مقبوضہ واد ی، کرفیو کو 162روز مکمل، ایک اور کشمیری شہید

مقبوضہ واد ی، کرفیو کو 162روز مکمل، ایک اور کشمیری شہید

  



سرینگر (نیوزایجنسیاں)وادی کشمیر اور جموں کے مسلم اکثریتی علاقوں میں 162 دنوں سے مسلسل فوجی محاصرہ اور لاک ڈاؤن جاری ہے،جس سے معمولات زندگی دستور مفلوج ہیں۔مقبوضہ کشمیر میں بھارتی فوجیوں نے اپنی ریاستی دہشتگردی کی تازہ کارروائی کے دوران پیر کوضلع بڈگام میں ایک اورکشمیری نوجوان کو شہید کردیا،قابض فوج کی گھر گھرتلاشی کے دوران نوجوانوں کی شہادتیں بھی عام ہیں گزشتہ روز مقبوضہ کشمیرمیں ہزاروں افراد نے شدیدبارشوں، برف باری اورپابندیوں کی پرواہ نہ کرتے ہوئے دو دن پہلے شہید ہونیوالے تین کشمیری نوجوانوں کی نماز جنازہ میں شرکت کیلئے ضلع پلوامہ کے قصبے ترال میں اکٹھے ہوگئے۔کشمیرمیڈیاسروس کے مطابق فوجیوں نے تینوں نوجوانوں کو گزشتہ روز قصبے کے علاقے گلشن پورہ میں تلاشی اور محاصرے کی کارروائی کے دوران شہیدکردیاتھا۔ ترال قصبے میں نوجوانوں کے آبائی علاقوں سیر، مندورہ اور مونگ ہامہ میں آزادی کے حق میں اور بھارت کے خلاف فلک شگاف نعروں کی گونج میں شہدا کی نماز جنازہ ادا کی گئی۔ اس موقع پر جنازے کے شرکاء نے شہداء کے مشن کو بھارتی تسلط سے مکمل آزادی تک جاری رکھنے کے عزم کا اعادہ کیا۔ادھر بھارتی فوجیوں نے سرینگر، بڈگام، کپواڑہ، بانڈی پورہ، بارہمولہ، اسلام آباد، شوپیاں، پلوامہ، کولگام اور راجوری کے اضلاع میں جاری تلاشی اور محاصرے کی کارروائیوں کے دوران لوگوں کو تشدد کا نشانہ بنایا اور انہیں گھروں سے باہر کھلے آسمان تلے کھڑے رہنے پر مجبور کردیا۔ فوجیوں نے اسلام آباد ضلع کے علاقے سرنال میں راہگیروں پر بھی تشدد کیا۔

مقبوضہ کشمیر 

مزید : صفحہ اول