ریڈزون میں لاک ڈائون میں سختی کا فیصلہ، وزیراعظم عمران خان کی زیرصدارت اجلاس کی اندرونی کہانی سامنے آگئی

ریڈزون میں لاک ڈائون میں سختی کا فیصلہ، وزیراعظم عمران خان کی زیرصدارت اجلاس ...
ریڈزون میں لاک ڈائون میں سختی کا فیصلہ، وزیراعظم عمران خان کی زیرصدارت اجلاس کی اندرونی کہانی سامنے آگئی

  

لاہور (لیاقت کھرل سے)صوبائی دارالحکومت میں کل 15جون سے اگلے دو ہفتوں کے لیےریڈ زون کے علاقوں میں لاک ڈاؤن سخت کرنے کا فیصلہ کیا گیا ہے،روزنامہ پاکستان نےوزیراعظم پاکستان عمران خان کی زیر صدارت ہونے والے اجلاس کی اندرونی کہانی حاصل کر لی ہے۔

ذرائع کا کہنا ہے کہ وزیراعظم پاکستان عمران خان کی زیر صدارت ہونے والے اجلاس میں اس بات کا فیصلہ کیا گیا ہے کہ عوام نے لاک ڈاؤن میں نرمی کے دوران حکومتی ایس او پیز پر عمل درآمد نہ کیا ہے اور ماسک سمیت سوشل ڈسٹینس نہیں رکھا گیا ہے۔جبکہ مسافر اڈوں سمیت مارکیٹوں اور بازاروں میں ایس او پیز کی کھلم کھلا خلاف ورزی کی گئی ہے اور اس میں عوام کے ساتھ ساتھ تاجروں نے بھی ایس او پیز پر عمل درآمد کروانے میں اپنا کردار ادا نہیں کیا ہے۔ذرائع کا کہنا ہے کہ وزیراعظم پاکستان عمران خان کی زیر صدارت ہونے والے اجلاس میں اس بات کا فیصلہ کیا گیا ہے کہ اب کسی قسم کی نرمی نہ کی جائے اور کورونا کے پھیلاؤ میں کرداروں کے خلاف دفعہ 144کے تحت کارروائی کی جائے ، اسی طرح مسافر اڈوں اور مارکیٹوں سمیت بازاروں میں ایس او پیز پر عمل درآمد کو ہرپ حال میں یقینی بنایا جائے۔ذرائع کا کہنا ہے کہ وزیراعظم پاکستان کی زیر صدارت ہونے والے اجلاس میں آئی جی پولیس پنجاب ڈاکٹر محمد شیعب دستگیر اور سی سی پی او لاہور ذولفقار حمید کو خصوصی طور پر ٹاسک دیا گیا ے جس میں ریڈ زون قرار دیئے جانے والے علاقوں میں لاک ڈاؤن کو مکمل طورپر سخت کرنے کا حکم دیا گیا ہے۔جس پر کل 15جون سے لاہور میں ریڈ زون قرار دیئے جانے والے علاقوں میں اگلے دو ہفتوں کے لیے لاک ڈاؤن مکمل طور سخت کرنے کا فیصلہ کیا گیا ہے۔ذرائع کا کہنا ہے کہ کل سے لاک ڈاؤن کیے جانے والے علاقوں میں دفعہ 144کا نفاذ کیا جارہا ہے اور ماسک نہ پہننے والوں سمیت سماجی فاصلے کو برقرار نہ رکھنے پر موقع پر گرفتاری کو یقینی بنایا جارہا ہے ۔

اس حوالے سے سی سی پی او لاہور ذولفقار حمید نے روزنامہ پاکستان کو بتایا کہ ریڈ زون قرار دیئے جانے والے علاقوں میں دفعہ 144کے تحت کارروائی کی جائے گی اور اس سلسلہ میں لاہور میں 6ایس پیز پر مشتمل سپیشل ٹیمیں تشکیل دیں گئی ہیں اور اس میں ایس او پیز کی خلاف ورزی پر کسی قسم کی نرمی سے کام نہیں لیا جائے گا۔

مزید :

کورونا وائرس -