کراچی میں جنگی بنیادوں پر وینٹی لیٹرز اور ہائی ڈینسیٹی والے بیڈز مہیا کیے جائیں:سراج الحق

  کراچی میں جنگی بنیادوں پر وینٹی لیٹرز اور ہائی ڈینسیٹی والے بیڈز مہیا کیے ...

  

لاہور (آن لائن)امیرجماعت اسلامی کراچی حافظ نعیم الرحمن کی زیر صدارت الخدمت ہیڈ آفس میں کورونا وائرس کے پھیلاؤ اسپتالوں کی موجودہ صورتحال اور وفاقی وصوبائی حکومتوں و NDMAکی کارکردگی کے حوالے سے شہر کے معروف ڈاکٹروں اور پروفیسرز کے ہمراہ ایک ”مشاورتی اجلاس“ منعقد ہوا۔اجلاس میں امیرجماعت اسلامی پاکستان سینیٹر سراج الحق نے خصوصی طور پر شرکت کی۔ ڈاکٹروں کی تجاویز و سفارشات کی روشنی میں سینیٹر سراج الحق نے اجلاس سے خطاب کرتے ہوئے مطالبہ کیا ہے کہ سندھ حکومت اربوں روپے خرچ کررہی ہے اس کا کوئی ریکارڈ اور چیک اینڈ بیلنس کا کوئی انتظام موجود نہیں،ہمارا مطالبہ ہے کہ کراچی میں جنگی بنیادوں پر وینٹی لیٹرز اورہائی ڈینسیٹی والے بیڈزمہیا کیے جائیں،15دن میں کم ازکم 500بیڈز فراہم کیے جائیں اور حکومت کے زیر اہتمام اسپتالوں میں کورونا کے علاج کی سہولیات فراہم کی جائیں،حکومت ڈاکٹروں کے تحفظ کو بھی یقینی بنائے،اس حوالے سے قانون سازی کرے،وفاقی وصوبائی حکومتیں اور NDMAوبا سے نبٹنے کے لیے ذمہ دار ہیں ان کو آپس میں کوآرڈینیشن کے تحت کام کرنا چاہیے لیکن یہ ایک دوسرے کی ٹانگیں کھینچنے میں لگے ہوئے ہیں، NDMAکے پاس اربوں روپے کے وسائل ہیں جو ناقص حکمت عملی کی وجہ سے ضائع ہورہے ہیں آج وبا سے نبٹنے کے لیے NDMAکا عملاکوئی کردار نظر نہیں آرہا،حکومتی اداروں کے اقدامات ایک دوسرے سے متضاد ہے اس لیے عوام کے اندر لاک ڈاؤن اور کورونا وائرس کے حوالے سے کنفیوژن پیدا کردی گئی ہے ،سندھ حکومت نجی اسپتالوں کو بلاسود قرضے فراہم کرے تاکہ ڈاکٹروں کی تنخواہیں اور ضروری مراعات کی فراہمی کو یقینی بنایا جائے۔اجلاس میں ڈاکٹر واسع شاکر،ڈاکر سعد خالد نیاز،ڈاکٹر مصباح العزیز،ڈاکٹر نائلہ طارق،ڈاکٹر سہیل اختر،ڈاکٹر عبد اللہ متقی،ڈاکٹر عظیم الدین،ڈاکٹر ثاقب انصاری،ڈاکٹر کاشف شازلی،ڈاکٹر عبد المالک،ڈاکٹرعمران حامد،راشد قریشی،انجیئر صابر احمد،قاضی صدر الدین ودیگر بھی موجود تھے۔

سراج الحق

مزید :

صفحہ آخر -