چیف ٹریفک آفیسر کی سربراہی میں پشاور یونیورسٹی میں سیمینار کا انعقاد

  چیف ٹریفک آفیسر کی سربراہی میں پشاور یونیورسٹی میں سیمینار کا انعقاد

  

پشاور(کرائم رپورٹر) چیف ٹریفک آفیسر عباس مجید خان مروت کی سربراہی میں پشاور یونیورسٹی کے ٹیچر کمیونٹی سنٹر میں ٹریفک قوانین سے متعلق آگاہی سیمینار کا انعقاد کیا گیا جبکہ ڈی ایل وین کے ذریعے طلبہ کو لرنرز بھی جاری کردیئے۔ سیمینار میں وائس چانسلر یو ای ٹی پروفیسر ڈاکٹر افتخار حسین، مختلف شعبہ جات سے تعلق رکھنے والے پروفیسرز‘ لیکچرارز اور طلباء و طالبات نے کثیر تعداد میں شرکت کی۔ پشاور یونیورسٹی کے پروفیسرز‘ لیکچرارز اور طلباء و طالبات نے ٹریفک سے متعلق درپیش مسائل بارے چیف ٹریفک آفیسر عباس مجید خان مروت کو آگاہ کیا اور ٹریفک سے متعلق خصوصاً لائسنس کے اجراء‘ ٹرائی کے عمل  و اجراء کے دورانیہ سمیت تجاوزات کے خلاف آپریشنز‘ یوٹرنز‘ ڈی ایل وین کے ذریعے لائسنس کے اجراء اور ٹریفک قوانین سے متعلق آگاہی دینے کے بارے میں سوالات کئے جس پر چیف ٹریفک آفیسر عباس مجید خان مروت نے انہیں روڈ سیفٹی اور ٹریفک قوانین بارے تفصیل سے آگاہی دی۔ اسی طرح سٹی ٹریفک پولیس پشاور کی جانب سے طلبہ کو ڈی ایل وین کے ذریعے ڈی ایس پی ایم ایل اے انیلہ ناز کی موجودگی میں لرنرز بھی جاری کردیئے گئے جبکہ موقع پر ٹرائی پاس کرنیوالوں کو باقاعدہ ڈرائیونگ لائسنس کا اجراء بھی کیا گیا۔ چیف ٹریفک آفیسر عباس مجید خان مروت نے سیمینار میں موجود ٹریفک حکام کو ہدایت کی کہ وہ یونیورسٹی میں اور سڑکوں پر طلبہ کو درپیش مسائل کو دور کریں۔ انہوں نے مزید کہا کہ اس وقت صوبائی اسمبلی کے باہر ملک سعد شہید فلائی اوور کے نیچے آگاہی کیمپ جاری ہے اسی طرح سٹی ٹریفک پولیس پشاور کی جانب سے شہر کے مختلف سیکٹروں میں ایجوکیشن ٹیموں کی جانب سے تاجروں اور شہریوں کو باقاعدہ آگاہی دی جاتی ہے۔ انہوں نے مزید کہا کہ تجاوزات کے خلاف ضلع بھر میں کارروائیاں جاری ہیں اسی طرح نو پارکنگ زون کی خلاف ورزی کرنیوالوں کے خلاف بھی روزانہ کی بنیاد پر کارروائیاں کی جاتی ہیں۔ انہوں نے مزید کہا کہ سٹی ٹریفک پولیس پشاور کی جانب سے پہلے روز امیدوار کو لرنر جاری کیا جاتا جبکہ بعد ازاں مقررہ وقت کے بعد ٹرائی پاس کرنے کے بعد ڈرائیونگ لائسنس جاری کیا جاتا ہے اسی طرح مختلف محکموں کے ملازمین کو ڈی ایل وین کے ذریعے بھی لرنرز جاری کئے جاتے ہیں۔ انہوں نے مزید کہا کہ یونیورسٹی روڈ پر ٹریفک رواں دواں رکھنے کے لئے پلازوں میں پارکنگ قائم نہ کرنے والوں کے خلاف بھی کارروائیاں عمل میں لائی جا رہی ہیں جس سے یونیورسٹی روڈ پر ٹریفک جام کا مسئلہ حل ہو گیا ہے۔ انہوں نے مزید کہا کہ شہریوں کو ٹریفک جام سے بچانے کیلئے سٹی ٹریفک پولیس پشاور نے باقاعدہ یوٹیوب‘ فیس بک‘ ٹوئٹر اور دیگر سوشل میڈیا سائٹس کو مکمل طور پر فعال کردیا ہے جس سے شہری تمام سیکٹروں کے مواصلاتی نظام سے متعلق آگاہی حاصل کر سکتے ہیں جس میں باقاعدہ شہریوں کو متبادل روٹس بارے آگاہی بھی دی جاتی ہے۔ انہوں نے کہا کہ سٹی ٹریفک پولیس پشاور باقاعدہ پرائیویٹ ڈرائیونگ سکولز کی نگرانی کرنے سمیت افسران مختلف اوقات کار میں سکولز میں جا کر انسپکشنز کرتے ہیں تاکہ شہریوں کو بین الاقوامی طرز پر سہولیات میسر ہوں اور جن سکولز کا معیار اچھا نہیں ہوتا ان کے خلاف کارروائی عمل میں لائی جاتی ہے اس سلسلے میں گزشتہ دنوں جناح ڈرائیونگ سکول ہشت نگری کا ناقص انتظامات پر لائسنس منسوخ کردیا گیا ہے۔ چیف ٹریفک آفیسر عباس مجید خان مروت نے ٹریفک حکام کو ہدایت کی کہ وہ مختلف اوقات میں طلبہ کے ساتھ آگاہی سیشنز کا انعقاد کریں جس پر پشاور یونیورسٹی کے پروفیسرز‘ لیکچرارز اور طلباء و طالبات نے چیف ٹریفک آفیسر عباس مجید خان مروت کا شکریہ ادا کیا اور سٹی ٹریفک پولیس پشاور کے اس اقدام کو سراہا۔

مزید :

میٹروپولیٹن 1 -