ترقیاتی منصوبوں کیلئے جگہ جگہ کھدائی ،گھنٹوں ٹریفک جام معمول

ترقیاتی منصوبوں کیلئے جگہ جگہ کھدائی ،گھنٹوں ٹریفک جام معمول

لاہور( لیاقت کھرل) شہر میں ترقیاتی کاموں اور جابجا کھدائی کے باعث ٹریفک کا نظام مفلوج ہو کر رہ گیا ہے۔ شہر کے مختلف علاقوں میں کئی کئی گھنٹے تک ٹریفک کا پہیہ جام رہتا ہے اور ایمبولینس سمیت ایمرجنسی سروسز کی گاڑیاں گھنٹوں پھنسی رہتی ہیں۔ دفاتر، سکولز، کالجز اور یونیورسٹیوں میں آنے والے طلباء و طالبات اور ملازمین کا تاخیر سے پہنچنا اور واپس آنا بھی محال ہو گیا ہے۔ ’’پاکستان‘‘ سروئے کے مطابق شہر میں جہاں ٹریفک کے کنٹرول کے لئے سٹی ٹریفک پولیس کی جانب سے سینکڑوں وارڈنز تعینات کئے گئے ہیں وہاں ٹریفک کے بڑھتے ہوئے فلو کے باعث ٹریفک وارڈنز نے ہاتھ کھڑے کر دئیے ہیں۔ اس میں ترقیاتی کاموں کی غرض سے جا بجا کھدائی نے سٹی ٹریفک پولیس کی منہ بولی ناکامی کا تو مکمل طور پر بھانڈا پھوڑ کر رکھ دیا ہے اور جہاں آدھے شہر کی اہم شاہراؤں اور سڑکوں پر کھدائی کے باعث ٹریفک کا پہیہ جام رہنے سے شہریوں کی زندگیاں مفلوج ہو کر رہ گئی ہیں وہاں شہر کے اہم علاقوں اور قصبات پر بھی سٹی ٹریفک پولیس بے ہنگم ٹریفک کے فلو پر کنٹرول کرنے میں ناکام نظر آ رہی ہے۔ اس میں کینال روڈ بالخصوص نیوکیمپس پل، فیروز پور روڈ پر اچھرہ پل، وحدت روڈ سمیت بھیکے وال چوک، قذافی اسٹیڈیم کے سامنے فیروز پور روڈ پر گھنٹوں ٹریفک کا جام رہنا معمول بن کر رہ گیا ہے جبکہ اس کے علاوہ مال روڈ، جیل روڈ پل اور فیروز پور روڈ جیسی اہم شاہراؤں اور سڑکوں پر بھی ٹریفک کا نظام مفلوج ہو کر رہ گیا ہے جس کے باعث جہاں سکولز، کالجز اور یونیورسٹیوں سمیت دفاتر میں آنے جانے والے طلبا و طالبات اور ملازمین دن بھر سڑکوں پر پھنسے رہتے ہیں وہاں ایمبولینس کی گاڑیاں اور دیگر ایمرجنسی کی گاڑیاں بھی ٹریفک میں پھنسی نظر آتی ہیں۔شہری ’’پاکستان سروئے‘‘ میں سٹی ٹریفک پولیس کے خلاف پھٹ پڑے۔ شہریوں کا کہنا ہے کہ وارڈنز سڑکوں پر اور چوراہوں میں کھڑے گپ شپ میں لگے رہتے ہیں جبکہ تھوڑی بہت ٹریفک کی خلاف ورزی پر وارڈنز کا رویہ انتہائی سخت ہوتا ہے۔ اس حوالے سے سٹی ٹریفک پولیس کے ایک ڈی ایس پی عبدالغنی کا کہنا ہے کہ اہم شاہراؤں اور سڑکوں پر اچانک زیادہ رش کے باعث ٹریفک جام ہو جاتی ہے جبکہ ٹریفک پولیس کے ایک اور افسر نے بتایا کہ شہر کی سڑکیں تنگ جبکہ ٹریفک زیادہ ہے جس کے باعث ٹریفک کا نظام آؤٹ آف کنٹرول ہے تاہم وارڈنز کی عدم توجہ بھی ایک مسئلہ ہے۔

مزید : میٹروپولیٹن 1