ثابت ہوگیا پنجاب حکومت جمشید دستی کو سبق سکھانا چاہتی ہے‘ غلام فرید کوریجہ

ثابت ہوگیا پنجاب حکومت جمشید دستی کو سبق سکھانا چاہتی ہے‘ غلام فرید کوریجہ

ملتان (سٹی رپورٹر)پروڈکشن آرڈر کے باوجود جمشید دستی کو رہا نہ کر کے قومی اسمبلی کی توہین کی جا رہی ہے۔ ان خیالات کا اظہارسرائیکستان عوامی اتحاد کے رہنماؤں خواجہ غلام فرید کوریجہ، پروفیسر شوکت مغل ، ظہور دھریجہ، رانا فراز نون ، سید مہدی الحسن شاہ ، ملک اللہ نواز وینس، عابدہ بخاری ،عابد سیال اور طیب سیال نے اپنے بیان میں کیا۔ انہوں نے کہا کہ سپیکر قومی اسمبلی کے پروڈکشن آرڈر پر عمل نہ کر کے (بقیہ نمبر14صفحہ12پر )

پنجاب حکومت نے ثابت کر دیا کہ وہ جمشید دستی کو سبق سکھانا چاہتی ہے ۔ انہوں نے کہا کہ جمشید دستی کا قومی اسمبلی کے اجلاس میں نہ پہنچایا جانا پارلیمنٹ کی توہین ہے ۔انہوں نے کہا کہ حکمرانوں کو اس پارلیمنٹ کی توہین نہیں کرنی چاہئے ، جس کے باعث وہ اقتدار کے مزے لے رہے ہیں ۔ سرائیکی رہنماؤں نے کہا کہ حکومت اتنی بوکھلاہٹ کا شکار ہے کہ پانی کے معمولی مقدمے میں ہر گھنٹے بعد نئی دفعات شامل کر رہی ہے اور جمشید دستی سے نہ ملاقات کرائی جا رہی ہے اور نہ کسی کو یہ معلوم ہے کہ وہ کس حالت میں ہے۔ انہوں نے کہا کہ اتنی سزا تو کلبھوشن کو بھی نہیں دی گئی جتنی سرائیکی صوبے کی حمایت اور سرائیکی وسیب کے حقوق کی آواز بلند کرنے پر جمشید دستی کو دی جا رہی ہے۔ سرائیکی رہنماؤں نے کہاکہ فاروق ستار کو گرفتار کیا گیا تو وزیراعظم نے خود نوٹس لیا تھا لیکن جمشید دستی کے بارے میں خاموشی قابلِ مذمت ہے۔ انہوں نے کہا کہ سرائیکی جماعتیں ہر مظلوم کے حق میں آواز بلند کریں گی اور اس وقت تک خاموش نہیں رہیں گی جب تک ظلم بند اور جمشید دستی کو رہا نہیں کیا جائے گا۔

مزید : ملتان صفحہ آخر


loading...