سٹیٹ بینک شرح سودمیں 3فیصدکمی کرے: چوہدری افتخاربشیر

سٹیٹ بینک شرح سودمیں 3فیصدکمی کرے: چوہدری افتخاربشیر

لاہور(کامرس رپورٹر)تاجر رہنما و صدر گرائنڈنگ ملز ایسوسی ایشن پاکستان چوہدری افتخار بشیر سابق ایگزیکٹو ممبر لاہور چیمبرآف کامرس نے کہا ہے کہ افراط زر میں واضح کمی کے باعث اسٹیٹ بنک آف پاکستان اپنی مانیٹرنگ پالیس میں شرح سود میں 3فیصد تک کمی کرے۔انہوں نے کہا کہ شرح سود میں کمی نہ ہونا نئی سرمایہ کاری کی راہ میں رکاوٹ ہے شرح سود میں کمی سے نئی سرمایہ کاری بڑھے نئی انڈسٹری لگے گی تو روزگار کے بھی وافر مواقع پیدہونگے انہوں نے کہا کہ شرح سود پرانی سطح پربرقرار رکھنے سے بنکوں کے ڈیپازٹ میں تو اضافہ ہوتا ہے لیکن اس کے باعث صنعتی ترقی میں کمی واقع ہورہی ہے ۔کیونکہ بلند شرح سود کی وجہ سے صنعتکار پریشانی کا شکار ہیں اور انہیںکاروبار کیلئے مہنگے ریٹ سے قرضے لینے پڑے ہیں۔افتخار بشیر نے کہا کہ پاکستان میں بلند شرح سود اور عالمی معاشی حالات میں ابتری کے باعث پاکستانی درآمدات اور برآمدات بھی متاثر ہورہی ہیں اس لیے اسٹیٹ بنک اپنی مانیٹرنگ پالیسی میں شرح سود میں فوری کرے کیونکہ خطہ میں پاکستان میں شرح سود سب سے زیادہ ہے ۔انہوںنے کہا کہ لوگ نئی سرمایہ کاری کی بجائے بنکوں میں رقم رکھنا زیادہ محفوظ سمجھ رہے ہیں اگر یہی رقم نئی صنعتوں کے قیام میں استعمال ہوتی تو اس سے ملکی صنعتی ترقی میں اضافہ ہوتا ۔

ملک میں روزگار کے نئے مواقع میسر آتے بے روزگاری میں کمی واقع ہوتی اورصنعتی ترقی کے باعث حکومت کے ریونیو میں بھی اضافہ ہوتا۔

مزید : کامرس