جہاز بنانے والی کمپنی بوئنگ اپنے جہازوں میں چین کی کیا چیز لگا کر بیچتی تھی ؟ جان کر آپ کو ہوائی سفر سے ہی شدید ڈر لگے گا

جہاز بنانے والی کمپنی بوئنگ اپنے جہازوں میں چین کی کیا چیز لگا کر بیچتی تھی ؟ ...
جہاز بنانے والی کمپنی بوئنگ اپنے جہازوں میں چین کی کیا چیز لگا کر بیچتی تھی ؟ جان کر آپ کو ہوائی سفر سے ہی شدید ڈر لگے گا

  

بیجنگ(نیوز ڈیسک) یہ بات عام سننے میں آتی ہے کہ چین میں دنیا کی ہر چیز کی نقل تیار کی جاتی ہے مگر شاید کسی کے وہم و گمان میں نہیں تھا کہ ان جعلی اشیاء میں ہوائی جہازوں کے وہ پرزے اور آلات بھی شامل ہیں کہ جن کا تعلق براہ راست انسانی جانوں کے تحفظ اور سلامتی سے ہوتا ہے۔ یہ خوفناک انکشاف حال ہی میں سامنے آیا ہے جس کے مطابق ایک چینی سپلائر کمپنی غیر مصدقہ مٹیریل سے وہ پرزے بنا رہی تھی جو مسافر ہوائی جہازوں کے فلائٹ کنٹرول سسٹم میں استعمال ہوتے ہیں۔

ویب سائٹ criminal.media.comکے مطابق ایروسپیس شعبے کی بین الاقوامی کمپنی ’’موگ ایئر کرافٹ‘‘ میں ایسٹ ایشیاء سپلائی چین منیجر کے عہدے پر فرائض سر انجام دینے والے سابق عہدیدار چارلس شی نے اعتراف کیا ہے کہ کمپنی نے 500 سے زائد بوئنگ طیاروں کے فلائٹ کنٹرول سسٹم میں غیر مصدقہ مٹیریل سے تیار کردہ وہ پرزے اور آلات نصب کیے ہیں جو چینی کمپنی ’’این ایچ جے‘‘ کی جانب سے فراہم کئے گئے تھے ۔

رپورٹ کے مطابق چینی کمپنی سرٹیفائڈ کمپنیوں سے لیے گئے مٹیریل سے تقریباً 20فیصد پرزے و آلات بناتی تھی جبکہ دیگر مٹیریل غیر سرٹیفائیڈ کمپنیوں سے لیا جاتا تھا اور اس سے باقی 80فیصد پرزے و آلات بنائے جاتے تھے لیکن خریدداروں کو یہ بات نہیں بتائی جاتی تھی اور تمام پرزے و آلات سرٹیفائیڈ کمپنیوں کے تصدیق شدہ مٹیریل کے سرٹیفیکیٹ کے ساتھ فروخت کیے جاتے تھے۔

عدالتی ریکارڈ کے مطابق موگ ایئر کرافٹ میں تعینات ایک خاتون کوالٹی انجینئر نے 2014میں چین کمپنی این ایچ جے کو اپنے سپلائرز کی لسٹ میں شامل کیا اور اس موقع پر کمپنی کے آڈٹ کی زحمت بھی نہیں کی۔ اُس نے اپنے گھر میں بیٹھ کر اپنے لیپ ٹاپ پر ہی این ایچ جے کا آڈٹ کیا جبکہ سائٹ پر جا کر حقیقی آڈٹ کیے بغیر ہی اس کمپنی کو موگ ایئر کرافٹ کے سپلائرز کی لسٹ میں شامل کردیا ، جو کہ ایرو سپیس کوالٹی سٹینڈڈز کی کھلی خلاف ورزی تھی۔ ایوی ایشن ماہرین کا کہنا ہے کہ غیر مصدقہ خام مال سے تیار کردہ پرزوں و آلات کے ناکام ہونے کے امکانات کئی گنا زیادہ ہوتے ہیں اور گزشتہ سالوں کے دوران ان پرزوں کی غیر متوقع خرابی کے واقعات بھی سامنے آچکے ہیں۔

مزید : ڈیلی بائیٹس