بڑھتے قرضے ملکی معیشت کیلئے نقصان دہ ہیں : خواجہ شاہ زیب اکرم

بڑھتے قرضے ملکی معیشت کیلئے نقصان دہ ہیں : خواجہ شاہ زیب اکرم

لاہور (کامرس رپورٹر)پاکستان انڈسٹریل اینڈ ٹریڈرز ایسوسی ایشنز فرنٹ (پیاف)نے ملکی و غیر ملکی قرضوں میں مسلسل اضافہ پر تشویش کا اظہار کرتے ہوئے کہا ہے کہ پاکستان پر بڑھتے ہوئے قرضے ملکی معیشت کیلئے نقصان دہ ہیں۔نگران وفاقی وزیر خزانہ کے مطابق پاکستان کے ذمے اندرونی اوربیرونی قرضے 245 اکھرب تک پہنچ چکے ہین معاشی پہیہ چلانے کے لئے مزید قرضے لینے پڑیں گے اور نو منتخب حکومت کے لئے قرضوں کی ادائیگی بہت برا چیلنج ہو گا ۔موجودہ قوانین کے تحت پاکستان کا مجموعی قرضہ جی ڈی پی کے60فیصد سے زائد نہیں ہونے چاہیے مگرپچھلی حکومتوں کی جانب سے مسلسل قرضے لینے کی وجہ سے یہ جی ڈی پی کا 65فیصد سے تجاوز کرگئے ہیں جو ملک کیلئے نقصان دہ ہے قائم مقام چیئرمین پیاف خواجہ شاہزیب اکرم نے سیئنر وائس چیئرمین تنویر احمد صوفی کے ہمراہ صنعتکاروں کے وفد سے گفگو کرتے ہوئے کہا کہ ملکی معیشت اس لئے مستحکم نہیں ہو سکی کہ ٹیکس نیٹ کے ذریعے مطلوبہ ریونیو اکٹھا نہیں ہوا اور مختلف منصوبوں کے لئے قرضوں کو صحیح طرح استعمال نہیں کیا گیا اب قرضوں کی بمع سود ادائیگی کے لئے مزید قرضے لینا پڑیں گے ا نہوں نے کہا کہ ملکی معیشت کو سنبھالا دینے کے لئے غیر ملکی اہمیت کی حامل ذمے دار قیادت کی ضروت ہو گی جو قرضوں کے مقابلے میں وسائل پیدا کرے تاکہ قرضوں کا صحیح استعمال ممکن بنایا جاسکے اس سلسلے میں ٹیکس ایمنسٹی سکیم خصوسی اہمیت کی حامل ہے اس سکیم کو کامیاب بنایا جائے۔تنہا حکومت قرضوں کی معیشت کو بہتر بنانے میں کامیاب نہیں ہو سکتی اس کے لئے نجی شعبہ اور تمام سٹیک ہولڈرز کو اپنا اپنا کردارادا کرنا ہو گا۔

مزید : کامرس

لائیو ٹی وی نشریات دیکھنے کے لیے ویب سائٹ پر ”لائیو ٹی وی “ کے آپشن یا یہاں کلک کریں۔


loading...