جنرل ہسپتال میں پی آئی سی واقعہ کے متاثرین سے اظہار ہمدردی کیلئے واک

جنرل ہسپتال میں پی آئی سی واقعہ کے متاثرین سے اظہار ہمدردی کیلئے واک

  

لاہور(جنرل رپورٹر)پنجاب انسٹی ٹیوٹ آف کارڈیالوجی پرحملہ، توڑپھوڑ اور اس سانحہ کے متاثرین سے اظہارہمدردی و یکجہتی کے لئے پی جی ایم آئی و امیر الدین میڈیکل کالج اور لاہور جنرل ہسپتال کے پروفیسرز، ڈاکٹرز،نرسز،پیرا میڈیکس اور گرینڈ ہیلتھ الائنس کے رہنماؤں نے مشترکہ احتجاجی واک کا انعقاد کیا جس کے شرکاء نے اپنا احتجاج ریکارڈ کرانے کے لئے بازؤں پر سیاہ پٹیاں باندھ رکھی تھیں۔

ڈاکٹرز و میڈیکل عملے اور مریضوں کے ساتھ ہونے والی زیادتیوں اور ہسپتال جیسے مقدس ادارے پر بلا جواز حملے کے خلاف درج نعروں پر مشتمل پلے کارڈز و بینرز اٹھا رکھے تھے۔

ایل جی ایچ کے ایڈمن بلاک سے شروع ہو کر پی آئی این ایس تک جانے والی اس احتجاجی واک میں شامل ہر شخص رنجیدہ اور احتجاج کرتا ہوا دکھائی دے رہا تھا جس کا مقصد وکلاء برادری کی طرف سے کی جانے والی زیادتی کے خلاف آواز بلند کرنا تھا۔ ڈاکٹر قاسم اعوان اور ڈاکٹر عمار یوسف و جی ایچ اے کے عہدیداروں کا کہنا تھا کہ اپنی اناء کی تسکین اور بار کی سیاست کے لئے وکلاء نہ صرف ملک بھر بلکہ عالمی سطح پر جگ ہنسائی کا باعث بنے۔ڈاکٹرز کمیونٹی مزید عدم تحفظ کا شکار ہوئی اور ملکی املاک کو نقصان پہنچا کر د ل کے مریضوں کے علاج معالجے میں خلل ڈالا گیا۔شرکاء نے مطالبہ کیا کہ اس افسوسناک واقعہ کے اصل چہروں کو بے نقاب ہونا چاہیے اور اُن کے خلاف ایسی کاروائی کی جائے جس سے مستقبل میں ایسے گھناؤنے واقعات کی روک تھام ہو سکے۔ اس موقع پر پرنسپل پی جی ایم آئی پروفیسر ڈاکٹر سردار محمد الفرید ظفر، فیکلٹی ممبران اور ایم ایس ڈاکٹر محمود صلاح الدین نے گفتگو کرتے ہوئے کہا کہ دین اور دنیا کا کوئی بھی ضابطہ ایسے مجرمانہ فعل کی اجازت نہیں دے سکتااور اس واقعہ کو کسی طور بھی نظر انداز نہیں کیا جا سکتا۔ پی آئی سی پر حملہ آور ہونے والوں نے سرکاری املاک کو نقصان پہنچانے کے علاوہ مریضوں اور اُن کے لواحقین پر بھی تشدد کیا۔ہمیں بحیثیت معاشرہ ایسے واقعات کے سد باب کے لئے ٹھوس لائحہ عمل طے کرنا ہوگا تاکہ مستقبل میں ایسی مذموم سرگرمیوں کا اعادہ نہ ہو سکے۔

مزید :

میٹروپولیٹن 4 -