سانحہ ساہیوال، پولیس نے پنجاب فرانزک لیبارٹری کو بھی ماموں بنا دیا

سانحہ ساہیوال، پولیس نے پنجاب فرانزک لیبارٹری کو بھی ماموں بنا دیا

لاہور (کر ائم رپورٹر) سانحہ ساہیوال میں پولیس کی جانب سے پنجاب فرانزک لیبارٹری کوبھجوائی گئی سب مشین گنیں اورپستول سانحہ میں استعمال ہی نہیں ہوئی تھیں۔فرانزک سائنس ایجنسی کے ذرائع کا کہنا ہے لیبارٹری کو جانچ کیلئے 100 سے زائد گولیوں کے خول، 4 سب مشین گنیں اور دو نائن ایم ایم پستول بھیجے گئے تھے تاہم جو خول اور سکے فراہم کئے گئے سب مشین گن اور پستول کے نہیں تھے۔دوسری جانب نائن ایم ایم کا کوئی خول یا گولی نہیں بھجوائی گئی،اسلئے نائن ایم ایم کے دو پستول فرانزک کیلئے فراہم کرنے کا کوئی جواز نہیں تھا۔ذرائع کا کہنا ہے سانحہ ساہیوال میں استعمال ہونیوالی سب مشین گنیں تبدیل کرکے اس کے بجائے دوسری سب مشین گنیں فرانزک لیب کو بھجوائی گئیں۔ دوسری جانب پولیس گاڑی کو ٹرک میں لوڈ کرکے فرانزک لیبارٹری بھجوایا گیا جبکہ سانحہ کے وقت پولیس کی گاڑی کو چلا کر موقع سے لے جایا گیا تھا۔ذرائع کے مطابق مقتول ذیشان کی کار کو چلتے اور کھڑے ہوئے گولیاں ماری گئیں جبکہ ایک فٹ کے فاصلے سے بھی کار کو گو لیاں لگیں، متاثرہ کار کو ایک ہی زاویئے سے چار چار گولیاں بھی لگیں جو چلتی ہوئی گاڑی میں لگنا ممکن نہیں ہوتا۔

پنجاب فرانزک

مزید : صفحہ اول