ملک بھر میں بارش، بلوچستان، بالائی علاقوں میں ریکارڈ برفباری، مزید 25افراد جاں بحق، 200بسیں اور گاڑیاں برف میں پھنس گئیں، بچے اور خواتین بھی شامل 

ملک بھر میں بارش، بلوچستان، بالائی علاقوں میں ریکارڈ برفباری، مزید 25افراد ...

  



اسلام آباد،سکھر،کوئٹہ،لاہور (جنرل رپورٹر،لیڈی رپورٹر،بیورو رپورٹس،نمائندگان،نیوز ایجنسیاں) ملک کے مختلف علاقوں میں شدید بارشوں اور برف باری نے تباہی مچا دی ہے۔ پنجاب، سندھ اور بلوچستان میں پیش آنے والے مختلف حادثات میں 34 افراد اپنی جانوں سے ہاتھ دھو بیٹھے ہیں وفاقی دارالحکومت اسلام آباد ،لاہور کوئٹہ، فیصل آباد، جھنگ، قصور اوکاڑہ، اور سکھر  کراچی سمیت  ملک بھر  کے مختلف علاقوں میں شدید بارش اور برفباری سے سردی کی شدت میں اضافہ ہو گیا،۔ لاہور میں پیر کو  صبح کے وقت کالی بدلیاں چھائیں اور پھر چھما چھم برسات ہوئی۔ گڑھی شاہو، دھرم پورہ، ایئر پورٹ، گلبرگ، فیروز پور روڈ، جوہر ٹان سمیت شہر کے مختلف حصوں میں بھی تیز بارش ہوئی جس سے سردی میں اضافہ ہو گیا۔فیصل آباد، قصور، چکوال، ننکانہ صاحب، شکر گڑھ، سرگودھا، جھنگ، خانیوال، ہارون آباد، رحیم یار خان، خان پور، اوچ شریف سمیت پنجاب کے کئی شہروں میں ابر کرم خوب برسا۔کراچی میں بھی بوندا باندی سے سردی بڑھ گئی۔ جیکب آباد، سکھر سمیت سندھ کے مختلف علاقوں میں بھی کہیں ہلکی اور کہیں تیز بارش ہوئی۔تفصیلات کے مطابق کوئٹہ سمیت بلوچستان کے دیگر علاقوں میں شدید بارشوں اور برف باری کے باعث گزشتی روز مزید 7افراد جاں بحق ہو گئے یوں تین روز میں 17 افراد جاں بحق اور 13 زخمی ہوچکے ہیں، ان میں اکثریت بچوں اور خواتین کی ہے۔قومی شاہراہیں برف جم جانے کے باعث بند پڑی ہیں۔کوئٹہ میں گذشتہ دو روز کے دوران ہونے والی برفباری سے درخت اور بجلی کے کھمبے گرنے کے باعث کیسکو کے 20 فیڈر ٹریپ کر گئے جس کے نتیجے میں شہر کے بیشتر علاقوں میں تاحال بجلی کی سپلائی معطل ہے۔رہی سہی کسر گیس پریشر میں کمی نے پوری کر دی، بعض علاقوں میں گیس کا نام ونشان ہی نہیں ہے جو شہریوں کے لئے شدید سردی میں اذیت سے کم نہیں ہے۔محکمہ موسمیات کے مطابق کوئٹہ میں درجہ حرارت منفی 8 تک پہنچ چکا ہے۔ صوبے کے اکثر علاقوں میں سردی کی لہر ایک ہفتے تک جاری رہے گی جس کی وکجہ سے درجہ حرارت منفی 13 تک پہنچنے کا امکان ہے۔حادثات کے پیش نظر کمشنر کوئٹہ ڈویڑن نے قومی شاہراہوں پر غیر ضروری سفر سے گریز کرنے کی ہدایت کی ہے۔ نوکنڈی میں ماشکیل کے قریب بھگ ایریا میں انتظامیہ اور ایف سی نے ریسکیو آپریشن کرتے ہوئے بارشوں کے باعث دلدل میں پھنسے 3 افراد کو بحفاظت نکال لیا۔۔بلوچستان کے علاقے کا ن مہترزئی میں قومی شاہراہ پر برف جمنے کے بعد 200سے زائد مسافر کوچز اور چھوٹی مسافر گاڑیاں پھنس گئیں کوئٹہ کا پنجاب اور خیبر پختوا سے رابطہ منقطع لورالائی سے کوئٹہ سپورٹس ایونٹ میں شرکت کرنے والے کھلاڑی بھی پھنس گئے انتظامیہ کی جانب سے پھنسے افراد کو محفوظ مقامات پر نکالنے کیلئے اقدامات اٹھائے جارہے ہیں پھنسے افراد میں زیاد ہ تر خواتین اور بچے شامل ہیں لیویز حکام کے مطابق پیر کی شام کان مہترزئی کے مقام پر یخ بستہ ہوائیں چلنے سے کوئٹہ ژوب،کوئٹہ لورالائی قومی شاہراہ پر برف جمنے کے بعد قومی شاہراہ بند ہوگئی اور کئی گاڑیاں پھسلنے کی وجہ سے ایک دوسرے سے ٹکرا گئی کان مہترزئی پر 200سے زائد مسافر کوچز چھوٹی مسافر گاڑیاں صبح سے پھنسی ہوئی ہیں لیویزحکام نے پہلے ہی خبردار کیا تھا کہ کان مہترزئی کے مقام پر قومی شاہراہ پر برف جمنے کے باعث گاڑیوں کے چلنے کے قابل نہیں ہے تاہم اس کے باوجود مسافروں اور لوگوں نے سفر شروع کیا مسافر گاڑیوں میں 40سے 50کے قریب شیر خوار بچے،خواتین اور بزرگ بھی موجود ہیں ڈپٹی کمشنر قلعہ سیف اللہ نے بتا یا کہ انتظامیہ کی طرف سے آگاہ کر دیاگیا تھا کہ شدید برفباری کے باعث راستے بند ہیں تاہم اس کے باوجود لوگوں نے اس طرف توجہ نہیں دی انہوں نے بتا یا کہ امید ہے متاثرہ مسافروں کو کلیوں تک پہنچا یا جائے گا اور ان کیلئے تمام انتظامات کردیئے جائینگے تاہم کان مہترزئی زیارت اور دیگر علاقوں میں تین دن سے جاری برفباری تھم گئی تاہم ان علاقوں میں تین سے چار فٹ برف پڑ چکی ہے تاہم مسافروں کے پاس کھانے پینے کی ایشاء بھی ختم ہورہی ہے گاڑیوں میں ڈیزل وپٹرول بھی ختم ہورہا ہے واپس جانے کا بھی راستہ نہیں ہے تاہم علاقے کے لوگوں نے اپنے مدد آپ کے تحت متاثرہ افراد کو کھانافراہم کردیا۔آزاد کشمیر میں لینڈ سلائیڈنگ اور برفانی تودے گرنے سے 10 افراد جاں بحق، 12 زخمی، 23 عمارتیں اور 3 گاڑیاں تباہ ہوگئیں۔ نیلم اور لیپہ ویلی کا زمینی رابطہ بھی منقطع ہے جبکہ پہاڑوں پر 6 فٹ سے زیادہ برف پڑ چکی ہے۔ تاوبٹ گلیشئر کی زد میں آنے والے دو افراد کو بچا لیا گیا ہے۔سکھر میں مکان کی چھت گرنے سے ایک بچی جاں بحق جبکہ خواتین اور بچوں سمیت7 افراد زخمی ہو گئے۔جھنگ میں بھی بارش سے چھت گرگئی، جس میں ایک لڑکی دم توڑ گئی اور 2 افراد زخمی ہوئے۔ خانیوال میں دو لڑکیاں جاں بحق ہوگئیں۔ کاغان، سکردو، گلیات، گلگت اور چترال میں شدید برف باری اور برسات نے مکینوں کی مشکلات میں اضافہ کر دیا جبکہ مزید بارش اور برف باری کا بھی امکان ہے۔سکردو میں جنوری میں شدید برفباری کا 26 سالہ ریکارڈ ٹوٹ گیا۔ رابطہ سڑکیں بند ہونے سے نظام زندگی مفلوج ہو چکا ہے۔ ہنزہ میں 8 انچ اور بالائی علاقوں میں ایک فٹ برف پڑ چکی ہے۔ علاقہ مکین شدید مشکلات کا شکار ہیں۔ مالم جبہ میں سب سے زیادہ 60 ملی میٹر بارش جبکہ 36 انچ تک برف باری ہوئی۔گلیات کا مری روڈ جبکہ نیلم آزاد کشمیر میں برفباری نے راستے بند کر دیے ہیں۔ ایوبیا، نتھیا گلی اور چھانگلہ گلی میں دو فٹ تک برف پڑنے سے نظام زندگی متاثر ہوا۔چترال میں 5 فٹ، شانگلہ ٹاپ الپوری روڈ پر 24 سے 36 انچ برف پڑی۔ ہنگو اور اورکزئی کی سڑکیں بھی بند ہیں۔ کوئٹہ ایئرپورٹ پر شدید برف باری کے باعث پھنسی پی آئی اے پرواز 10گھنٹے تاخیر سے کراچی روانہ کی گئی۔دیر، سوات، کوہستان، شانگلہ، بونیر، مانسہرہ، ایبٹ آباد، مری، گلیات، وادی نیلم، باغ، حویلی، راولا کوٹ، استور، وادی ہنزہ اور سکردو میں مزید برفباری اور بارش کا امکان ہے۔ شدید بارش سے کشمیر، گلگت بلتستان، مالاکنڈ اور ہزارہ کے علاقوں میں لینڈسلائیڈنگ اور برفانی تودے گرنے کا بھی اندیشہ ہے۔جام پور کی قریبی بستی میں بارش سے مکان کی چھت گر نے سے 3 افراد جاں بحق اور 5 زخمی ہوگئے، زخمیوں کو ٹی ایچ کیو جام پور منتقل کر دیا گیا۔جھنگ میں بھی بارش سے چھت گرگئی، ملبے تلے دب کر ایک لڑکی جاں بحق اور دو افراد زخمی ہوگئے۔ ننکانہ واربرٹن، کھوکھراں گاوں میں بھی چھت گرنے سے 3 افراد زخمی ہو گئے۔اٹک کے گاؤں شکردرہ محلہ ڈھوک ذوالفقاریاں میں گیس لیکیج نے گھر کی چھت گرا دی، حادثے میں میاں بیوی شدید زخمی ہو گئے، خانیوال کے علاقے ممدال میں مکان کی چھت گر گئی۔ ملبے تلے دب کر دو لڑکیاں موقع پر جاں بحق ہو گئیں۔ چھت گرنے سے 2 بھینسیں بھی ماری گئیں۔قصور کے علاقے کلچہ معدونا میں بارش مکان کی چھت کو لے بیٹھی۔ تین افراد ملبے تلے دبنے سے زخمی ہو گئے، بچی کی حالت تشویش ناک ہے۔سرگودھا روڈ کی آبادی خانقاہ ڈوگراں میں بارش کے باعث مکان کی چھت گر گئی ملبے تلے دب کر ایک شخص جاں بحق ہو گیا بتایا گیا ہے کہ صفدرآباد روڈ پر ایک مکان جو کہ زیرِتعمیر تھا، گذشتہ رات کو ہونے والی بارش کے باعث مکان کی چھت گر گئی اور اس مکان کی چھت کے نیچے آ کر ایک شخص ملبے تلے دب گیا جسے نکالنے کے لیئے اہل علاقہ نے سر توڑ کوشیشیں کیں مگر وقاص نامی نوجوان جاں بحق ہو چکا تھا،  جس کی نعش پویس نے ضروری کاروائی کے بعد ورثاء کے حوالے کر دی ہے۔ ادھر    گیا لاہور میں موسلادھار بارش کے بعد لیسکو کا ترسیلی نظام متاثر، 130 فیڈرز ٹرپ ہونے سے کئی علاقوں میں بجلی غائب، معمولات زندگی متاثر ہونے سے شہری پریشان کا شکار ہو گئے۔،لاہور میں بارش کے بعد ریلوے روڈ، چوبرجی، بسطامی روڈ، بادامی باغ میں بجلی کی سپلائی معطل ہو گئی، شہریوں کیلئے دفاتر اور طلبا کیلئے سکول کالج جانا مشکل ہو گیا، اکثر لاہوریوں کو بغیر ناشتہ گھروں سے نکلنا پڑا۔شہر کے 130 فیڈرز ٹرپ ہونے سے لیسکو کا ترسیلی نظام بیٹھ گیا، ساندہ روڈ، راج گڑھ، اسلام پورہ، گڑھی شاہو میں بھی بجلی غائب رہی۔ عامر روڈ، مغلپورہ اور شالیمار کے علاقوں میں بجلی کی وولٹیج میں کمی اور بار بار آمد و رفت شہریوں کی پریشانی میں اضافہ کرتی رہی۔

بارش برف باری

مزید : صفحہ اول