محکمہ آبپاشی اربوں روپے مالیتی جائیدادیں واگزارا162ر واجبات وصول کرنے میں ناکام

محکمہ آبپاشی اربوں روپے مالیتی جائیدادیں واگزارا162ر واجبات وصول کرنے میں ...

لاہور(اپنے خبرنگار سے)محکمہ آبپاشی ، پولیس اور محکمے کے اپنے ہی ملازمین کے ناجائز قبضے سے اربوں روپے مالیت کی سرکاری جائیدادیں واگزار کروانے اور واجبات وصول کرنے میں ناکام ہوگیا ہے ۔لاہور ، ملتان ،شیخوپورہ، سرگودھا، منڈی بہاوالدین اور ڈی جی خان سمیت صوبے کے مختلف شہروں میں اریگیشن کی اربوں روپے مالیت کی رہائش گاہوں اور ریسٹ ہاؤسز پر ناجائز قبضہ کرلیا ۔ جس کے باعث محکمے کویوٹیلٹی بلوں اور کرائے کی مد میں کروڑوں روپے سے زائد نقصان کا سامنا ہے۔ معلوم ہواہے کہ ۔لاہور ، ملتان ،شیخوپورہ، سرگودھا، منڈی بہاوالدین اور ڈی جی خان سمیت صوبے کے مختلف شہروں میں واقع محکمہ آبپاشی کی رہائشی کالونیوں میں متعدد گھروں اور مختلف ریسٹ ہاؤسز پر متعلقہ پولیس کے ساتھ ساتھ محکمے کے اپنے ہی ملازمین نے غیر قانونی قبضہ کررکھا ہے۔ کسی گھر پر 10برسوں سے تو کوئی 15برسوں سے غیر قانونی قبضے میں ہے۔ جبکہ زیر قبضہ گھروں اور ریسٹ ہاوسز میں یوٹیلٹی بل بھی محکمہ ہی ادا کرتا ہے۔ذرائع کے مطابق خانپور ٹیوب ویل آپریشن ڈویژن کی احمد پور ، الہ آباد میں واقع رہائش گاہوں پر محکمے کے اپنے ہی ملازمین نے عرصہ 8برسوں سے غیر قانونی قبضہ کررکھا ہے۔ یہ ملازم نہ تو کرایہ ادا کرتے ہیں۔ اور نہ ہی سرکاری رہائش گاہیں خالی کرتے ہیں۔ جس کے باعث محکمے کو ایک کروڑ 35لاکھ روپے کے نقصان کا سامنا ہے۔ میلسی ، لالی پور میں محکمے کے دو ریسٹ ہاؤس پولیس کے قبضے میں ہیں۔ اور اب تک محکمہ ان ریسٹ ہاؤسز میں بلوں وغیرہ کی مد میں 16لاکھ روپے ادا کرچکا ہے۔منڈی بہاؤالدین میں محکمے کے2ریسٹ ہاؤس عرصہ دراز سے مقامی پولیس کے قبضے میں ہیں۔جن کے یوٹیلٹی بل بھی محکمہ آبپاشی ہی ادا کرتا ہے اور گزشتہ 8برسوں سے اب تک 26لاکھ روپے ادا کئے جاچکے ہیں۔ڈیر ہ غازی خان کینال ڈویژن میں رہائش اختیار کرنے والے سرکاری ٹھیکیدار نے کرائے کی مد میں 4لاکھ روپے ادا ہی نہیں کئے۔چنیوٹ کے علاقے یاخو والا میں مقامی پولیس نے اریگیشن کے دو ریسٹ ہاؤسز پر تین برسوں سے قبضہ کررکھا ہے۔شیخوپورہ سٹور ڈویژن میں رہائش پذیر سب انجینئر سرکاری گھر میں رہنے کے باوجود تنخواہ میں ہاؤس رینٹ الاؤنس وصول کرتا ہے۔ شیخوپورہ میں ہی سول کوارٹرز روڈ پر محکمے کی رہائش گاہ پر قبضے کرنے والے ملازمین سے پینل رینٹ وصول نہیں کیا جاتا۔اسی طرح ایکسئین پنجند ڈویژن کے زیر کنٹرول واقع ہاؤسنگ کالونی میں رہائش پذیر ملازمین سے لاکھوں روپے پر مشتمل ہاؤس رینٹ وصول نہیں کیا جارہا۔

محکمہ آبپاشی

مزید : راولپنڈی صفحہ آخر