اینٹی نارکوٹکس عدالت میں جج مقررنہ ہونے سے ایک ہزارمقدمات التواء کاشکار

اینٹی نارکوٹکس عدالت میں جج مقررنہ ہونے سے ایک ہزارمقدمات التواء کاشکار

لاہور(نامہ نگار)سپیشل جج اینٹی نارکوٹکس کی عدالت میں دوماہ سے جج مقررنہ ہونے کی وجہ سے ایک ہزارمقدمات التواء کاشکارہیں،وکلاء اورسائلین کومقدمات میں اگلی تاریخیں ملنے سے سخت پریشانی کاسامناہے،جوڈیشل کمپلیکس فیزٹومیں سپیشل جج اینٹی نارکوٹکس کی عدالت موجودہے لیکن یہاں گزشتہ دوماہ سے جج مقرر نہیں ہے جس کے باعث مقدمات التواکارشکارہیں۔پولیس صبح سویرے ملزمان کوجیل سے عدالت پیش کرتی ہے لیکن جج نہ ہونے سے ملزمان کوحاضری کے بعدواپس جیل منتقل کردیاجاتاہے۔قانونی ماہرین کاکہناہے کہ اس عدالت میں کچھ مقدمات پرفیصلے ہوناباقی ہیں اورکچھ آخری مراحل میں داخل ہوچکے ہیں لیکن جج کی عدم موجودگی پرمقدمات زیرالتواہیں۔ملزمان کوجیل سے پیشی پرلانے کے لئے روزانہ پٹرول خرچ ہورہاہے جس کے باعث خزانے کونقصان پہنچ رہاہے۔انہوں نے وفاقی حکومت سے اپیل کی ہے کہ فوری طورپرجج مقررکیاجائے تاکہ مقدمات کے جلدفیصلے ہوسکیں۔

مزید : میٹروپولیٹن 4