جے آئی ٹی میں پیشی کے موقع پر لاہور ہائی کورٹ بار کاوزیراعظم کے خلاف احتجاج کا اعلان

جے آئی ٹی میں پیشی کے موقع پر لاہور ہائی کورٹ بار کاوزیراعظم کے خلاف احتجاج ...
جے آئی ٹی میں پیشی کے موقع پر لاہور ہائی کورٹ بار کاوزیراعظم کے خلاف احتجاج کا اعلان

  


لاہور(نامہ نگارخصوصی)لاہور ہائیکورٹ بار نے وزیر اعظم کے استعفیٰ کا مطالبہ دہراتے ہوئے استعفیٰ دئیے بغیر جے آئی ٹی کے سامنے پیش ہونے پرمیاں نواز شریف کے خلاف آج 15جون کو احتجاج کا اعلان کر دیا،لاہورہائی کورٹ بار ایسوسی ایشن کے عہدیداروں کا کہنا ہے کہ وزیراعظم کی حیثیت سے جے آئی ٹی کے سامنے پیش ہوں گے تو جے آئی ٹی پر بھی سوالیہ نشان ہو گا ۔

پاکستان مخالف قوتوں کے ناپاک عزائم خاک میں ملا دیں گے:مشاہد اللہ خان

لاہور ہائیکورٹ بار کے عہدیداروں نے جاوید اقبال آڈیٹوریم میں مشترکہ پریس کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ وزیراعظم کو مستعفی ہو کر جے آئی ٹی کے سامنے پیش ہونا چاہیے۔انہوں نے کہا کہ وزیراعظم اور حکومتی ادارےجے آئی ٹی پر اثر انداز ہو رہے ہیں اب تو جے آئی ٹی بھی کہہ رہی کہ ریکارڈ میں ردو بدل کیا جا رہا ہے۔انہوں نے کہا کہ اگر حکومت نے عدلیہ یاجےآئی ٹی کے خلاف کوئی قدم اٹھایا تو وکلا عدلیہ کے ساتھ ہوں گے،لاہورہائیکورٹ بار کے نائب صدر راشد لودھی نے کہا کہ میاں نواز شریف کا ماضی گواہ ہے کہ انھوں نے ہمیشہ عدلیہ پر حملہ کرایا،حکومت کی جانب سے ایک سیل بنا دیا گیا ہے جو جے آئی ٹی کو متنازعہ بنا رہا ہے۔ اگر وزیراعظم کی پیشی کے موقع پر مسلم لیگ (ن)نے ماحول خراب کرنے کی کوشش کی تو وکلا ءسیسہ پلائی دیوار بن جائیںگے، کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے بار کے سیکرٹری عامر راں اورفنانس سیکرٹری ظہیر بٹ نے کہا کہ وزیراعظم کو مستعفی ہو کر جے آئی ٹی کے سامنے پیش ہونا چاہیے۔انہوں نے کہا کہ اگر میاں نواز شریف جے آئی ٹی کے سامنے پیش ہونے سے قبل مستعفی نہ ہوئے تو ملک بھر میں وکلا ءاس پر احتجاج کریں گے،بار روم کی چھتوں پر سیاہ پرچم لہرائیں جائیں گے،مذمتی اجلاس منعقد کئے جائیں گے اور جی پی او چوک میں مظاہرہ بھی کیا جائے گا۔

مزید : لاہور


loading...