وزارت سائنس وٹیکنالوجی رویت ہلال کمیٹی کے معاملات میں مداخلت نہ کرے،طاہر اشرفی

  وزارت سائنس وٹیکنالوجی رویت ہلال کمیٹی کے معاملات میں مداخلت نہ کرے،طاہر ...

  

ڈیرہ غازیخان (سٹی رپورٹر):چیئرمین متحدہ علماء بورڈ پنجاب مولانا طاہر محمود اشرفی نے کہا ہے کہ خواجہ آصف کے قادیانیوں سے پرانے مراسم ہیں خواجہ آصف پر قادیانیوں سے پرانی محبت اور رفاقت اثر انداز ہو رہی ہے خواجہ آصف کی قومی اسمبلی میں گفتگو عقیدہ (بقیہ نمبر26صفحہ6پر)

ختم نبوت سے ناواقف ہونے کی دلیل ہے ان خیالات کا اظہار انہوں نے ایک وفد کے ہمراہ ڈی جی خان کے دورہ کے موقع پر سرکٹ ہاؤس میں صحافیوں سے گفتگو کر تے ہو ئے کیا صوبائی وفد میں مرکزی رہنماء مولانا محمد خان لغاری،مولانا ضیاء اللہ بخاری،مولانا انوار الحق مجاہد اور دیگر شامل تھے میڈیا کے نمائندوں سے گفتگو کرتے ہوئے مولانا طاہر محمود اشرفی کا کہنا تھاکہ خواجہ آصف بیشک عمران خان کو لفظ خاتم النبیین ضرور سکھائیں مگر وہ خود بھی اس لفظ کو سمجھنے کی کوشش کریں انہوں نے کہا کہ اگر قومی اسمبلی میں خواجہ آصف اسطرح کی گفتگو کرینگے تو پھر ہمارا ان سے مطالبہ ہوگاکہ وہ آئندہ الیکشن بطور اقلیتی ممبر لڑیں مولانا طاہر محمود اشرفی نے وفاقی وزیر برائے سائنس و ٹیکنالوجی فواد چوہدری کو تنقید کا نشانہ بناتے ہوئے کہا کہ فواد چوہدری اپنے دائرہ اختیار سے باہر نکل کر چوکے چھکے مارنے کے بجائے اپنی وزارت کی کارکردگی پر توجہ دیں وازارت سائنس و ٹیکنالوجی کو رویت ہلال کمیٹی کے معاملات میں مداخلت نہیں کرنی چاہیے چاند کی رویت کے تعین کا اختیار صرف رویت ہلال کمیٹی کو ہے فواد چوہدری کو دینی طبقات کے خلاف بیان بازی سے گریز کرنا چاہئے مولانا طاہر محمود اشرفی نے کہا کہ کراچی میں سب کے سب ایکدوسرے کیخلاف استعمال ہوئے ہیں وفاق صوبے اور صوبہ وفاق پر الزام تراشی کررہاہے انہوں نے کہا کہ کراچی کی تمام جے آئی ٹیز پر ایک اور جے آئی ٹی بنادی جائے اور جوجو قصور وار ہو اسے پکڑ کر جیل میں ڈال دیناچاہیے قتل وغارت اور ملکی مفاد کیخلاف کام کرنے والوں کو کسی صورت معافی نہیں ملنی چاہئے انہوں نے کہا کہ اسلامی نظریاتی کونسل کو فعال کردیاگیاہے اور آئندہ اسلامی نظریاتی کونسل کی سفارشات پر عملدرآمد ہوتا ہوابھی دیکھائی دے گا انہوں نے کہا کہ متحدہ علماء بورڈ مقدس شخصیات کی توہین کرنے والوں کے خلاف قانون سازی پرکام کررہاہے مقدس شخصیات کی توہین کے مرتکب کو کم سے کم بیس سال قید کی سزا ہونی چاہیے اور مقدمہ کا ٹرائل دہشت گردی کورٹ میں ہو نا چاہئے متحدہ علماء بورڈ سوشل میڈیا کے ذریعے مقدس شخصیات کی توہین کرنے والوں کے خلاف قانون سازی کیلئے کام کررہا ہے۔توہین کرنے والوں کو کم سے کم بیس سال سزا،فوری اور سپیڈی ٹرائل ہونی چاہئے انہوں نے کہا کہ مقدس شخصیات کے ساتھ توہین کے بیشتر اکاؤنٹ ہندوستان اور ملک دشمن قوتیں چلارہی ہیں جن کا مقصد ملک پاکستان میں انتشار پھیلانا ہے۔متحدہ علماء بورڈ نے ابتک 105 کیسز پر اپنی رائے دے دی ہے اور بورڈ دن رات کام کررہا ہے قبل ازیں وفد کے ہمراہ کمشنر آفس میں ڈویژنل امن کمیٹی کے اجلاس میں شرکت کی اجلاس کی صدارت کمشنر ساجد ظفر ڈال نے کی اجلاس میں آر پی او عمران احمر، ڈی پی او اختر فاروق چاروں اضلاع کے ڈپٹی کمشنرز طاہر فاروق،امجد شعیب ترین،اظفر ضیاء،ذوالفقار علی کھرل، ڈی پی اوز اور تمام مکاتب فکر کے علماء اور امن کمیٹی کے اراکین شریک تھے.کمشنر ساجد ظفر ڈال نے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ علماء محراب و منبر سے بھائی چارہ اور فرقہ وارانہ ہم آہنگی کیلئے آواز بلند کی جائے۔متحدہ علماء بورڈ کے چیئرمین مولانا طاہر محمود اشرفی نے کہا کہ آج کے دورہ کا مقصد سوشل میڈیا کی وباء پر قابو پانے کیلئے علماء اور امن کمیٹی کے اراکین کا تعاون حاصل کرنا ہے سوشل میڈیا پر توہین باقاعدہ منصوبہ بندی سے کی جاتی ہے،مقصد مسلمانوں کی دل آزاری ہے۔سوشل میڈیا پر پھیلائے جانے والے واقعہ کی تحقیقات کے بغیر معلومات آگے نہ شیئر کی جائیں ملک میں انتشار پھیلانے والی کوششوں کو ملکر ناکام کرنا ہوگا۔توہین رسالت،توہین صحابہ،توہین اہل بیت اور مقدس شخصیات کی توہین برداشت نہیں ہوگی تاہم واقعہ کی غیر جانبدار تحقیقات ہونی چاہیے۔متحدہ علماء بورڈ علماء کے تعاون سے ملک میں فرقہ واریت کو ہوا دینے کی ناپاک کوششیں ناکام بنائیں گے۔مقبوضہ کشمیر میں بھارتی جارحیت پر اقوام عالم نوٹس لے۔امن کمیٹی کے اراکین پاکستان میں پورا سال فعال کردار ادا کریں۔اجلاس میں ملک و قوم کی سلامتی،خوشحالی،کورونا وائرس اور سوشل میڈیا کے ذریعے مقدس شخصیات کی توہین کی وبا کے خاتمہ کیلئے خصوصی دعا کی گئی۔

طاہر اشرفی

مزید :

ملتان صفحہ آخر -