آمریت نہیں کہ رات کو ایک نوٹیفیکیشن نکالیں اور۔۔۔مسلم لیگ ن پی ٹی ڈی سی کی نجکاری کے خلاف میدان میں آگئی

آمریت نہیں کہ رات کو ایک نوٹیفیکیشن نکالیں اور۔۔۔مسلم لیگ ن پی ٹی ڈی سی کی ...
آمریت نہیں کہ رات کو ایک نوٹیفیکیشن نکالیں اور۔۔۔مسلم لیگ ن پی ٹی ڈی سی کی نجکاری کے خلاف میدان میں آگئی

  

اسلام آباد(ڈیلی پاکستان آن لائن)قومی اسمبلی میں مسلم لیگ(ن)کی جانب سے پاکستان ٹورزم ڈویلپمنٹ کارپوریشن (پی ٹی ڈی سی) کی نجکاری کیخلاف شدید احتجاج ،مریم اورنگزیب نے کہا کہ پی ٹی ڈی سی کو بیٹھا کر وزیراعظم ٹورزم کو اْٹھا نہیں سکتے،پبلک پرائیویٹ پارٹنرشپ کے تحت ہم نے چینی اور پیٹرول چوری ہوتے دیکھا ہے، ایک کروڑ نوکری دینی تھیں کروڑوں نوکریاں چھینی جا رہی ہیں،آمریت نہیں کہ رات کو ایک نوٹیفیکیشن نکالیں اور نوکری سے نکال دیں۔

تفصیلات کے مطابق  قومی اسمبلی کا اجلاس ڈپٹی سپیکر کی زیر صدارت ہوا۔مسلم لیگ (ن)کے ارکان کی جانب سے پی ٹی ڈی سی ملازمین کو نکالنے اور ادارے کی نجکاری کے خلاف شدید احتجاج کیا گیا ۔مریم اورنگزیب نے کہا کہ حکومت نے ایک کروڑ نوکری دینی تھیں لیکن کروڑوں نوکریاں چھینی جا رہی ہیں،پچاس لاکھ گھروں کا وعدہ کیا گیا تھا لیکن چولہے بجھ رہے ہیں،یہ آمریت نہیں کہ فاشزم کی طرز پر ایک نوٹیفکیشن کے تحت پی ٹی ڈی سی کے ساڑھے چار سو ملازمین نکال دیا گیا،آمریت نہیں کہ رات کو ایک نوٹیفیکیشن نکالیں اور نوکری سے نکال دیں،کس طریقہ کار کے تحت ان ملازمین کو نکالا گیا؟۔انہوں نے کہا کہ پی ٹی ڈی سی کو بیٹھا کر وزیراعظم ٹورزم کو اْٹھا نہیں سکتے،پبلک پرائیویٹ پارٹنرشپ کے تحت ہم نے چینی اور پیٹرول چوری ہوتے دیکھا ہے۔

مسلم لیگ(ن)کے ڈاکٹر عباد اللہ نے کہا کہ پی ٹی ڈی سی پبلک پرائیویٹ پارٹنر شپ کا ماڈل بتا دیں،کے پی کے کے مالاکنڈ ہزارہ ڈویژن چار ماہ کی سیاحت پر انحصار کرتے ہیں، مالم جبہ کیس جو نیب میں ہے وہ کس حکومت نے دیا تھا،پبلک پرائیویٹ پارٹنر شپ کے تحت مالم جبہ کس نے کس کو دیا تھا،ٹریفک اور ریلوے،بازار مساجد ایس او پی کیساتھ کھولے جاتے ہیں،تو ٹورزام کو کیوں ایس او پی کے تحت نہیں کھولا جاتا۔

مزید :

قومی -