سانحہ اچھرہ، کوئی سراغ نہ مل سکا، ذمہ دار آئی جی جیل خانہ جات ہیں، آئی جی

سانحہ اچھرہ، کوئی سراغ نہ مل سکا، ذمہ دار آئی جی جیل خانہ جات ہیں، آئی جی

  

لاہور(کرائم رپورٹر) سانحہ رسول پارک کی ابتدائی تحقیقات میں پولیس کو حملہ آوروں کا کوئی سراغ نہ مل سکا، جائے وقوعہ کو سیل کردیا گیا جبکہ آئی جی پولیس پنجاب اور آئی جی جیل خانہ جات ایک دوسرے کو اس واقعہ کا ذمہ دار ٹھہراتے رہے،جاں بحق ہونے والے اہلکاروں کی میتیں پہنچنے پر 9 گھروں میں کہرام ، جنازے میں سینکڑوں افراد کی شرکت ، مقامی قبرستانوںمیں سپرد خاکر دیا گیا ۔معلوم ہوا ہے کہ کیمپ جیل کے زیر تربیت پولیس اہلکاروں کی رہائش گا ہ پر دہشت گردی کے المناک واقعہ کے بعد آئی جی پولیس پنجاب محمد حبیب الرحمان اسے آئی جی جیل خانہ جات کی نااہلی قرار دیتے ہوئے انہیں اس واقعہ کا ذمہ دارٹھہراتے رہے ان کا موقف تھا کہ جیل پولیس انتظامیہ نے انہیں زیر تربیت اہلکاروں کی مذکورہ نجی رہائش گاہ بارے آگاہ نہیں کیا تھا اگر ان کے علم میں لایا گیا ہوتا تو وہاں سکیورٹی فراہم کی جاتی جبکہ آئی جی جیل خانہ جات اسے آئی جی پولیس پنجاب کی غفلت قرار دیتے رہے کہ متعلقہ تھانے کی پولیس بھی اس اہلکاروں کی اس نجی رہائش گاہ سے لاعلم تھی ، اگر انہیں علم تھا تو وہ اسے پولیس کے اعلیٰ افسران کے نوٹس میں کیوں نہ لائے۔ ۔علاوہ ازیںسانحہ رسول پارک کی تحقیقات کے سلسلے میں پولیس مختلف ٹیمیں تشکیل دے دی گئی ہیں تاہم ابتدائی تفتیش میں پولیس کو تاحال حملہ آوروں کے بارے کوئی ایسے ٹھوس ثبوت اور شواہد نہیں مل سکے جن مد د سے ملزموں کی گرفتاری عمل میں لائی جاسکے ،اس واقعہ کی تفتیش پر مامور پولیس افسران کا کہنا ہے کہ حملہ آور وقوعہ سے قبل کئی روز تک اس مکان کی ریکی کرتے رہے جہاں زیر تربیت اہلکار رہائش پزیر تھے ۔ پولیس کو مطابق دہشت گردوں کو لاجسٹک سپورٹ فراہم کرنے والے ملزمان کے تلاش کے سلسلے میں لاہور بھر میں سرچ آپریشن شروع کردیا گیا ہے ، اس سلسلے میں کرائے پر رہائش پزیر افراد کا ڈیٹا بھی جمع کیا جارہا ہے۔ دریں اثناءواقعہ میں جاں بحق ہونے والے اہلکاروں کی میتیں ان کے آبائی گھروں کو روانہ کردی گئیں ، لاشیں پہنچنے پر گھروں میں کہرام برپا ہوگیا ، بعد ازاں انہیں سینکڑوں سوگواروں کی موجودگی میں مقامی قبرستانوں میں آہوں اور سسکیوں کے ساتھ سپرد خاک کردیاگیا۔

مزید :

صفحہ آخر -