نابینا افراد کا مطالبات کے حق میں مظاہرہ، پنجاب اسمبلی جانے کی کوشش ناکام

  نابینا افراد کا مطالبات کے حق میں مظاہرہ، پنجاب اسمبلی جانے کی کوشش ناکام

  



لاہور(کرائم رپورٹر) بصارت سے محروم افراد اپنے مطالبات کے حق میں ایک بار پھر سڑکوں پر آگئے پولیس نے مظاہرین کو زبردستی پناہ گاہ میں بند کر دیا۔ تفصیلات کے مطابق نابینا افراد نے لاری اڈہ سے پنجاب اسمبلی کی جانب احتجاجی مارچ کی کوشش کی تو پولیس نے احتجاج کرنے والے نابینا افراد کو لاری اڈہ پناہ گاہ میں بند کر دیا، پولیس نے پناہ گاہ کے مرکزی دروازے کو تالے لگا دیئے اور نابینا افراد پناہ گاہ کے اندر ہی احتجاج کیا، سول کپڑوں میں ملبوس پولیس کی بھاری نفری نے مظاہرین کو پناہ گاہ کے مرکزی گیٹ سے پیچھے ہٹا دیا۔نابینا افراد کا کہنا تھا کہ حکومتی نمائندوں کی جانب سے سرکاری نوکریاں دینے کے وعدے وفا نہ ہو سکے، صرف طفل تسلیوں سے کام لیا جارہا ہے، ڈگریز کے مطابق سکیل دیئے جائیں جبکہ پہلے جو نوکریاں دی گئی ہیں ان میں سے بھی کچھ لوگوں کے آرڈرز منسوخ کردیئے گئے۔ذرائع کے مطابق پنجاب کے سترہ سرکاری محکموں میں خصوصی افراد کیلیے 2 ہزار 745 سیٹیں خالی ہیں، جن میں 640 سیٹوں پر نابینا افراد کو کنٹریکٹ دیئے جانے تھے، مگرسرکاری محکموں کی گو سلو پالیسی کے باعث اب تک صرف 202 نابینا افراد کو ہی کنٹریکٹ دیئے جا سکے ہیں، جبکہ محکمہ پولیس نے صرف ایک اور محکمہ آبپاشی نیکسی بھی نابینا شخص کو کنٹریکٹ نہیں دیا۔

نابینا افراد /مظاہرہ

مزید : صفحہ اول