سینیٹ قائمہ کمیٹی قانون و انصاف کی 40سال سے بحال کوٹہ سسٹم ختم کرنے کی سفارش

سینیٹ قائمہ کمیٹی قانون و انصاف کی 40سال سے بحال کوٹہ سسٹم ختم کرنے کی سفارش

  



اسلام آباد(آئی این پی)سینیٹ کی قائمہ کمیٹی قانون و انصاف نے 40سال سے بحال کوٹہ سسٹم ختم کرنے کی سفارش کرتے ہوئے اسٹیٹ لائف بورڈ کو چار دن کے اندر فیصلہ پیش کرنے کا حکم دیدیا، کمیٹی نے آئندہ میٹنگ میں مشیر تجارت، سیکرٹری تجارت اور چیئرمین ایس ای سی پی کو طلب کرلیا۔کمیٹی نے کہاکوٹہ سسٹم سے میرٹ ختم ہو رہاہے 1973ء کے آئین میں کوٹہ دس سال کیلئے بنایا تھا جسے دوسری مرتبہ بیس سال اور تیسری مرتبہ چالیس سال کر دیا مگر ابھی تک مقاصد حاصل نہیں ہو سکے۔ اسلامی شریعت عدالت نے بھی کوٹہ سسٹم کو غیر اسلامی کہا ہے۔کمیٹی نے بعد از مرگ انسانی اعضا عطیہ کرنیوالے شہریوں کے قومی شناختی کارڈ پر مخصوص سیاہ نشان لگانے کی سفارش کر دی۔جمعرات کو سینیٹ کی قائمہ کمیٹی برائے قانون و انصاف کا اجلا س چیئرمین کمیٹی سینیٹر جاوید عباسی کی سربراہی میں پارلیمنٹ ہاوس منعقد ہوا۔ اجلا س میں سینیٹر رضا ربانی کے پیش کردہ آئین میں ترمیمی بل 2018پر غو رکیا گیا جس میں کہاگیاتھا 1973کے آئین میں شہری، دیہی اور پسماندہ علاقوں کیلئے 60اور 40فیصد کا کوٹہ مزید 60سال کیلئے بڑھایا جائے۔سیکرٹری قانون نے کمیٹی کو بتایا سپریم کورٹ کے فیصلے کی روشنی میں کوٹہ سسٹم کو مزید بحال کرنے کی ضرورت نہیں بل کی مخالفت کرتے ہیں، دس سیٹوں میں سے میرٹ کی صرف ایک سیٹ ہے میرٹ ختم ہو رہاہے کوٹہ سسٹم سے علاقوں کو نمائندگی تو مل جاتی ہے مگر اچھا ذہن اور میرٹ ختم ہو رہاہے۔ رکن کمیٹی سید مظفر حسین شاہ نے کہاسپریم کورٹ نے کہا پارلیمنٹ اس پر قانون سازی کرئے لیکن وزارت کہہ رہی ہے اس کی ضرورت نہیں۔ حکومتوں کی نااہلیوں کی وجہ سے گذشتہ 40سال تک ملک کے پسماندہ علاقوں کو ترقی والے علاقوں کے برابر نہ لایا جاسکا بلوچستان، فاٹا،اور پسماندہ پنجاب کے لوگ کراچی، پشاور اور لاہور کے لوگوں کا مقابلہ نہیں کر سکتے اسلئے اسے مزید 60سال تک توسیع دی جائے۔سینیٹر لیفٹیننٹ جنرل (ر) عبد ا لقیوم نے کہاکوٹے کو گذرے 40سال ہو گئے ہیں اب تک میرٹ نہیں بن سکا بعد میں بھی نہیں ہو گا۔ سینیٹر سراج الحق نے کہا 40سال دئیے گئے تھے اب اگر بھرتی کی گئی تو وہ غیر قانونی ہے، کم ترقی یافتہ علاقوں کے لوگوں ترقی یافتہ علاقوں سے کم ذہین نہیں ایسا ماحول پیدا کیاجائے جس سے سب کو یکساں مواقع مل سکیں۔بعدازاں کمیٹی نے متفقہ طور پر کوٹہ سسٹم ختم کرنے کی سفارش کر دی۔کمیٹی نے سینیٹر عتیق شیخ کی جانب سے انسانی اعضا کی پیوند کاری کا ترمی بل 2019متفقہ طور پر منظور کر لیا۔ رکن کمیٹی سراج الحق نے اس بل کو اسلامی نظریاتی کونسل کی سفارش پر ہاں کر دی۔

قائمہ کمیٹی انصاف

مزید : صفحہ آخر