سانحہ علمدار :بلوچستان میں گورنر راج نافذ کردیا گیا

سانحہ علمدار :بلوچستان میں گورنر راج نافذ کردیا گیا
Error

A PHP Error was encountered

Severity: Notice

Message: Undefined index: sort_order

Filename: frontend/news_detail_media_view.php

Line Number: 329

Error

A PHP Error was encountered

Severity: Notice

Message: Undefined index: sort_order

Filename: frontend/news_detail_media_view.php

Line Number: 329

Error

A PHP Error was encountered

Severity: Notice

Message: Undefined index: sort_order

Filename: frontend/news_detail_media_view.php

Line Number: 329

  

کوئٹہ(مانیٹرنگ ڈیسک)بلوچستان میں صوبائی حکومت کو بر طرف کرتے ہوئے گورنر راج نافذ کردیا گیا ہے جبکہ کوئٹہ میں ایف سی کو پولیس کے مکمل اختیارات دیدیے گئے ہیں۔ اس بات کا اعلان وزیر اعظم راجہ پرویز اشرف نے ہزارہ برادری کے ساتھ احتجاجی دھرنے میں شرکت کے دوران کہا میں نے کوئٹہ آنے کے بعد میں نواز شریف ،الطاف حسین، اسفندیار ولی اور بہت سارے سیاستدانوں سے مشاورت کی جس کے بعد یہ فیصلہ لیا گیا ہے کہ کوئٹہ میں آئین کا آرٹیکل234نافذ کردیا جائے۔ اور گورنر کو وفاقی حکومت مکمل مدد فراہم کرے گی ۔حکومت فوج کو سول انتظامیہ کی مدد کے لیے کسی بھی وقت بلا سکتی ہے۔اور کورکمانڈر ایف سی براہ راست بلوچستان کی نگرانی کرے گی۔ وزیر اعظم کا کہنا تھا کہ گورنر راج کی منظوری 10 دن کے اندار پارلیمنٹ سے لینا ہو گی۔ انہوں نے ہزارہ برادری سے اپیل کی کہ سانحے میں شہید ہونے والے افراد کی میتوں کی تدفین کر دی جائے۔ انہوں نے کہا کہ 31 جنوری سے پہلے متاثرین کو امدادی رقم فراہم کر دی جائے گی۔ وزیر اعظم نے کہا کہ زخمیوں کے علاج میں کوئی دقیقہ فروگذاشت نہیں کیا جائے گااورکہا کہ کس نے پاکستان کو نظر لگا دی ہے اورشیعہ ، سنی فسادات کھڑے کر رہے ہیں ۔آپ لوگوں کا امن پسند حتجاج اور تعلیم کے لحاظ سے آپ کا بڑا مقام ہے۔ اس سے قبل وزیر اعظم کو دھرنے میں پہنچنے پر ہزارہ برادری کے رہنما چنگیز خان نے اپن کی امد کا شکریہ ادا کیا اور بریفنگ دی اور اپنے مطالبات پیش کیے۔ ان کا کہنا تھا کہ گزشتہ دودہائیوں سے ہزارہ برادری کے قتل کا سلسلہ جاری ہے اور اس وقت شہد اکی تعداد 11 سو سے زائد ہو چکی ہے اور یہ تمام مظالم وزیر اعلیٰ بلوچستان کی سرپرستی میں ہو رہے ہیں۔ان کا کہنا تھا کہ وزیر اعلیٰ بلوچستان کے گھر کے باہر زائرین کو جلایا گیاقتل کئے جانے والوں میں بچے بھی شامل ہیں۔

مزید :

کوئٹہ -Headlines -Breaking News -