ادارے جھوٹ پر چل رہے ہیں پھر ترقی کیسے ممکن، مولانا طارق جمیل

 ادارے جھوٹ پر چل رہے ہیں پھر ترقی کیسے ممکن، مولانا طارق جمیل

  IOS Dailypakistan app Android Dailypakistan app


 بہاولپور (ڈسٹرکٹ رپورٹر) ملک کے معروف عالم دین مولانا طارق جمیل نے کہا ہے کہ ضروری نہیں کہ مدارس زکواۃ سے چلائے جائیں ایم ٹی جے بنانے کا مقصد مدارس کو خود کفیل بنانا ہے اللہ کے ہاں نیتیں دیکھی جاتی ہیں اس عمر میں پیسہ کمانے کا شوق نہیں الحمدللہ جدی پشتی زمیندار ہے اور زندگی خوشحالی میں گزر رہی ہے ایم ٹی جے کی کمائی سے مدارس چلا کر علماء کرام (بقیہ نمبر45صفحہ6پر)
کو بتانا چاہتا ہوں کے مدارس زکواۃ کے پیسوں کے بغیر بھی چلائے جا سکتے ہیں۔وہ بہاولپورمیں مولانا طارق جمیل کے پہلے آوٹ لیٹ ایم ٹی جے کے افتتاح کے موقع پر میڈیا سے گفتگو کر رہے تھے۔مولانا طارق جمیل نے کہا کہ علما نے زکواۃ کو مال کی میل کہا ہے طلبہ کی تربیت مال کی میل سے کرنا دل میں خلش پیدا کرتی تھی ایک سال قبل کرونا کی صورتحال میں ایم ٹی جے بنانے کے خیال آیا تاکہ اس برانڈ کی کمائی کا خاص حصہ مدارس میں دیا جائے ایم ٹی جے بنایا تو بہت باتیں بنی مگرمیں نے کوئی حرام یا غلط کام نہیں کیا مولوی کا کام صرف جائے نماز پر بیٹھنا مدارس کی جھاڑو لگانا اور زکواۃ کھانا ہی نہیں ہے تجارت پیغمبروں کا پیشہ ہے جس کو میں اپنایا ہے۔انہوں نے کہا کہ جس قوم میں جھوٹ آجائے وہ ذلیل ہوجاتی ہے ہمارے ریڑھی والے سے لیکر عدالتیں اور تھانے سب جھوٹ پر چل رہے ہیں ہم ایٹمی پاور ہیں پھر بھی اللہ نے ہمیں عزت نہیں دی  اس سلسلے میں پوری قوم کو اللہ سے رجوع کرنا ہوگا جس دن ہم نے جھوٹ بولنا چھوڑ دیا اس دن یہ ملک آسمان کی بلندیوں کو چھوئے گا۔
طارق جمیل