں،فاٹا کامسئلہ سنجیدگی سے حل کرنا چاہتے ...

کراچی(صباح نیوز)جے یو آئی (ف) کے امیرمولانا فضل الرحمن نے کہا ہے کہ فاٹا اصلاحات کا مسئلہ سنجیدگی سے حل کرنا چاہتے ہیں، حکومت کو وضاحت کا موقع نہیں دیا گیا، سیاسی جماعتیں جمہوری طریقہ اختیار کریں میرے کہنے پر فاٹا ریفارمز کا بل قومی اسمبلی کے ایجنڈے سے حذف نہیں کیا گیاہم سنجیدگی سے فاٹا کے مسئلے کو حل کرنا چاہتے ہیں اگر فاٹا کا انضمام کرنا ہے تو طریقے اور سلیقے سے ہونا چاہئے فاٹا کے انضمام کے بارے میں عوام سے پوچھ لیا جائے تو بہتر ہے پارٹیاں جمہوری طریقہ استعمال کریں، جبر کا طریقہ درست نہیں گزشتہ روز متحدہ مجلس عمل کے رہنما ہو ں کے ہمراہ پریس کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے مولانا فضل الرحمان نے کہا کہ بل میں تکنیکی کمزوری کی بات بالکل درست ہے، میرے کہنے پر فاٹا ریفارمز کا بل قومی اسمبلی کے ایجنڈے سے حذف نہیں کیا گیا، ہم سنجیدگی سے فاٹا کے مسئلے کو حل کرنا چاہتے ہیں، اگر فاٹا کا انضمام کرنا ہے تو طریقے اور سلیقے سے ہونا چاہئے۔ مو لانا فضل الرحمان نے مزید کہا کہ فاٹا کے انضمام کے بارے میں عوام سے پوچھ لیا جائے تو بہتر ہے، پارٹیاں جمہوری طریقہ استعمال کریں، جبر کا طریقہ درست نہیں۔ انہوں نے کہا کہ فاٹا کی سپریم کونسل کو سپورٹ کرتا ہوں، مسئلے کو بات چیت سے حل کیا جائے، جمہوریت کے راستے میں جبر نہیں ہونا چاہئے۔مولانا فضل الرحمان نے یہ بھی کہا کہ فاٹا کے اندر کسی حد تک انضمام کی حمایت ہے تو الگ صوبے کی بھی ایک تحریک ہے، فاٹا کے انضمام کے بارے میں عوام کی اکثریت سے پوچھ لیا جائے، کل فاٹا کی سپریم کونسل کا اجلاس ہوا، فاٹا کی سپریم کونسل نے کل پھر اپیل کی ہے، سپریم کونسل کو سپورٹ کرتا ہوں، آئیں مسئلے کو بات چیت سے حل کیا جائے۔۔مولانا فضل الرحمان نے یہ بھی کہا کہ دھرنوں اور پریشر کی بجائے مل کر بات کرنی چاہئے، ہم بھی دھرنے دے سکتے ہیں، قبائل کو مطمئن کیا جائے اور ان کی سپریم کونسل سے بات کی جائے۔

مزید : کراچی صفحہ اول