منفی سوچ کے حامل افراد کیلئے بری خبر

منفی سوچ کے حامل افراد کیلئے بری خبر
منفی سوچ کے حامل افراد کیلئے بری خبر

  

واشنگٹن (مانیٹرنگ ڈیسک) منفی سوچ کے حامل افراد خبردار ہو جائیں اور دوسرے لوگوں کے بارے میں حسد اور جلن سے پرہیز کریں کیونکہ سائنس کی ایک نئی تحقیق کے مطابق ایسے افراد کو فالج کے حملوں کے دگنے خطرات کا سامنا کرنا پڑ سکتا ہے۔ امریکن ہارٹ ایسوسی ایشن کے ایک طبی جریدے ’ دی ریسرچ ان سٹروک‘ کے ایک تحقیقی مطالعے کے مطابق ذہنی دباﺅ اور پریشانی انسانوں میں فالج کے خطرات کو بہت زیادہ بڑھا دیتی ہے۔ اس حالیہ تحقیق میں ماہرین 45 سے 84 سال کی عمر کے 6,700 افراد کا مطالعاتی جائزہ لیا گیا اور ایک سوالنامے کے ذریعے ان افراد کی ذہنی کیفیت اور ان کے رویوں سے متعلق سوالات کے جوابات اکٹھے کئے گئے۔ اس سروے میں ایسے افراد پر دو سال تک نظر رکھی گئی، جو ذہنی دباو¿ کی کہنہ بیماری، ڈپریشن کی علامات، غصے اور دوسرے لوگوں کے خلاف نفرت کے احساسات میں مبتلا تھے۔ ماہرین نے اندازہ لگایا کہ ان افراد کے مقابلے میں ایسے افراد میں فالج کے خطرات کم پائے گئے جو ڈپریشن وغیرہ کا زیادہ شکار نہیں تھے۔ تحقیق کے مطابق اس میں شامل افراد نے شروعات میں اس بات کا اعتراف کیا کہ انہیں دل کا کوئی بھی عارضہ لاحق نہیں ہے تاہم 11 سالوں پر مشتمل اس تحقیق کے دوران 147 افراد پر فالج کی بیمار ی کا حملہ ہوا جبکہ دیگر 48 افراد کو ’ٹرانسیئنٹ ایشیمک اٹیک‘ TIAs کا سامنا ہوا۔ محققین نے اندازہ لگایا کہ جن افراد میں دوسروں کے خلاف کینے اور نفرت کے جذبات زیادہ تھے، ان میں دیگر افراد کے مقابلے میں فالج یا ’ٹرانسیئنٹ ایشیمک اٹیک‘ کے امکانات بھی دو گنا زیادہ تھے۔

مزید :

تعلیم و صحت -