حکومت منی بجٹ میں نئے ٹیکسوں سے گریز کرے‘ ٹریڈرز رائٹس فورم

حکومت منی بجٹ میں نئے ٹیکسوں سے گریز کرے‘ ٹریڈرز رائٹس فورم

لاہور(این این آئی) لاہور ٹریڈرز رائٹس فورم کے صدر سردار اظہر سلطان نے کہا ہے کہ حکومت منی بجٹ میں نئے ٹیکس لگانے سے گریز کرے ،تاجر طبقہ اور عوام پہلے ہی پریشانی سے دوچار ہیں جبکہ ملکی معیشت شدید ابتری میں مبتلا ہو چکی ہے ۔ان حالات میں اگر مزید ٹیکس لگائے گئے اور عوام اور بزنس کمیونٹی کے مسائل کو بڑھایا گیا تو خود حکومت کی ساکھ مکمل تباہ ہو جائے گی ۔ یہ بات سردار اظہر سلطان نے گزشتہ روز مقامی ہوٹل میں صحافیوں سے گفتگو کرتے ہوئے کہی۔ انہوں نے کہا کہ تاجر برادری ملکی معیشت میں ریڑھ کی ہڈی کی حیثیت رکھتے ہیں لہذا حکومت اور محکموں کی جانب سے تاجر برادری کو حراساں کرنے کا سلسلہ بند کیا جائے ، ملکی معیشت کا انحصار زرعی شعبہ پر ہے جبکہ چند ماہ کے حکومتی اقدامات کی وجہ سے زراعت پر بھی منفی اثرات مرتب ہوئے ہیں اور شرح نمو سست روی کا شکار ہو چکی ہے حکومت اپنے منی بجٹ میں کسانوں کیلئے کھاد ، بیج اور زرعی ادویات کی قیمتوں میں واضح کمی کا اعلان کرے،اور لگثرری اشیاء کے علاوہ عام استعمال کی چیزوں کی امپورٹ پر ٹیکسوں کی شرح کو کم کیا جائے ، اگر حکومت اپنے ریونیو کو بڑھانا چاہتی ہے تو اسے تاجروں کو مراعات دینا ہونگی کیونکہ امپورٹ آٹیمز پر ڈیوٹیز بڑھانے سے سمگلنگ کو فروغ ملے گا ، انہوں نے کہاکہ اس وقت ملک میں سرمایہ کاری کا عمل جمود کا شکار ہے ،حکومت کو فرینڈلی ٹریڈ پالیسیاں مرتب کرنا ہونگی ، حکومت بینکوں کے شرح سود کو سنگل ڈیجٹ پر لے کر آئے ،بلند شرح سود پر بینکوں سے پیسہ لے کر کوئی بھی کاروبار کرنے کو تیار نہیں ، بلکہ ود ہولڈنگ ٹیکس کی وجہ سے کاروباری افراد بینکوں میں پیسہ رکھنے کی بجائے پرچی پر کام چلانے لگے ہیں ،لہذا حکومت کو ازسرنو اپنی معاشی پالیسیوں پر غور کرنا ہوگا تاہم منی بجٹ میں کسی بھی قسم کے نئے ٹیکس لگانے کی بجائے بجلی اور گیس کے قیمتوں اور ٹیرف کو کم کیا جائے تاکہ مہنگائی کی شرح میں کمی واقع ہو سکے۔

مزید : کامرس