امریکی جنگی بحری جہز پر دھماکے کے بعد لگنے والی آگ بے قابو، وارشپ ایک جانب جھکنے سے صورتحال تشویشناک ہوگئی

امریکی جنگی بحری جہز پر دھماکے کے بعد لگنے والی آگ بے قابو، وارشپ ایک جانب ...
امریکی جنگی بحری جہز پر دھماکے کے بعد لگنے والی آگ بے قابو، وارشپ ایک جانب جھکنے سے صورتحال تشویشناک ہوگئی

  

سین ڈیاگو(ڈیلی پاکستان آن لائن)گزشتہ روز ایک دھماکے کے بعد آگ کی لپیٹ میں آنے والے امریکی بحری جہاز پر لگی آگ پر تاحال قابو نہ پایا جاسکا۔ آگ کےشعلے مسلسل دوسرے روز بھی بلند ہو رہے ہیں۔

امریکی خبررساں ادارے کے مطابق آگ نے جنگی بحری جہازکے بڑے حصے کو اپنی لپیٹ میں لے رکھا ہے اور دھویں کے بادل پورے شہر کی فضا پر چھائے ہوئے ہیں۔

حکام نے انکشاف کیا ہے کہ جس وقت آگ لگی اس وقت  جہاز پر موجود آگ پر قابو پانے والا سسٹم ناکارہ ہوچکا تھا۔

امریکی اخبار نیویارک ٹائمز کے مطابق بحری جہاز پر آگ سے ہونے والے نقصانات کا اتنا اثر پڑا ہے کہ وہ  اب ایک جانب جھکنے لگا ہے۔

رپورٹ کے مطابق بحری جہاز سے اٹھنے والا دھواں پورے سین ڈیاگو شہر کی فضا میں موجود ہے اور حکام نے لوگوں سے اپیل کی ہے کہ وہ اس کے دھویں سے بچنے کے لیے گھرو ں میں محفوظ رہیں۔

 امریکہ کی ریاست کیلی فورنیا کے شہر سان ڈیاگو کی بندرگاہ پر لنگر انداز امریکی بحریہ کے جنگی جہاز 'بون ہوم رچرڈ' پر آگ گزشتہ روز ایک زور دار دھماکے کے بعد لگی تھی۔ برطانوی خبر رساں ادارے 'رائٹرز' کے مطابق سان ڈیاگو کے فائر ریسکیو ڈپارٹمنٹ کا کہنا ہے کہ امریکی جنگی جہاز 'بون ہوم رچرڈ' معمول کے معائنے کے لیے لنگر انداز تھا جب اس میں اتوار کی صبح مقامی وقت کے مطابق آٹھ بج کر 30 منٹ پر دھماکے کے بعد آگ لگ گئی۔

واقعے سے متعلق صحافیوں سے گفتگو میں ریئر ایڈمرل فلپ سوبیک نے بتایا کہ دھماکے کی وجہ گرمی کی شدت کے سبب پیدا ہونے والا ہوا کا دباؤ تھا۔

انہوں نے واضح کیا کہ دھماکہ فیول یا بارودی مواد کے پھٹنے کی وجہ سے نہیں ہوا۔

مزید :

بین الاقوامی -