کیلی فورنیا کی عدالت نے ٹرمپ کی نئی سفری پابندیوں کیخلاف فیصلہ سنا دیا

کیلی فورنیا کی عدالت نے ٹرمپ کی نئی سفری پابندیوں کیخلاف فیصلہ سنا دیا

واشنگٹن (آن لائن)امریکی ریاست کیلی فورنیا کی وفاقی عدالت نے صدر ٹرمپ کی نئی سفری پابندیوں کیخلاف فیصلہ سنادیا ، یہ فیصلہ سان فرانسسکو کی کورٹ آف اپیل نے جاری کیا، تاہم وائٹ ہاوس نے امید ظاہر کی ہے سپریم کورٹ سفری پابندی کے فیصلے کو برقرار رکھے گی ۔ و ا ضح رہے اس ماہ کے آغاز میں وائٹ ہاوس نے امریکی سپریم کورٹ سے درخواست کی ہے کہ وہ تیز رفتار سماعت کرتے ہوئے صدر ٹرمپ کے مسلمان ملکوں پر عائد سفری پابندیوں کے فیصلے کو بحال کرے۔ ادھروزارتِ انصاف کی ترجمان سارا فلوریس نے کہاہے ہم نے سپریم کورٹ سے کہا کہ وہ اس اہم کیس کی سماعت کرے اور ہمیں اعتماد ہے کہ صدر ٹرمپ کا انتظامی حکم نامہ انکے ملک کو محفوظ بنانے اور دہشت گردی سے محفوظ رکھنے کے قانونی دائر ہ اختیار کے اندر ہے۔صدر پابند نہیں ہیں کہ وہ ایسے ملکوں سے لوگوں کو آنیکی اجازت دیں جو د ہشت گردی کی پشت پناہی کرتے ہیں، تاوقتیکہ وہ اس بات کا تعین کر سکیں کہ ان لوگوں کی مناسب چھان بین ہو اور وہ امریکی سلامتی کیلئے خطرہ نہ بن سکیں۔جنوری میں صدر ٹرمپ کا ابتدائی حکم نامہ ابتدائی طور پر ریاست واشنگٹن اور منی سوٹا میں منسوخ کر دیا گیا تھا،اسکے بعد انھوں نے مارچ میں ایک ترمیم شدہ حکم نامہ جاری کیا جس میں صومالیہ، ایران، شام، سوڈان، لیبیا اور یمن سے لوگوں کا داخلہ ممنوع قرار پایا تھا۔ اس کے علاوہ تمام پناہ گزینوں کا داخلہ بھی عارضی طور پر معطل کر دیا گیا تھا۔گزشتہ ماہ ورجینیا کی ایک عدالت نے بھی حکم نامے کی معطلی ختم کرنے کا فیصلہ کیا تھا۔

مزید : صفحہ اول


loading...