بارش:ملتان سمیت مختلف شہروں میں چھتیں گرنے سے 7افراد جاں بحق، متعدد زخمی 

بارش:ملتان سمیت مختلف شہروں میں چھتیں گرنے سے 7افراد جاں بحق، متعدد زخمی 

  



ملتان‘ راجن پور‘ خانیوال‘ کبیروالا‘ ڈیرہ (وقائع نگار‘ ڈسٹرکٹ بیورو رپورٹ‘ ڈسٹرکٹ رپورٹر‘ نمائندہ پاکستان‘بیور ونیوز‘ نامہ نگار‘ نمائندہ خصوصی) ملتان سمیت مختلف شہروں میں بارش کے باعث چھتیں گرنے سے 7افراد جاں بحق اور متعدد زخمی ہوگئے۔  راجن پور،نواحی علاقے داجل کی بستی میو میں کچے مکان کی چھت گرنے سے بیوہ خاتون سمیت تین افراد جاں بحق جبکہ پانچ زخمی ہوگئے ریسکیو ڈبل ون ڈبل ٹو کی ٹیموں نے ملبے سے زخمیوں کونکال کر ہسپتال منتقل کردیا، وزیراعلیٰ پنجاب کا حادثے پر اظہار افسوس، انتظا میہ کو فی الفور امدادی کاروائیاں کر نے کی ہدایت،زخمیوں کو ہر ممکن طبی امداد فراہم کی جائے، ڈپٹی کمشنر کی ہدایت پر اے سی جام پور اور دیگر انتظامی آفیسران متعلقہ بستی میں پہنچ گئے،واقعہ پر علاقہ بھر میں سوگ،تفصیلات کے مطابق نواحی علاقے داجل کی بستی میو میں گذشتہ روز سے جاری بارش کے باعث بستی میو میں کچے مکان کی چھت گرگئی جس کے نتیجہ میں کمرے میں سوئی بیوہ خاتون مختار مائی، اُس کا جواں سال بیٹا عامر، اُس کی رشتہ دار خاتون سائرہ بی بی موقع پر ہلاک ہوگئے جبکہ اُسی چھت کے ملبے سے ریسکیوڈبل ون ڈبل ٹو کی ٹیم نے بزرگ خاتون صابل مائی، شکیلہ بی بی، جنت مائی، نادر، ناصر کوزخمی حالت میں طبی امداد دے کر ہسپتال جام پور منتقل کردیا حادثہ کے بعد وزیراعلیٰ پنجاب سردار عثمان خان بزدار نے اظہارافسوس کیا ہے اور انتظا میہ کو ہر ممکن امدادی کاروائیاں تیز کر نے کی ہدایت کی جبکہ زخمیوں کو ہر ممکن طبی امداد فراہم کر نے کی ہدایات بھی جاری کیں ڈپٹی کمشنر ذوالفقار علی کھرل کی ہدایت پراے سی جام پور اپنے دیگر انتظا می آفیسران کے ہمراہ داجل کی بستی میو میں پہنچ گئے بارش کے باعث تباہ حال راستوں کی وجہ سے انتظا می آفیسران کو امدادی کاروائیوں میں مشکلات کاسا منا ہے۔  بارش کے باعث نواحی علاقہ میں چھت گرنے سے دو بچے جاں بحق  ہوگئے تفصیل کے خانیوال کے نواحی علاقہ چک نمبر94/10-Rمیں بارش کے باعث چھپر والی چھت گرنے سے تین سالہ عمارہ اور دو سالہ رمضان جاں بحق ہو گئے۔جبکہ کبیروالہ کے علاقہ نواں شہر میں بارش سے گھر کی چھت گرنے سے دو خواتین سمیت تین افراد زخمی ہو گئے زخمیوں میں کرن،مہناز اور اعجاز شامل ہیں۔ریسکیو1122نے زخمیوں کو ابتدائی طبی امداد کے بعد تحصیل ہیڈ کوارٹر ہسپتال کبیروالہ منتقل کردیا ہے۔ ڈپٹی کمشنر آغا ظہیر عباس شیرازی نے چھت گرنے سے جاں بحق ہونے والے دو بچوں کے لواحقین سے تعزیت کاظہار کرتے ہوئے کہا ہے کہ وہ ان کے غم میں براب کے شریک ہیں جبکہ نواں شہر میں زخمیوں کو ہر ممکن علاج معالجے کی بھی ہدایت کی ہے ڈپٹی کمشنر نے بارش کے دروان کسی بھی سانحہ سے نمٹنے کے لیے تما م محکموں کوالرٹ رہنے کی بھی ہدایات جاری کیں ہیں۔  کبیروالا اور نواحی علاقوں میں شروع ہو نے والے والے بارشوں کے سلسلے نے رات گئے زور پکڑ لیا، علی الصبح ہو نے والی تیز با رش سے متاثرہ نواحی علاقے ممدال کی نواحی بستی دھارا میں مقامی کاشتکار مراد ولد غلام محمد قوم لک کے مویشیوں کے بھانے کی آدھی سے زیادہ ٹی آر گارڈروں سے بنی چھت گر گئی اس دوران مراد لک کی دو بیٹیاں 15سالہ مہو ش مائی اور 10سالہ رفاقت مائی مویشیوں کو ملبہ سے نکالنے آئیں تو اوپر کھڑی باقی ماندہ چھت ٹی آر گاڈر سمیت ان پر آن گری، چھت گر نے سے دو نوں بہنیں شدید زخمی ہو گئیں جنہیں علاج معالجہ کے لئے تحصیل ہیڈ کواٹرہسپتال لایا جارہا تھا کہ وہ راستے میں دم توڑ گئیں، جب کہ چھت تلے دب کو لاکھوں رو پے مالیتی دو بھینسیں بھی ہلاک ہو گئیں،بچیوں نے ہلاکتوں سے علاقہ میں سو گواری کی فضا ء پھیل گئی اور ہر آنکھ اشکبا ر ہوگئی۔   بارش کے باعث  ممتاز آباد کے علاقے میں مکان کی چھت کا ایک حصہ گرنے سے ایک بچے شدید زخمی ہوگیا۔جبکہ بچی سمیت خاتون کو معمولی چوٹیں آئیں ہیں۔معلوم ہوا ہے ممتاز آباد کے علاقے میں ایک روز قبل تیز بارش کی وجہ سے گھر کی چھت کا ایک حصہ گر گیا۔جس کے نتیجے میں ایک وجہیہ کے سر پر شدید چوٹیں ائیں۔اور اس دوران بشری اور اسکی والدہ بھی معمولی زخمی ہوئیں۔اطلاع ملتے ہی ریسکیو کی امدادی ٹیم موقع پر پہنچی۔جہنوں نے بچی اور خاتون کو طبی امداد دینے کے بعد موقع سے فارغ کردیا۔جبکہ شدید زخمی ہونے والے بچے وجہیہ کو نشتر ہسپتال کے وارڈ نمبر 14 میں داخل کروا دیا ہے جہاں اسکا علاج جاری ہے۔ جبکہ ڈیرہ کے نزدیک بستی گجوجی میں بھانے کی چھت گر گئی۔ چھت گرنے سے بھانے میں کھیلنے والے چار بچے زخمی، ہسپتال منتقل۔ تفصیلات کے مطابق ڈیرہ غازی خان کے نواحی علاقہ بستی گجوجی میں بارش کے باعث گھر میں بنائے گئے ایک بھانے کی چھت گر گئی۔ چھت گرنے سے بھانے کے نیچے باندھے ہوئے تین جانور اور چار کھیلتے ہوئے بچے ملبہ کی زد میں آکر زخمی ہو گئے ریسکیو اہلکاروں نے اطلاع ملنے پر زخمی بچوں کو طبی امداد دینے کے بعد ہسپتال منتقل کر دیا۔ جبکہ ویٹنری ڈاکٹرز نے جانوروں کا معائنہ کرتے ہوئے انہیں انجکشن لگائے۔

چھتیں 

ملتان‘ راجن پور‘ بورے والا‘ صادق آباد‘ ہارون آباد‘ وہاڑی‘ میلسی‘ لیاقت پور (سپیشل رپورٹر‘ نیوز رپورٹر‘ نمائندہ خصوصی‘ بیورو رپورٹ‘ نمائندگان پاکستان) بادلوں کے ساتھ بارش اور یخ بستہ سردہوائیں ملتان سمیت مضافاتی علاقوں میں سردی کی شدت میں اضافہ ہوگیا۔سردی کے باعث شہری ٹھٹھر کررہ گئے معمولات زندگی متاثر ہونے لگے۔اس ضمن میں ملتان سمیت مضافاتی علاقوں میں اتوار کی شب سے گزشتہ روز تک بادلوں کے ساتھ ساتھ بارش اور یخ بستہ ہواؤں کا سلسلہ جاری رہا جس کے باعث سردی کی شدت میں اضافہ ہوگیا ہے۔یخ بستہ ہواؤں نے شہریوں کو ٹھٹھرا کررکھ دیاہے۔محکمہ موسمیات کے مطابق ملتان سمیت جنوبی پنجاب کے بیشتر علاقوں میں آج موسم سرد خشک رہنے اور صبح کے وقت دھند پڑنے کا امکا ن ہے۔ سالڈویسٹ مینجمنٹ کمپنی کے سینٹری ورکرز گزشتہ روز بارش کے باوجود ملتان شہر کی صفائی کے لیے متحرک رہے اور منیجر آپریشنز اورڈپٹی منیجرآپریشنز کی طرف سے سپروائزر اور سینٹری ورکرز کی چیکنگ کا عمل بھی جاری رہا۔ گزشتہ روز ممتازآباد، حسن آباد، چوک کمہارانوالہ،رشیدآباد، گلگشت، گھنٹہ گھر اور ڈیراڈا میں ورکرز کی پڑتال کی گئی جبکہ دولت گیٹ، خونی برج، حرم گیٹ اور پاک گیٹ میں بھی حاضری رجسٹر کی چیکنگ کی گئی۔ اس دوران بارش کے باعث سینٹری ورکرز کو بجلی کے پول سے دور رہنے کی ہدایت کی گئی اور سینٹری ورکرز کو صفائی کے لیے مشینری سے کام لینے کا کہا گیا۔ ایم ڈی ویسٹ مینجمنٹ کمپنی ناصر شہزاد ڈوگر نے گزشتہ روزگلگشت ایریا کی خصوصی صفائی کا حکم دیا تھامنیجنگ ڈائریکٹر واسا نسیم خالد چانڈیو کی ہدایت پر اتوار کے روز سے ملتان میں ہونے والی بارش کے باعث واسا میں ہائی الرٹ جاری ہے اور تمام سیوریج اور ڈسپوزل اسٹیشن کے افسران اور سٹاف کو اتوار کی چھٹی کے باوجود فیلڈ میں طلب کر کے رات کے اوقات اپنی اپنی حدود میں بارش کا سلسلہ تیز ہوتے ہی نکاسی آب کے لیے ٹیموں اور مشینری کو متحرک کرنے کا حکم دیا گیا خصوصا ڈپٹی ڈائریکٹر ڈسپوزل اسٹیشنز کو ہدایت کی گئی کہ وہ تمام ڈسپوزل اسٹیشن پر متعلقہ ایس ڈی او اور دیگر سٹاف کی حاضری کو یقینی بنائیں اور بارش کا سلسلہ تیز ہونے پر ڈسپوزل اسٹیشنز کو فل کیپسیٹی پر چلایا جائے انہوں نے رات 12 بجے سے صبح 6 بجے تک مسلسل بارش کے بعد سوموار کی علی الصبح ڈپٹی ڈائریکٹرز سیوریج کو تمام اہم شاہراہوں سے بارش کا پانی سکر مشینری کے ذریعے بھی اٹھانے کی ہدایت کی تاکہ شہریوں کو آمدورفت اور ٹریفک کی روانی میں مشکلات کا سامنا نہ کرنا پڑے ایم ڈی واسا نے شہر کے مختلف علاقوں اور ڈسپوزل اسٹیشن کا دورہ کرکے نکاسی آب کے انتظامات کا خود بھی معائنہ کیا اور سٹاف کی کارکردگی پر اطمینان کا اظہار کیا انہوں نے بارشوں کی مزید پیشگوئی کے پیش نظر تمام سیوریج اور ڈسپوزل اسٹیشن افسران، سٹاف کو ایس او پی کے مطابق الرٹ رہنے اور شہر بھر سے بارش کے پانی کے مکمل اخراج تک فیلڈ میں اپنی موجودگی کو یقینی بنانے کی ہدایت کی۔ ملتان سمیت گرد و نواح میں جاری بارشوں کے باعث منڈیوں میں اجناس اور شہر میں دودھ کی سپلائی کا کام متاثر ہو رہا ہے۔ملتان سمیت نواحی علاقوں میں بارشوں کا سلسلہ جاری ہے جس کی وجہ سے نظام زندگی متاثر ہو رہا ہے۔بارش کی وجہ سے غلہ منڈی اور سبزی منڈی میں اجناس کی ا?مد کا کام تعطل کا شکار ہے۔ا?ڑھتیوں کا کہنا ہے کہ تمام سبزیاں اور پھل دیہی علاقوں سے ا?تے ہیں۔بارشوں کی وجہ سے کچے راستے سب سے پہلے خراب ہوتے ہیں جبکہ موسلادھار بارشوں کی وجہ سے سڑکوں کی حالت بھی ابتر ہے اور دیگر اجناس غلہ منڈیوں میں تاخیر سے ا? رہی ہیں یا پھر ان کی ا?مد میں بھی تعطل پیدا ہو رہاہے۔ملتان غلہ منڈی اور سبزی منڈی میں اجناس کی سپلائی متاثر ہونے سے شہر کی مختلف مارکیٹوں اور بازاروں میں ان کی قلت پیدا ہونے کا خدشہ ہے۔ ملک کے بیشترحصوں میں دھند غائب ہوئی تو بارش نے آ لیا، ٹرینوں کا شیڈول درہم برہم- گزشتہ روز کراچی ایکسپریس، تیز گام،جعفر ایکسپریس،علامہ اقبال ایکسپریس،پاکستان ایکسریس،شاہ حسین ایکسپریس،اور عوامی سمیت دیگر گاڑیاں 4سے 8 گھنٹے کی تاخیر کا شکار رہیں،مسافر پریشان تفصیلات کے مطابق گزشتہ روز تاخیر کا شکار ہونے والی ٹرینوں میں کراچی سے لاہور جانے والی شاہ حسین ایکسپریس 5گھنٹے، پاکستان ایکسپریس 3 گھنٹے، کراچی ایکسپریس 4گھنٹے، تیز گام 2 گھنٹے، لاہور سے کراچی جانے والی شالیمار ایکسپریس ساڑھے 4گھنٹے کی تاخیر کا شکار ہوئیں - خیبر میل 5گھنٹے، ملت ایکسپریس 8گھنٹے اور ہزارہ ایکسپریس 6 گھنٹے کی تاخیر سے ملتان پہنچیں ٹرینوں کی گھنٹوں کی تاخیر نے مسافروں کو پریشان کئے رکھا اور وہ شدید ٹھنڈ میں کئی گھنٹے تک ٹرینوں کی آمد کے منتظر رہے ملک بھرکے دیگرحصوں کی طرح گزشتہ روز ملتان اورنواحی علاقوں میں ہونے والی بارش نے ریلوے کے جدیدسگنل سسٹم کی قلعی کھل کررکھ دی ہے۔بتایا جاتاہے کہ بارش کے باعث لودھراں تاچیچہ وطنی مختلف مقامات پرسگنل سسٹم خراب ہوگیا۔جس کی وجہ سے مسافرٹرینوں کو پیپرلائن کلیئرکے تحت چلایاجارہاہے۔ریلوے ذرائع کے مطابق بارش کے باعث ریلوے کے سنٹرل بیس لاکنگ سسٹم میں نمی آجاتی ہے۔جس کی وجہ سے سگنل سسٹم درست کام نہیں کرتا۔نمی ختم ہوتے ہی سسٹم خودبہ خودٹھیک ہوجائیگا۔آئندہ دوروزتک مزیدبارشوں کی پیش گوئی کومدنظررکھتے ہوئے ریلوے انتظامیہ نے ٹرین ڈرائیوروں اور دیگر آپریشنل سٹاف کوبھی الرٹ محفوظ ٹرین آپریشن جاری رکھنے کے لئے ہدایات جاری کی ہیں۔ ریلوے ہیڈکوارٹرنے محکمہ موسمیات کی طرف سے آئندہ ایک ہفتہ تک دھندکی شدت میں اضافہ کی پیش گوئی کے پیش نظر ملتان سمیت تمام ریلوے ڈویژنوں کومحفوظ ٹرین آپریشن کیلئے ہدایات جاری کردی ہیں۔جس میں ٹرین ڈرائیوروں سے کہاگیاہے کہ وہ دھندکے موسم میں انتہائی احتیاط کے ساتھ ٹرین انجن کوچلائیں ریلوے پھاٹکوں اورآبادی میں وسل اور انجن کی ہیڈلائٹس کاہرصورت استعمال کیاجاے۔ریلوے لائنوں کے ساتھ ٹرین انجن ڈرائیوروں کی آگاہی کے لئے ریلوے پھاٹکوں،ریلوے ٹریک کی سپیڈ،آبادی کواوردیگرامورکوظاہرکرنیوالے جتنے بورڈلگے ہوئے ہیں انہیں نمایاں کرنے کی ہدائت بھی کی گئی ہے۔اسی طرح ریلوے پھاٹک پرتعینات عملہ،ٹریک پٹرولز،اسٹیشن ماسٹرزدیگرکوبھی ہدائت دی گئی ہے کہ اگرکسی بھی مسافریامال بردارٹرین کاٹیل لیمپ نہیں ہے توٹرین کوہرگزنہ چلایاجائے۔ریلوے پھاٹکوں اورٹریک پٹرولنگ پرموجودسٹاف سے کہاگیاہے کہ وہ فوری طورپرٹیل لیمپ کے بغیرجانے والی ٹرین کی اطلاع اپنے متعلقہ افسردیں اورکوشش کی جائے کہ اس طرح کی ٹرین کوروکوایاجائے۔بلاک سیکشن میں کسی بھی ٹرین کے روکنے کی صورت میں پیچھے سے آنے والی ٹرین کوروکنے کے لئے پٹاخوں کااستعمال کیاجائے۔ رواں ماہ مسلسل بارش کے سلسلہ نے ریلوے ملازمین کی زندگی داو پر لگا دی،خستہ حال کوارٹرز کی چھتیں ٹپکنے لگیں،ریلوے انتظامیہ کی مبینہ غفلت ملازمین کے لئے وبال جان بن گئی، ریلوے ملازمین موت کے سائے میں زندگی گزارنے پر مجبور ہیں۔ ملتان میں دھند چھٹی تو بارش آڑے آگئی ہے جس کے باعث ملتان انٹر نیشنل ایئرپورٹ سے پروازیں غیر معمولی تاخیر کا شکار ہیں، جس کی وجہ سے مسافر خوار ہو کر رہ گئے ہیں، ریاض سے ملتان آنے والی قومی ایئرلائن کی پرواز 5 گھنٹے تاخیر کا شکار رہی، دوبئی سے آنے والی پرواز 4 گھنٹے اسلام آباد سے آنے والی پرواز بھی 4 گھنٹے لیٹ پہنچی، اسی طرح شارجہ سے آنے والی پرواز 2 گھنٹے، کراچی سے آنے والی پرواز 3 گھنٹے اور مسقط سے آنے والی پرواز 1 گھنٹہ تاخیر سے ملتان پہنچی، اسی طرح اسلام آباد جانے والی پرواز 4 گھنٹے تاخیر سے روانہ ہوئی، دوبئی جانے والی پرواز 4 گھنٹے، شارجہ جانے والی پرواز 2 گھنٹے تاخیر کا شکار رہی، اسی طرح جدہ جانے والی قومی ایئرلائن کی پرواز ایک گھنٹے کی تاخیر سے روانہ ہوئی، جس کی وجہ سے ایئرپورٹ پر مسافروں کو پریشانی کا سامنا رہا، سول ایوی ایشن کے حکام کا کہنا ہے کہ موسم بہتر ہونے کے بعد ہی شیڈول بہتر ہوگا۔ موسم سرماکی شدت بڑھنے اور بارشوں کے تسلسل سے ملتان شہر میں لنڈے کے (استعمال شدہ) کپڑوں کی مانگ بے تحاشا بڑھ گئی ہے۔دکانداروں کی چاندی ہو گئی ہے۔قیمتوں میں اضافہ کا رجحان غالب ا?نے سے سفید پوش طبقے اور غریب شہریوں کے لئے نئے مسائل پیدا ہو رہے ہیں۔ملک میں جاری بارش کی وجہ سے سردی کی حالیہ لہر کے باعث موسم میں شدت ا?گئی ہے۔جس پر شہریوں نے لنڈے کے کپڑوں کی خریداری کا کام تیز کر دیا ہے۔ راجن پور،بارش کے بعد فتح پورروڈ اور اُس سے ملحق بندروڈ کیچڑ میں تبدیل، بارش رحمت کی بجائے لانگ کالونی کے مکینوں کے لئے زحمت بن گئی، علاقے بھر کے مکین گھروں میں محصور ہو کررہ گئے، پیدل جانا بھی دُشوار ہوگیا، میونسپل کمیٹی کاعملہ کہیں نظر نہیں آیا نہ ہی ٹریکٹر کے ذریعہ بندروڈ کو صاف کیا گیا شہریوں کا میونسپل کمیٹی کی ناقص کار کردگی پر شدیداحتجاج،تفصیلات کے مطابق لانگ کالونی کے مکینوں محمدعبیداللہ گبول، حاجی بشیر گبول، منیر احمد لانگ، رسول بخش لانگ، طارق بھٹی، صابر حسین، حاجی محمد گبول، سابق کونسلر حاجی آس محمد، معروف قانون دان وہو میوڈاکٹر کلیم اللہ ملک نے احتجاج کرتے ہوئے صحافیوں کو بتایا کہ گذشتہ روز ہونے والی بارش کے بعد بندروڈ کی سڑک تالاب بن گئی، کچہ راستہ ہو نے کی وجہ پوری سڑک کیچڑ میں تبدیل ہو کررہ گئی جس کے باعث موٹرسائیکل اور گاڑیاں ایک طرف پیدل جانے والوں کو سخت مشکلات کاسا منا کرنا پڑرہا ہے بچے اور بچیاں سکول جانے سے محروم ہوگئیں بوریوالا اور گردونواح میں گزشتہ روز ہونیوالی شدید بارش کے بعد گلیاں اور بازار پانی میں ڈوب گئے جس کی وجہ سے لوگوں کو شدید مشکلات کا سامنا کرنا پڑا۔بارش سے نشیبی علاقوں میں بارش کا پانی جمع ہونے سے علاقہ مکینوں کو مشکلات کا سامنا، گھروں سے نکلنا مشکل ہو گیا۔بارش کی وجہ سے تعلیمی اداروں میں طلباء کی حاضری کم رہی۔تحصیل کمپلیکس میں سٹمپ وینڈر کا لان پانی سے بھر گیا چند گھنٹوں کی بارش سے شہر کے مختلف علاقے پانی میں ڈوب گئے، مظہر فریدکالونی کی مین گلی تالاب کا منظر پیش کرنے لگی، بازار بند ہو کر رہ گئے،لوگ گھروں میں محصور۔تفصیل کے مطابق گزشتہ رات سے وقفے وقفے سے ہونے والی بارش نے شہر کے مختلف علاقوں جاوید کالونی،محلہ جالندھری،میاں غلام رسول کالونی،ورند کالونی اور مظہر فرید کالونی کی گلیاں تالابوں میں بدل دیاہے، مظہر فرید کالونی کی مین گلی بارش کے پانی میں ڈوب گئی لوگ گھروں میں محصور ہوکر رہ گئے مین گلی میں گھٹنوں پانی جمع ہونے سے بازار مکمل طور پر بند ہیں۔ راہ گیروں کو آمد و رفت میں شدید مشکلات کا سامناکرناپڑرہاہے میونسپل کارپوریشن کا عملہ صفائی تاحال علاقے میں نہیں پہنچا ہے۔نکاسی آب کا کوئی انتظام نہ ہونے سے مظہر فرید کالونی کے مکین شدید مشکلات میں مبتلا ہیں،شہریوں محمد تنویر‘ عطاء محمد‘ مزمل حسین‘بابر علی‘ محمد فیصل‘غلام فرید‘ عباس علی و دیگر نے بتایا کہ میونسپل کارپوریشن نے ہمیں بے یارومددگار چھوڑدیاہے ہم گھروں میں محصور ہوکر رہ گئے ہیں۔ ہارون آباد اور گردونواح میں شدید موسلادھار بارش، سردی کی شدت میں اضافہ، نشیبی علاقے زیر آب آگئے، تفصیلات کے مطابق ہارون آباد اور گردونواح میں اتوار اور پیر کی درمیانی شب موسلادھار بارش ہوئی جس کے نتیجے نشیبی علاقے زیر آب آگئے، سڑکوں،گلیوں اور چوکوں میں بارش کا پانی جمع ہونے سے آمد ورفت میں دشواری پیش آنے کیساتھ ساتھ عام راہگیروں کو شدید مشکلات کا سامنا کرنا پڑ آسمان پر چھائے بادلوں کا راج برقرار شہر اور گردونواح میں وقفہ وقفہ سے بارش کا سلسلہ جاری سردی کی شدت میں اضافہ ہو گیا بارش سے شہر اور دیہات کے متعدد فیڈر بند بجلی کی فراہمی معطل واقعات کے مطابق گزشتہ رات سیآسمان پر گہرے بادلوں کا راج برقرار رہا اور شہر اور گردونواح میں وقفہ وقفہ سے بارش کا سلسلہ جاری ہے جس کی وجہ سے سردی کی شدت میں اضافہ ہوگیا ہے اور ساتھ ہی عوام کی مشکلات میں بھی بڑھ گئی ہے جبکہ بارش کی وجہ سے بجلی کے متعدد فیڈر ٹرپ کر گئے جس سے بجلی کی فراہمی معطل ہو گئی بجلی کی بندش سے عوام کو پریشانی کا سامنا کرنا پڑ رہا ہے بارش کی وجہ سے سکول و کالج اور دفاتر میں حاضری کم دیکھنے میں آئی ہے جبکہ وقفہ وقفہ سے جاری رہنے والی بارش سے نشیبی علاقے زیر آب آگئے اور کیچڑ پھسلن کی وجہ سے متعدد افراد زخمی ہوگئے بلدیہ کا عملہ بارش کا پانی نکالنے میں ناکام رہا۔ گزشتہ رات سے جاری وقفہ وقفہ بارش سے نواحی علاقہ اقبال ٹاؤن کی گلیاں اور بازار تالاب کا منظر پیش کرنے لگے مکینوں کی مشکلات اور پریشانیوں میں اضافہ ہوگیا۔میلسی اور گردونواح میں بارش سے سردی کی شدت میں اضافہ ہوگیا سڑکیں اور گلیاں برساتی پانی سے بھر گئیں اور جل تھل ہوگیا بارش کی وجہ سے طالب علم سکول نہ جا سکے میلسی شہر کی گلیاں اور بازار جھیل کا منظر پیش کرنے لگے کالی گھٹائیں فضا میں منڈلاتی رہیں شدید سردی اور بارش کی وجہ سے شہری دن بھر گھروں میں دبکے رہے جبکہ جگہ جگہ کیچڑ اور بارش کے پانی کی وجہ سے شہریوں کی مشکلات میں اضافہ ہو گیا۔ موسم سرما کی رات کے وقت ہونے والی شدید بارش سے لیاقت پور شہر۔۔۔اللہ والا چوک۔اللہ اباد روڈ و ملحقہ چھوٹے بڑے بازار سڑکیں اور گلیاں بارش کے پانی اور کیچڑ سے بھر گئی ہیں جس کی وجہ سے راہ گیروں کو شدید پریشانی کا سامنا کرنا پڑ رہا ہے۔

بارش

مزید : صفحہ اول