چینی بحران، حکومت سے برآمد پر پابندی سے متعلق نوٹیفکیشن طلب

چینی بحران، حکومت سے برآمد پر پابندی سے متعلق نوٹیفکیشن طلب

  



لاہور(نامہ نگارخصوصی)لاہور ہائیکورٹ نے چینی بحران کیخلاف دائردرخواست پر حکومت سے چینی کی برآمد پر پابندی سے متعلق نوٹیفکیشن طلب کر لیا۔عدالت نے وفاقی حکومت اور مسابقتی کمیشن،ایف بی آر،سٹیٹ بینک اورشوگر ملز ایسوسی ایشن سے جواب بھی طلب کرلیاہے،چیف جسٹس لاہور ہائیکورٹ مسٹر جسٹس مامون رشید شیخ نے مقامی وکیل کی طر ف سے دائر اس درخواست کی سماعت کے آغاز پرکہا کہ اب تو وفاقی حکومت نے بھی اس ایشو کا نوٹس لے لیا ہے، شوگر ملز ایسوسی ایشن کے وکیل نے عدالت میں موقف اختیار کیا کہ گنے کی کمی ہے جس پر چیف جسٹس نے کہاکہ گنے کی کمی نہیں ہے میں خود اس چیز کا گواہ ہوں،شوگر ملز کے وکیل نے دلائل میں کہا کہ پاکستان میں وافر مقدار میں چینی موجود ہے،عدا لت نے استفسار کیا کہ اگر وافر مقدار میں چینی موجود ہے تو قیمتیں اوپر کیوں جا رہی ہیں؟چینی کے ریٹ سے متعلق استفسار پر عدالت کو بتایا گیا کہ اس وقت 85 سے 90 روپے فی کلو چینی فروخت ہورہی ہے جو بہت زیادہ ہے۔کین کمشنر پنجاب نے بتایا کہ شوگر ملز مالکان 220 روپے فی من گنا خرید رہے ہیں جوسرکاری ریٹ سے بھی زیادہ ہے،اس پر درخوا ست گزارکے وکیل اظہر صدیق نے کہا کہ افسوس ہے کہ کین کمشنر شوگر ملوں کی ترجمانی کر رہے ہیں، شوگر ملزایسوسی ایشن اشتہاری مہم کے ذریعے عدالتی کاروائی پراثراندازہورہی ہے،اشتہار بازی پر پابندی عائد کی جائے،عدالت نے سٹیٹ بینک آف پاکستان سے شوگر ملز مالکان کے بارے میں ریکارڈ جبکہ چینی کے ذخیرے کی بابت حکومت اورایف بی آر سے چینی سٹاک کے حوالے سے چھاپوں کی رپورٹ طلب کرتے ہوئے مزید سماعت آئندہ ہفتے تک ملتوی کردی،عدالت نے شوگر ملز ایسوسی ایشن کو بھی تحریری جواب داخل کرنے کی ہدایت بھی کی ہے۔

نوٹیفکیشن طلب

ؒ

مزید : صفحہ آخر