بڑے عرب ملک میں وہ نوکری جسے آپ اختیار کرلیں تو چاہتے ہوئے بھی استعفیٰ نہیں دے سکتے

بڑے عرب ملک میں وہ نوکری جسے آپ اختیار کرلیں تو چاہتے ہوئے بھی استعفیٰ نہیں ...
بڑے عرب ملک میں وہ نوکری جسے آپ اختیار کرلیں تو چاہتے ہوئے بھی استعفیٰ نہیں دے سکتے

روزنامہ پاکستان کی اینڈرائیڈ موبائل ایپ ڈاؤن لوڈ کرنے کے لیے یہاں کلک کریں۔

ابوظہبی (مانیٹرنگ ڈیسک ) اگر آپ متحدہ عرب امارات میں کام کرتے ہیں یا اس کا ارادہ رکھتے ہیں تو یہ جاننا ازحد ضروری ہے کہ یہاں ملازمت کی ایک خاص قسم ایسی بھی ہے کہ جسے اختیار کرنے کے بعد آپ قبل از وقت چھوڑنے کا تصور بھی نہیں کرسکتے۔

مزید جانئے: شاہ سلمان بن عبدالعزیز نے حرمین شریفین کے خلاف دشمنوں کے منصوبے ناکام بنادئیے:مفتی اعلیٰ سعودی عرب

’گلف نیوز‘ کی رپورٹ کے مطابق متحدہ عرب امارات کے لیبر قوانین کا آرٹیکل 113 کہتا ہے کہ محدود وقتی ملازمت کے معاہدے کی معیاد ختم ہونے سے پہلے ملازمت چھوڑنا لیبر قوانین کی خلاف ورزی ہے اور ایسی صورت میں آجر (ملازمت فراہم کرنے والا) وزارت محنت سے درخواست کرسکتا ہے کہ ملازمت چھوڑنے والے شخص پر ایک سال کی پابندی عائد کی جائے۔ اس صورت میں ملازم پر 45 دن کی تنخواہ بطور ہرجانہ ادا کرنے کی ذمہ داری بھی عائد ہوگی جبکہ ملازمت کے اختتام پر ملنے والی گریچوٹی سے بھی محروم ہونا پڑے گا۔ محدود وقتی معاہدوں کے لئے ایک ماہ کے نوٹس کی ضرورت نہیں ہوتی بلکہ معاہدے کی مدت کے اختتام پر ملازم کوئی نوٹس دئیے بغیر ہی رخصت ہو سکتا ہے۔

مزید : بین الاقوامی