رمضان المبارک میں خادم اعلیٰ کی عوامی خدمت

رمضان المبارک میں خادم اعلیٰ کی عوامی خدمت
 رمضان المبارک میں خادم اعلیٰ کی عوامی خدمت

  

صوبہ بھر کے 318رمضا ن بازاروں میں عوام کی سہولت کے لئے خصوصی انتظامات

رمضان المبارک مسلمانوں کے لئے خیروبرکت کا مہینہ ہے۔اللہ تعالی اپنے کرم وفضل سے روزے داروں کو انواع واقسام کے لذیذ طعام سے نوازاتا ہے ۔اگر ہم غور کریں تو معلوم ہوتا ہے کہ رمضان کے مہینے میں اضافی اخراجات کے باوجود تمام تر ضروریات با آسانی اور با سہولت پوری ہو جاتی ہیں۔یہی رمضان المبارک کی فضیلت ہے اسی لئے تورمضان المبارک کو نیکیوں اور برکتوں کا مہینہ کہا جاتاہے۔

حکومت پنجاب نے رمضان المبارک کی برکتوں کو عوام تک پہنچانے کے لئے ہر سال کی طرح امسال بھی خصوصی اہتمام کیا۔ رمضان المبارک شروع ہونے سے قبل 3جون کو ہی صوبہ بھر میں 318سے زائد رمضان بازار قائم کر دئیے گئے۔رمضان بازاروں میں روزے دار خریداروں کی سہولت کیلئے خصوصی اہتمام کیاگیا۔پنکھوں ، ائیر کولر اور چلرز نصب کئے گئے۔ بزرگ شہروں اور خواتین کے لئے الگ کاؤنٹر اور بیٹھنے کے لئے جگہ مخصوص کی گئی۔تمام رمضان بازاروں میں ابتدائی طبی امداد کے لئے ڈسپنسریاں قائم کی گئی۔محکمہ محنت کی طرف سے اوزان وپیمائش کی چیکنگ کیلئے لیبر انسپکٹرز کی ڈیوٹیاں لگائی گئی۔

محکمہ انڈسٹری کی طرف سے جاری کردہ رمضان مانیٹرنگ میں بتایا گیاکہ صوبہ بھر کے 318رمضان بازار وں میں گزشتہ ماہ ڈھائی کروڑ سے زائد شہریوں نے امدادی نرخ پرایک کروڑ 60لاکھ کلو گرام سے زائد آٹا ، چینی اور پھلوں ، سبزیوں سمیت 16اشیاء خوردونوش کی ریکارڈ خریداری کی ہے۔وزیراعلی پنجاب محمد شہبازشریف کی ہدایت پرعوام کو سستے داموں آٹا فراہم کرنے کے لئے ساڑھے 4ارب روپے سبسڈی فراہم کی گئی جبکہ دیگر ضروری اشیاء خوردونوش کی ارزاں نرخ پر فراہمی کے لئے 3ارب روپے کی سبسڈی فراہم کی گئی۔

چینی کا استعمال رمضان المبارک میں بہت بڑھ جا تاہے ۔مختلف مشروبات میں چینی کا استعمال تو کیا ہی جاتاہے ۔رمضان کی مناسبت سے روزے داروں کے لئے پھیونیاں اور دیگر میٹھے پکوان بھی تیار کئے جاتے ہیں۔ حکومت پنجاب نے عوام کی ضرور ت کو مد نظر رکھتے ہوئے چینی کے نرخ میں کمی کا خصوصی اہتمام کیا۔مارکیٹ سے 10روپے فی کلو کی سبسڈی پر ایک کروڑ 43لاکھ 10ہزار کلو گرام چینی رمضان بازارو ں میں 55روپے کلو کے نرخ پر فروخت کی گئی۔ پاکستان شوگر ملز ایسوسی ایشن کی طرف سے 2کروڑ کلو گرام چینی ارزاں نرخ پر فراہم کی گئی۔

چکن کا استعمال بھی سالن اور دیگر ڈشوں میں خصوصیت سے کیا جاتا ہے بلکہ اگر یہ کہاجائے کہ چکن ہمارے دسترخوان کا لازمی حصہ بن چکا ہے تو بے جا نہ ہوگا یہی وجہ ہے کہ رمضان بازاروں میں مارکیٹ سے 10روپے کم نرخ پر تقریبا 33,52000 کلو گرام چکن فروخت کیا گیا۔مارکیٹ سے 7روپے فی درجن کم نرخ پر88ہزار درجن سے زائد انڈے فروخت کئے گئے۔

حکومت پنجاب نے رمضان المبارک میں عام آدمی کی ضرورت کو مد نظر رکھتے ہوئے آٹے کے نرخ میں کمی کا خاص اہتمام کیا گیا ۔ صوبہ بھر سے 335فلو ملوں سے آٹے کی بروقت فراہمی کا اہتمام کیا گیا اور عوام کو معیاری آٹے کی فراہمی یقینی بنانے کے لئے فوڈ اتھارٹیز کی طرف سے 1519 سٹالوں وغیرہ پر چھاپے مارے گئے۔زیرو ٹالرنس کے تحت 9 فلو رملوں کا کوٹہ معطل کیا گیا۔11 کے فوڈ لائسنس منسوخ کئے گئے۔103فلور ملوں کو شوکاز نوٹس جاری کئے گئے۔ 17لاکھ 90ہزار روپے جرمانہ عائد کیا گیاجبکہ 3اہلکاروں کے خلاف بھی کارروائی کی گئی۔فلو ر ملوں سے لئے گئے نمونے غیر معیاری ثابت ہونے پر 40ہزار روپے ،نمی کی زیادہ مقدار ثابت ہونے پر 20ہزار روپے جرمانہ بھی کیاگیا۔وزیراعلی کی ہدایت پر خصوصی طور پرآٹا کے 240 نمونے بھی لئے گئے۔رمضان بازاروں میں 290روپے کے امدادی نرخ پر معیاری اور بہترین آٹا فراہم کیاگیا۔روزانہ 290 روپے کے امدادی نرخ پر سوا لاکھ 10کلو آٹے کے تھیلے فروخت کئے گئے۔وزیراعلی محمد شہبازشریف کی ہدایت پراوپن مارکیٹ میں 20کلو گرام آٹے کے تھیلے 620روپے کے امدادی نرخ او ر10کلو گرام آٹے کے تھیلے 310روپے کے امدای نرخ پر فراہم کئے گئے۔محتاط اعداد و شمار کے مطابق اوپن مارکیٹ میں 10کلو گرام کے 4لاکھ 36ہزار اور 20کلو گرام کے 46 لاکھ تھیلے صوبہ بھر کے رمضان بازاروں میں فروخت کئے گئے ۔

حکومت پنجاب کی طرف سے ذخیرہ اندوزی اور ناجائز منافع خوری کے سدباب کیلئے خصوصی اہتمام کیاگیا۔محکمہ زراعت کی وزیراعلی کی ہدایت پر ایگریکلچر فیئر پرائس شاپس قائم کی گئی۔ایگریکلچر فیئر پرائس شاپ پر دال چنا اور بیسن مارکیٹ سے 20روپے کم، دال ماش اور دال مصور اور کھجوریں مارکیٹ سے 10روپے فی کلو کم جبکہ آلو، سیب ، پیاز ، کدو، دال مصور، ٹماٹر، چنا، چاول ، کریلا اور کیلے تھوک نرخ پر عوام کو فراہم کئے گئے۔عوام کی سہولت کے لئے رمضان بازاروں میں یوٹیلٹی سٹورز کارپوریشن کے سٹال بھی قائم کئے گئے۔

وزیراعلی کی ہدایت پر صوبائی وزراء، مشیر ،صوبائی پارلیمانی سیکرٹری ،سیکرٹریز اور دیگر اعلی افسران نے صوبہ بھر کے رمضان بازاروں کے اچانک دورے کئے اور عوا م کی رائے او ر تاثرات جان کر مسائل کے حل کے لئے فوری احکامات جاری کئے۔وزیراعلی پنجاب محمد شہبازشریف بھی مختلف شہروں کے رمضان بازاروں کے اچانک دورے کر کے اشیاء صرف کی فراہمی ،نرخ او رمعیار کا جائزہ لیتے رہے ہیں۔یہ امر قابل ذکر ہے کہ وزیر اعلی اور وزراء کے دوروں کے دوران عوام نے مجموعی طور پر رمضان بازارو ں کے انتظامات کو تسلی بخش قرار دیتے ہوئے وزیراعلی محمد شہبازشریف کا شکریہ ادا کیا۔

افسوس ناک امر یہ ہے کہ بعض عناصر رمضان المبارک میں عوام کی ضروریات سے ناجائز فائدہ اٹھانے کا کوشش کرتے ہیں ۔ رحمتوں او ربرکتوں والے مہینے میں ناجائزمنافع خوری سے باز نہیں آتے ۔حکومت نے ایسے عناصر کی سرکوبی کے لئے وزیراعلی پنجاب محمد شہبازشریف کی ہدایت پر صوبہ بھر میں گراں فروشی ، ذخیرہ اندوزی ، ملاوٹ اور دیگر غیر قانونی اقدامات کے سدباب کے لئے 1756 پرائس کنٹرول مجسٹریٹس نے صوبہ بھر کے مختلف مقامات پر چھاپے مار کر چیکنگ کی ۔2لاکھ 59ہزار سے زائد مقامات پر چیکنگ کی گئی ۔49051دکانداروں کو اوور چارجنگ کامرتکب پایا گیا۔مجموعی طو رپر صوبہ بھر میں 5کروڑ 67لاکھ 7ہزار 306روپے جرمانہ عائد کیا گیا۔ 5922 دکانداروں اور تاجروں کے خلاف ایف آئی آر درج کی گئی جبکہ 8407 تاجروں اور دکانداروں کو حراست میں لے لیا گیا۔اوزان و پیمائش کی چیکنگ کرنے والے انسپکٹر ز نے صوبہ بھر میں 63151مقامات پر چیکنگ کی ۔6055 تاجروں اور دکاندارو ں کو کم تولنے اور دیگر خلاف ورزیوں پر قا نونی کارروائی کا سامنا کرنا پڑا ہے۔

مزید :

کالم -