میرے خلاف کردار کشی کی مہم شروع کر دی گئی،گرفتاری کے لئے تیارحفاظتی ضما نت نہیں کراؤں گا،: احسن اقبال

میرے خلاف کردار کشی کی مہم شروع کر دی گئی،گرفتاری کے لئے تیارحفاظتی ضما نت ...
میرے خلاف کردار کشی کی مہم شروع کر دی گئی،گرفتاری کے لئے تیارحفاظتی ضما نت نہیں کراؤں گا،: احسن اقبال

  



نارووال(ڈیلی پاکستان آن لائن)پاکستان مسلم لیگ ن کےجنرل سیکرٹری احسن اقبال نے کہا ہے کہ موجودہ حکمران ملک کا نظام چلانے کے قابل نہیں،متحدہ اپوزیشن کے ساتھ مل کر 2020کو الیکشن کا سال بنائیں گے،ہم حکومت کے انتقامی ہتھکنڈوں سے جھکنے والے نہیں،میرے خلاف کردار کشی کی مہم شروع کر دی گئی۔

 نارووال میں پریس کانفرنس کرتے ہوئے احسن اقبال نے کہا کہ سپورٹس سٹی کے قومی منصوبے کو سیاست کی نذر کیا جا رہا ہے،سپورٹس سٹی منصوبہ2009میں پیپلز پارٹی کی حکومت نے پاس کیا تھا،میں نے اپنے پانچ سالوں میں سپورٹس سٹی پر پچاسی فیصدکام مکمل کر دیا تھا،اب منصوبے کو مجھے بلیک میل کرنے کے لیے استعمال کیا جا رہا ہے، میں اپنی حفاظتی ضمانت نہیں کراؤں گا،عمران نیازی چھاپے مارنے کی ضرورت نہیں ،میں گرفتاری دینے کے لیے ہر وقت تیار ہوں،شاہد خاقان،رانا ثناء اللہ،سعد رفیق اور  دیگر اصولوں پر ڈٹے  رہنے  کی سزا کاٹ رہے ہیں۔

احسن اقبال نے کہاکہ32ارب کے ترقیاتی کاموں کی نگرانی کا کوئی فائدہ نہیں اٹھایا، نیب نے مالی بے ضابطیگیوں کے بارے میں سوال نہیں پوچھا،مسلم لیگ ن نے ہمیشہ شفاف احتساب کی حمائت کی،کیا یہ منصوبہ شروع کرنا جرم ہے یا اسکو برباد کرنا جرم ہے ؟سپورٹس سٹی منصوبے کو سیاست کی نذر کیا جا رہا ہے، حکومت نے منصوبے کے لیے ایک روپیہ جاری نہیں کیا،حکومت نے ناکامی کے بعد پھر سے انتقامی کارروائیاں شروع کر دی ہیں۔ انہوں نے کہا کہ رائے عامہ آج بھی ن لیگ کے ساتھ ہے،آج الیکشن کروا لیں، دودھ کا دودھ اور پانی کا پانی ہو جائے گا، صرف مسلم لیگ ن کو سیاسی انتقام کا نشانہ بنایا جا رہا ہے، جے آئی ٹی کے سربراہ کو ایف آئی کا سربراہ تعینات کر دیا گیا ،حکومت کی ناکام گورننس کی وجہ سے پی آئی سی کا واقعہ ہوا۔

مزید : قومی


loading...