آئی جی پی ڈاکٹر ثناء اللہ عباسی سے فوت شدہ اہلکاروں کے بچوں کے وفد کی ملاقات 

آئی جی پی ڈاکٹر ثناء اللہ عباسی سے فوت شدہ اہلکاروں کے بچوں کے وفد کی ملاقات 

  

پشاور (کرائمز رپورٹر) انسپکٹر جنرل آف پولیس خیبر پختونخوا ڈاکٹر ثنائاللہ عباسی نے دوران ملازمت فوت ہونے والے پولیس اہلکاروں کے بچوں کے نما ئندہ وفدسے سنٹر ل پولیس آفس پشاور میں ملاقات کی۔ اس موقع پراے آئی اسٹیبلشمنٹ اور دیگر اعلی پولیس حکام بھی موجود تھے۔ وفد کے ارکان نے آئی جی پی کو اپنے مطالبات اور مسائل سے آگا ہ کیا۔ آئی جی پی نے ان کے مسا ئل انتہا ئی توجہ اور تفصیل کے ساتھ سنے اور ان کو قا نون کے مطابق ہر طرح کے تعاون کی یقین دہا نی کرائی۔اس موقع پر بات کرتے ہوئے آئی جی پی نے کہا کہ دہشت گردی کے خلاف جنگ، صوبے میں امن وامان اور عوام کی جان و مال کی حفاظت کے لیے پولیس کے افسروں و جوانوں نے بیش بہا قربانیاں دی ہیں، جس کی نظیر ملکی و بین الاقوامی پولیس کی تاریخ میں نہیں ملتی۔ آئی جی پی نے کہا کہ پولیس فورس کے کمانڈر ہونے کے ناطے فوت اور شہید ہونے والے پولیس اہلکاروں کے خاندانوں کی فلاح و بہبود ان کی اولین ترجیح ہے۔آئی جی پی نے نمائندہ وفد کو بتایا کہ ان کی ہدایت پر انتہائی قلیل عرصے میں 243 افراد کو ڈسیزڈ سنز کوٹہ کے تحت پولیس میں بطور جونیئر کلرک، کانسٹیبل اور کلاس فور کے عہدوں پر بھرتی کیا جا چکا ہے۔ انہوں نے کہا کہ پولیس کی تاریخ میں پہلی بار اتنے بڑے پیمانے پر ڈسیزڈ سنز  کو ٹہ پر بھرتیاں کی گء ہیں۔ آئی جی پی نے واضح کیا کہ ہائی کورٹ کے حکم پر بھرتی کے لئے ٹائپنگ ٹیسٹ کا انعقاد کیا گیا اور پاس ہونے والے امیدواروں کے بھرتی کے احکامات جاری کیے گئے۔ انہوں نے وفد کو یقین دلایا کہ ان کے تمام جائز لان۱ پر قانون اور ہائی کورٹ کے حکم کے مطابق ہمدردانہ غور کیا جائے گا۔ انھوں نے کہا کہ خالی اسامیوں کی صورت میں ٹائپنگ ٹیسٹ کادوبارہ انعقادفی الفورکیا جائے گا، اور کامیاب امیدواروں کو پولیس میں ان کی اہلیت کے مطا بق بھرتی کیا جا ئے گا۔

مزید :

پشاورصفحہ آخر -