یوم شہدائے کشمیر پر مقبوضہ وادی میں جلسوں پر پابندی،متعدد رہنما گرفتار

یوم شہدائے کشمیر پر مقبوضہ وادی میں جلسوں پر پابندی،متعدد رہنما گرفتار

  

سری نگر (اے این این) مقبوضہ کشمیر میں پولیس نے یوم شہدائے کشمیر کے موقع پر حریت کانفرنس کی جانب سے دی گئی ہڑتال کال کو ناکام بنانے کےلئے متعدد رہنماﺅں کو حراست میں لے لیا ¾جلسے جلوس اور ریلیوں میں شرکت پر پابندی عائد ¾ مختلف علاقوں میں سکیورٹی اہلکاروں کی اضافی نفری تعینات کردی گئی ¾ سید علی گیلانی ¾ یاسین ملک اور ظفر اکبر بٹ سمیت متعدد حریت قائدین نظربند ۔ تفصیلات کے مطابق مقبوضہ کشمیر میں حریت جماعتوں کی جانب سے ممکنہ احتجاجی جلوس نکالنے کے خدشے کے پیش نظر پولیس نے پائین شہر کے 5پولیس تھانوں کے حدود کے اندر آنے والے علاقوں میں نقل و حرکت پر پابندیاں عائد کرنے کا فیصلہ کیا ہے۔اس کے علاوہ مائسمہ میں بھی سیکورٹی کا کڑا بندوبست رہے گا۔ حریت کانفرنس(ع)نے اس بات کا اعلان کر رکھا ہے کہ مزار شہداتک جلوس نکالا جائے گا اور حریت کانفرنس نے پوری وادی میں ہڑتال کی کال دے رکھی ہے۔ تاہم ذرائع کا کہنا ہے کہ پولیس نے پائین شہر کے 7علاقوں میں پابندیاں رکھنے کا فیصلہ کیا ہے تاکہ حریت قائدین کے ممکنہ احتجاجی پروگرام کو روکا جاسکے۔پولیس نے ممکنہ احتجاجی مظاہروں کو روکنے کےلئے جہاں ایک طرف مختلف علاقوں میں سکیورٹی اہلکاروں کی اضافی نفری تعینات کردی ہے وہاں حریت قائدین سید علی گیلانی ¾ یاسین ملک اور ظفر اکبر بٹ سمیت متعدد رہنماﺅں کو بھی نظر بند کردیا ہے ۔حریت ترجمان ایاز اکبر کے مطابق پولیس نے علی گیلانی کے علاوہ جنرل سیکرٹری تحریک حریت محمد اشرف صحرائی اور محمد الطاف شاہ کو بھی نظر بند کردیا گیا ہے ۔

مزید :

علاقائی -