ڈیموں کی تعمیر اور پاکستان کا قرض اتارنا میری زندگی کے ماصف ہیں : چیف جسٹس

ڈیموں کی تعمیر اور پاکستان کا قرض اتارنا میری زندگی کے ماصف ہیں : چیف جسٹس

اسلام آباد ( سٹاف رپورٹر) چیف جسٹس میاں ثاقب نثارنے کہا ہے کہ ڈیموں کی تعمیر اور پاکستان سے قرضہ اتارنا میری زندگی کے مقاصد ہیں،ہم نے آنے والی نسلوں کو مقروض چھوڑ کر نہیں جانا ،میں یہاں رہوں یا ریٹائر ہو جاؤں اپنے مشن کو جاری رکھوں گا۔چیف جسٹس نے یہ ریمارکس کچی آبادیوں سے متعلق کیس کی سماعت کے دوران دئیے۔چیف جسٹس نے کہا کہ ملک میں پیدا ہونیوالابچہ ایک لاکھ 17 ہزار کا مقروض ہے جبکہ اعتزاز احسن کے مطابق ہم نے اپنی پانچ نسلوں کو مقروض کرلیاہے۔چیف جسٹس نے کہا کہ ڈیمز اور پانی والے مسئلہ کے بعد قرضوں والا کام شروع کریں گے۔ممبر پلاننگ سی ڈی اے نے عدالت کو بتایا کہ اسلام آباد میں آٹھ کچی آبادیاں ریگولر ہیں۔چیف جسٹس نے کہا کہ کچی آبادیوں کے مکینوں کو مناسب جگہ اورکم ازکم بنیادی سہولیات تو ملنی چاہئیں جبکہ لوگوں کو پانی اور رہائش نہیں مل رہی۔عدالت کی جانب سے بابر اعوان کو عدالتی معاون مقررکرتے ہوئے ایم سی آئی اور آئی سی ٹی اور سی ڈی اے کو نوٹس جاری کر دیا۔کیس کی مزید سماعت8 اگست تک ملتوی کر دی گئی۔

چیف جسٹس

مزید : صفحہ اول