ایک افطاری نے شہر بھر کے ہسپتال بھردئیے، مریضوں کی لائن لگ گئی کیونکہ۔۔۔

ایک افطاری نے شہر بھر کے ہسپتال بھردئیے، مریضوں کی لائن لگ گئی کیونکہ۔۔۔
ایک افطاری نے شہر بھر کے ہسپتال بھردئیے، مریضوں کی لائن لگ گئی کیونکہ۔۔۔

  


بغداد(مانیٹرنگ ڈیسک) عراقی شہر موصل کے باسیوں پر پہلے ہی زندگی قیامت کی گھڑی ثابت ہو رہی تھی کہ اب ایک افطاری نے شہر کے ہسپتال بھر دیئے ہیں۔ میل آن لائن کی رپورٹ کے مطابق موصل میں داعش کے خلاف فوج کی کارروائیوں اور شہر اس کے قبضے سے واگزار کرنے کی کوششوں میں شہریوں کی بڑی تعداد گھر بار چھوڑ کر پناہ گزین کیمپوں میں سرچھپانے پر مجبور ہو چکی ہے جہاں امدادی ایجنسیاں ان کے لیے کھانے وغیرہ کا انتظام کر رہی ہیں۔

’میں 34 سال سے مسلسل روزے رکھ رہی ہوں کیونکہ 1982ءمیں مَیں نے منت مانگی تھی کہ۔۔۔‘ 85 سالہ ہندو خاتون جس کی کہانی سن کر مسلمانوں کو بھی بے حد فخر ہوگا کیونکہ۔۔۔

گزشتہ روز ایک امدادی ایجنسی نے مقامی ہوٹل سے کھانا خرید کر ان لوگوں کے لیے افطاری کا اہتمام کیا لیکن کھانا ناقص نکلنے پرسینکڑوں لوگوں کی طبیعت خراب ہو گئی جنہیں ہسپتال پہنچا دیا گیا، جہاں ایک بچے اور ایک خاتون کی موت واقع ہو گئی۔ رپورٹ کے مطابق 300سے زائد افراد ہسپتال لائے گئے جن میں اکثریت بچوں اور خواتین کی تھی۔ ہسپتال میں داخل ایک متاثرہ خاتون نے بتایا کہ ”ہمیں چاول اور مرغی کا گوشت کھانے میں دیا گیا تھا، جس سے ہمیں فوڈ پوائزننگ ہو گئی۔ مجھ سمیت میرے خاندان کے 10افراد اس سے بیمار ہوئے۔“

ضرور پڑھیں: ڈالر سستا ہو گیا

مزید : عرب دنیا


loading...