وزیراعلیٰ کے پی نے اجمل وزیر کے معاملے پر 3 رکنی کمیٹی بنانے کی منظوری دے دی

      وزیراعلیٰ کے پی نے اجمل وزیر کے معاملے پر 3 رکنی کمیٹی بنانے کی منظوری دے ...

  

پشاور (مانیٹرنگ ڈیسک) وزیراعلیٰ خیبرپختونخوا محمود خان نے سابق مشیر اطلاعات اجمل وزیر کی مبینہ آڈیو کے معاملے پر 3 رکنی کمیٹی بنانے کی منظوری دے دی۔اجمل وزیر کی مبینہ آڈیو کے معاملے پر وزیراعلیٰ نے فیکٹ فائنڈنگ کمیٹی کی منظوری دی ہے۔ صوبائی وزیر شوکت یوسفزئی نے جیونیوز کو بتایا کہ کیمٹی تین ارکان پر مشتمل ہوگی جس میں ایک ریٹائرڈ جج، ریٹائرڈ پولیس افسر اور ریٹائرڈ بیورو کریٹ شامل ہوگا۔کمیٹی کیس کو وفاقی تحقیقاتی ادارے (ایف آئی اے)، قومی احتساب بیورو (نیب) یا اینٹی کرپشن کے حوالے کرنے سے متعلق وزیراعلیٰ کو تجویز دے گی۔شوکت یوسفزئی نے بتایا کہ وزیراعلیٰ کی جانب سے فیکٹ فائنڈنگ کیمٹی بنانا خوش آئند ہے اور تحقیقات میں دودھ کا دودھ اور پانی کا پانی ہوجائے گا۔سابق مشیر اطلاعات خیبر پختونخوا (کے پی) اجمل وزیر کی مبینہ آڈیو ٹیپ سے متعلق اشتہار کے معاملے پر محکمہ اطلاعات نے رپورٹ وزیراعلیٰ محمود خان کو بھیج دی۔صوبائی محکمہ اطلاعات کی رپورٹ کے مطابق اجمل وزیر نے اسٹیئرنگ کمیٹی کا ممبر نہ ہونے کے باوجود دونوں میٹنگز میں وزیرصحت تیمور سلیم جھگڑاکے ساتھ مشترکہ صدارت کرکے اسٹیئرنگ کمیٹی کے رولز کی خلاف ورزی کی، اس حوالے سے اجمل وزیر کے دستخط میٹنگ منٹس پر موجود ہیں۔رپورٹ کے مطابق اشتہار حکومتی طریقہ کار قانون اور پالیسی کے تحت ایجنسی کو دیا گیا ہے۔ ایجنسی کو اشتہار دینے کا فیصلہ متفقہ طور پر کیا گیا اور اشتہار حاصل کرنے کے لیے 7 ایجنیسوں نے دلچسپی لی تھی۔ اشتہار دینے کے لیے اسٹیئرنگ کمیٹی کی یہ دو میٹنگز وزیرصحت تیمور سلیم جھگڑا کی زیرصدارت ہوئیں تھیں جن میں سیکریڑی صحت، سیکرٹری اطلاعات اور ڈی جی اطلاعات بھی شریک ہوئے تھے۔دوسری جانب سابق مشیر اطلاعات خیبر پختونخوا اجمل وزیر نے جیو نیوز سے گفتگو کرتے ہوئے استعفے کی وجوہات کو ذاتی بتایا ہے۔اجمل وزیر نے کہا ہے کہ بحیثیت مشیر مزید خدمات کو جاری نہیں رکھ سکتا اس لیے وزیراعلیٰ کو اپنا استعفیٰ بھیج دیا ہے،اشتہاری ایجنسی سے گفتگو کی جو آڈیو ٹیپ سامنے آئی اس میں سیلز ٹیکس کے حوالے سے بات کی جارہی تھی۔

اجمل وزیر

اجمل وزیر

مزید :

صفحہ اول -