امریکہ میں 17 سال بعد ایک آدمی کو سزائے موت دے دی گئی ، کیا جرم کیا تھا؟

امریکہ میں 17 سال بعد ایک آدمی کو سزائے موت دے دی گئی ، کیا جرم کیا تھا؟
امریکہ میں 17 سال بعد ایک آدمی کو سزائے موت دے دی گئی ، کیا جرم کیا تھا؟

  

واشنگٹن (ڈیلی پاکستان آن لائن) امریکہ میں 17 سال بعد پہلی بار کسی شخص کو سزائے موت دی گئی ہے۔

ریاست اوکلاہوما سے تعلق رکھنے والے 47 سالہ ڈینیل لوئس لی کو انڈیانا کی فیڈرل جیل میں سزائے موت دی گئی ہے۔ انہیں زہریلا انجیکشن لگا کر ابدی نیند سلایا گیا۔ ڈینیل پر الزام ہے کہ انہوں نے 1990 میں ایک سفید فام خاندان کے افراد کو قتل کیا تھا۔

امریکہ میں 17 سال بعد کسی مجرم کی سزائے موت پر عملدرآمد ہوا ہے ، اس سے قبل 2003 میں امریکہ میں آخری مرتبہ سزائے موت دی گئی تھی۔ موت کی سزا پر عملدرآمد سے پہلے ڈینیل نے کہا کہ وہ اس نے اپنی زندگی میں بہت سی غلطیاں کی ہیں لیکن یہ قتل انہوں نے نہیں کیا۔

مزید :

بین الاقوامی -