پی پی 211 : کئی برادریاں پی ٹی آئی میں شامل چوہدری خالد وڑائچ کی پوزیشن مضبوط

پی پی 211 : کئی برادریاں پی ٹی آئی میں شامل چوہدری خالد وڑائچ کی پوزیشن مضبوط

ملتان (نیوز رپورٹر) نوازشریف کو اڈیالہ جیل پہنچا کر عمران خان نے قوم سے (بقیہ نمبر24صفحہ12پر )

کیا وعدہ پورا کردکھایا۔ ن لیگ مکافات عمل کا شکار مجرموں کے استقبال کیلئے لیگی کارکنوں کے باہر نہ نکلنے سے ن لیگ کی مقبولیت کا پول کھل گیا۔ یو سی متی تل کی خان اور بلوچ برادری نے امیدوار پی پی 211چوہدری خالد جاوید وڑائچ کی حمایت کا اعلان کرکے بوسن گروپ اور ن لیگ کے سیاسی تابوت میں آخری کیل ٹھونک دیا۔ یونین کونسل متی تل میں خان اور بلوچ برادری کی کارنر میٹنگ سے خطاب کرتے ہوئے چوہدری خالد جاوید وڑائچ نے برادری کے عمائدین جمال خان‘ اصغر خان‘ مظفر خان‘ فضل خان‘ الیاس خان‘ خوشحال خان‘ سربلند خان‘ ثاقب خان و دیگر شرکاء کا ن لیگ اور بوسن گروپ کو خیرباد کہنے اور پی ٹی آئی میں شامل ہوکر ان کی حمایت کا اعلان کرنے پر انہیں خراج تحسین پیش کیا اور کہا کہ اب ہر باشعور پاکستان شہری نوشتہ دیوار پڑھ کر اپنی سوچ بدلنے پر مجبور ہوچکا۔ یہ وہ تبدیلی ہے جس کیلئے عمران خان نے اپنی زندگی کے 22سال صرف کئے اور پاکستانی عوام کی خوش قسمتی ہے کہ عمران خان کی طویل جدوجہد کے ثمرات سامنے آرہے ہیں اور این اے 154اور پی پی 211کی بیشتر برادریاں ن لیگ اور بوسن گروپ کو خیرباد کہہ چکی ہیں۔ انہوں نے کہا کہ اگر لوگوں کی وفاداریاں بدلنے کا یہ سلسلہ جاری رہا تو 25جولائی کو الیکشن کے روز ن لیگ کے پولنگ سٹیشن ویران ہونگے اور پی ٹی آئی کے پولنگ سٹیشنوں پر عوام کا جم غفیر نظر آئے گا۔ چوہدری خالد جاوید وڑائچ نے کہا کہ این نے 154اور پی پی 211میں الیکشن تقریباً یکطرفہ ہوچکا ہے اور وہ مزید وکٹیں گرانے کیلئے کوشاں ہیں۔

پی پی 211

مزید : ملتان صفحہ آخر