حلقہ بندیاں اب آبادی کی بنیاد پر نہیں بلکہ سلیکٹڈ کی مرضی پر ہو رہی ہے: مریم اور نگزیب

حلقہ بندیاں اب آبادی کی بنیاد پر نہیں بلکہ سلیکٹڈ کی مرضی پر ہو رہی ہے: مریم ...

  IOS Dailypakistan app Android Dailypakistan app


  اسلام آباد (این این آئی)پاکستان مسلم لیگ (ن) کی ترجمان مریم اورنگزیب نے حکومتی انتخابی ترامیم کو آئین اور الیکشن کمیشن پرسنگین حملہ قرار دیدیا۔ اپنے بیان میں انہوں نے کہاکہ عمران صاحب وفاقی پارلیمانی نظام جمہوریت ختم کرکے ملک میں صدارتی نظام مسلط کرنے کی کوشش کررہے ہیں۔انہوں نے کہاکہ یہ ترامیم قائد اعظم کی سیاسی ونظریاتی فکر، سپریم کورٹ کے فیصلوں، آئین کے بنیادی ڈھانچے اور تصورکیخلاف ہیں،سلیکٹڈ وزیراعظم چاہتا ہے کہ 22 کروڑ عوام ووٹ نہ ڈالیں بلکہ مخصوص افراد کا ’الیکٹورل کالج، سیاہ وسفید کا مالک بن جائے۔ انہوں نے کہاکہ یہ قانون نہیں بلکہ انتخابی دھاندلی کا قومی منصوبہ ہے، آرٹی ایس کی پیداوار حکومت عوامی ووٹ سے جان چھڑانا چاہتی ہے۔ انہوں نے کہاکہ ان ترامیم کے بعد حکومت خود الیکشن کمیشن بن کرالیکشن کرائے گی، وہی جیتے گا جسے حکومت چاہے گی،یہ ترامیم عوام کے شعور، ان کے آئینی اختیار پر عدم اعتماد اور آمرانہ طرز حکمرانی مسلط کرنا ہے۔ انہوں نے کہاکہ عمران صاحب کا انتخابی قوانین میں تبدیلی کا مقصد ملک میں الیکشن کے بجائے ’سلیکشن‘ کا مستقل نظام مسلط کرنا ہے، انہوں نے کہاکہ سیاہ ترامیم انتخاب کالعدم قرار دینے، انکوائری کرانے، حلقہ بندیاں کرنے، انتخابی فہرستیں بنانے کے اختیارات الیکشن کمیشن سے چھین لیں گی۔ انہوں نے کہاکہ حلقہ بندیاں اب آبادی کی بنیاد پر نہیں بلکہ ’سلیکٹڈ‘ کی مرضی کی بنیاد پر کرنے کی کوشش ہورہی ہے،عمران صاحب الیکشن کمیشن کے آئینی اختیارات چھین کرپاکستان کو ’بنانا ری پبلک‘ چاہتے ہیں۔
مریم اورنگزیب

مزید :

صفحہ آخر -