”مجھے 2013میں الیکشن لڑنے کے لئے ٹکٹ تو دیا گیالیکن ساتھ ہی۔۔۔“تحریک انصاف میں ٹکٹ کیسے دئیے جاتے ہیں؟پارٹی کے نوجوان رہنما بیرسٹراحتشام نے ایسا انکشاف کردیا کہ عمران خان کا منہ کھلا کا کھلا رہ جائے گا

”مجھے 2013میں الیکشن لڑنے کے لئے ٹکٹ تو دیا گیالیکن ساتھ ہی۔۔۔“تحریک انصاف ...
”مجھے 2013میں الیکشن لڑنے کے لئے ٹکٹ تو دیا گیالیکن ساتھ ہی۔۔۔“تحریک انصاف میں ٹکٹ کیسے دئیے جاتے ہیں؟پارٹی کے نوجوان رہنما بیرسٹراحتشام نے ایسا انکشاف کردیا کہ عمران خان کا منہ کھلا کا کھلا رہ جائے گا

روزنامہ پاکستان کی اینڈرائیڈ موبائل ایپ ڈاؤن لوڈ کرنے کے لیے یہاں کلک کریں۔

اسلام آباد(ڈیلی پاکستان آن لائن)بیرسٹر احتشام امیر الدین کا کہنا ہے کہ 2013کے الیکشن میں پی ٹی آئی پنجاب کے صدر اعجاز چوہدری پر الزام لگا کہ انہوں نے پیسے لے کر ٹکٹ فروخت کئے جس کی پارٹی چیرمین نے انکوائری کمیٹی بھی بنائی لیکن آج تک اس کی کوئی بھی رپورٹ سامنے نہیں آسکی۔

نجی چینل”اے آر وائی نیوز“کے پروگرام”دی رپورٹر “میں گفتگوکرتے ہوئے بیرسٹر احتشام امیر الدین کا کہنا تھا کہ میرا خیال ہے کہ پارٹی میں ٹکٹ دینے کا میرٹ کوئی نہیں ،یہاں ٹکٹ بیچے جاتے ہیں۔انہوں نے کہا کہ میں خود اس کی واضح مثال ہوں مجھے پارٹی نے 2013میں حلقہ این اے135کے لئے ٹکٹ  دیا جس کے پیچھے علاقے کے لئے میرے والد کی بڑی سیاسی خدمات تھی ،لیکن جس دن الیکشن کمیشن کی جانب مجھے انتخابی نشان الاٹ ہونا تھا ،اس سے ایک رات قبل اعجاز چوہدری نے اپنا اثرورسوخ استعمال کر کے مجھے پی پی 172کا ٹکٹ دلوا دیا جو میرے لئے بالکل ہی ایک مختلف انتخابی حلقہ تھا ۔ان کا کہنا تھا کہ میرے سے تواعجاز چوہدری نے پیسے نہیں مانگے لیکن یہ بات زد عام ہے کہ ان کاکوئی منظور نظر بندہ ہے جس کے ساتھ انہوں نے ایک خاص شفقت فرمائی تھی ،مجھے پارٹی نے این اے 135کا ٹکٹ کیوں نہیں دیا گیا ؟مجھے آج بھی اس کا جواب نہیں ملا جو یہ ظاہر کرتا ہے کہ پارٹی میں مس مینجمینٹ ہے۔

مزید : علاقائی /اسلام آباد