رینٹ پر لی گئی کار ایکسیڈنٹ کا شکار ،معاوضہ مانگنے پر مالک کا قتل

رینٹ پر لی گئی کار ایکسیڈنٹ کا شکار ،معاوضہ مانگنے پر مالک کا قتل

لاہور(کامران مغل )تین دن کا کہہ کر رینٹ پر گاڑی 9روز تک اپنے پاس رکھنے والے نشے میں دھت 2افرادنے ایکسیڈینٹ شدہ گاڑی واپس کی ،بعدازاں تلخ کلامی پرمیرے چھوٹے بھائی کودفتر میں گھس کرفائرنگ کر کے قتل کردیا۔گزشتہ10برسوں کے دوران اب تک صرف 22میں سے 8افراد کی شہادتیں قلمبند ہوسکی ہیں ،ستم بالا ستم یہ کہ بھائی کا ایک قاتل جو کہ مرکزی ملزم ہے ،وقوعہ کے روز سے ہی اشتہاری ہے جسے پولیس مبینہ ساز باز کی وجہ سے نہیں پکڑرہی جبکہ دوسرا ملزم ضمانت پر ہے ،سیشن عدالت سے تاحال تاریخوں پر تاریخیں ہی مل رہی ہیں ، عمر بھر مقدمہ کی پیروی کرنا ہی کیامیرا مقدر ٹھہراہے یا پھر مجھے بھی سیشن عدالت سے کبھی انصاف ملے گا؟پاکستان کی جانب سے "ایک دن ایک عدالت "کے سلسلے میں کئے جانے والے سروے کے دوران ٹوکے والا چوک نزد تھانے والی ٹینکی باٹا پور کے رہائشی رفاقت علی نے اپنے ساتھ ہونے والے ظلم وستم کے حوالے سے بتایا کہ وہ اور اس کا چھوٹا بھائی رینٹ اے کار کا بزنس کرتے تھے ،انہوں نے مزید بتایا کہ ایک ملزم شفیق جو کہ پہلے ان کے پاس ڈرائیور تھا جو کچھ عرصہ بعد کام چھوڑ کرچلا گیا ، ایک دن شفیق اپنے دوست طیب کے ہمراہ شیخوپورہ شادی کی تقریب میں جانے کے اپنے دوست طیب کے ہمراہ گاڑی لینے آیا اور کہا کہ انہیں ڈرائیور نہیں چاہئے ۔ 3روز کی بکنگ پر گاڑی 2500روپے روزانہ کے حساب سے انہیں فراہم کردی گئی ۔ 3روز گزرنے پر رابطہ کیا گیا تو کرنے پر انہوں نے کہا کہ مزید4روز کے لئے گاڑی چاہیے جس کے بعد26ستمبر2006ء کوملزمان جب صبح ساڑھے4بجے گاڑی واپس کرنے آئے تو مقامی چوکیدار الطاف نے فون پربتایا کہ دونوں افراد مبینہ طور پر نشے میں دھت ہیں جبکہ گاڑی کا بھی ایکسیڈینٹ ہوا ہے اورانہوں نے میرے بھائی کے ساتھ کسی بات پر تلخ کلامی کے بعد طیش میں آکر اسے فائرنگ کرکے قتل کر دیا۔ اس مقدمے کا مرکزی ملزم طیب تاحال اشتہاری ہے جس نے مبینہ طور پر پولیس کے ساتھ ساز باز کررکھی ہے اور اسی وجہ سے پولیس اسے گرفتار نہیں کررہی ہے ،دوسری جانب مقدمہ مدعی کے وکلاء کا کہنا تھا کہ مختلف کیسوں میں پویس کو متعدد بار عدالتوں کی جانب سے طلبی کے نوٹسز جاری کئے جاتے ہیں لیکن پولیس اہلکاروں نے عدالتی حکم عدولی اپنا وتیرہ بنا رکھا ہے ۔ اب یہ کیس ایڈیشنل سیشن جج نادیہ اکرام چیمہ کی عدالت میں زیرسماعت ہے جہاں اس کیس کی باقاعدگی سے سماعت جارہی ہے۔

ایک دن،عدالت

مزید : صفحہ آخر

لائیو ٹی وی نشریات دیکھنے کے لیے ویب سائٹ پر ”لائیو ٹی وی “ کے آپشن یا یہاں کلک کریں۔


loading...